زارا نورعباس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
زارا نورعباس
معلومات شخصیت
پیدائش 13 مارچ 1990 (32 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شریک حیات اسد صدیقی  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی بیکن ہاؤس نیشنل یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ادکارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

زارا نور عباس صدیقی ایک پاکستانی اداکارہ ہیں۔ وہ مومنہ درید کی خاموشی (2017ء) میں ارسلہ کے کردار کے لیے سب سے زیادہ مشہور ہیں ۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

زارا نور عباس 13 مارچ 1991ء کو پنجاب کے شہر لاہور میں پیدا ہوئیں۔ وہ اداکارہ عاصمہ عباس کی بیٹی، بشریٰ انصاری کی بھانجی اور احمد بشیر کی پوتی ہیں۔ وہ پنجابی پس منظر سے تعلق رکھتی ہیں۔[1][2][3]

کیریئر[ترمیم]

بیکن ہاؤس نیشنل یونیورسٹی سے فارغ التحصیل زارا نور عباس نے فلم ڈیزائن، ناچ، تھیٹر اور فلم سازی کو اختیاری مضمون کے طور پر بھی سیکھا ہے۔[4] مختلف ڈراموں اور رقص مقابلوں میں حصہ لینے کے بعد، انھوں نے فہیم برنی کی ہدایت کاری میں 2016 میں آنے والی سیریز دھڑکن سے ٹیلی ویژن میں قدم رکھا ، جہاں انھوں نے عدیل چودھری اور گھانا علی کے مقابل مرکزی کردار ادا کیا۔ [3] [5] یہ سلسلہ 18 اقساط تک چلا اور ہفتہ وار نشر ہوتا رہا۔ [6] [7] سیریز کو نقادوں کے ملے جلے جائزے ملے۔ ڈیلی ٹائمز کے شاہ بانو یوسف نے بیان کیا ، "ہم اس ڈرامے کو اپنی ثقافت ، اس کے اصولوں اور قدر کو تصوراتی ، بہترین رومانویت میں ملا ہوا ایک عظیم امتزاج کے طور پر دیکھتے ہیں۔"

ذاتی زندگی[ترمیم]

2017 میں ، انھوں نے عدنان صدیقی کے بھتیجے ، ساتھی اداکار اسد صدیقی سے شادی کی۔ زارا نور عباس کے مطابق ، ان کی پہلی ملاقات کس کی آیگی بارات کے سیٹ پر ہوئی۔ شادی کی تقریب پاکستان کے شہر کراچی میں ہوئی۔ [8] [9] [10]

آف اسکرین کام[ترمیم]

زارا نور عباس واضح الفاظ میں آزاد خیالات کی حامل ہیں [11] [12] جون 2018 میں ،زارا نور عباس نے ٹی ای ڈی ٹاک کے زیر اہتمام لاہور کی گورنمنٹ کالج یونیورسٹی میں "ایک فیصلے کی طاقت" کے بارے میں ایک تقریر کی۔ [13] [7] وہ فیشن پاکستان ویک میں FnkAsia کے لیے پیش ہوئی۔ [14] [15] [16] [17] [18] نومبر 2019 میں ، زارا نور عباس پاکستان اور پوری دنیا میں مہاجرین کو بااختیار بنانے کے لیے اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین کے ساتھ شامل ہوئیں ۔[19]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Happy Birthday to the gorgeous diva Zara Noor Abbas". روزنامہ پاکستان (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 30 اگست 2018. 
  2. "'Asad and I discovered new sides of each other': Zara Noor Abbas on working with her husband". Something Haute (بزبان انگریزی). 19 February 2019. اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2019. 
  3. ^ ا ب "Zara Noor Abbas tells women to realise their self worth on Women's Day". Daily Times (بزبان انگریزی). 9 March 2019. اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2019. 
  4. "I've always been very opinionated and staunch with my words: Zara Noor Abbas | The Express Tribune". دی ایکسپریس ٹریبیون (بزبان انگریزی). 11 July 2018. اخذ شدہ بتاریخ 30 اگست 2018. 
  5. "Dharkan: Romance that everyone yearns to watch - Daily Times". Daily Times (بزبان انگریزی). 24 July 2016. اخذ شدہ بتاریخ 30 اگست 2018. 
  6. "Zara Noor Abbas confronts ridiculing models at Fashion Week with Instagram post". The News International (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 22 دسمبر 2018. 
  7. ^ ا ب "Exciting: Hum Awards has revealed their viewers choice nominations list". Daily Pakistan Global (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 23 جولا‎ئی 2018. 
  8. TEDx Talks، "Power of a single decision | Zara Noor Abbas"، TED، اخذ شدہ بتاریخ 22 دسمبر 2018 
  9. "My first marriage was for all the wrong reasons: Zara Noor Abbas". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 16 October 2018. اخذ شدہ بتاریخ 22 دسمبر 2018. 
  10. "Highest grossing Pakistani films of 2019". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 15 فروری 2020. 
  11. Staff، Images (12 April 2018). "Actor Zara Noor Abbas calls out models for mocking her at fashion week". DAWN (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 24 دسمبر 2018. 
  12. Staff، Images (14 April 2018). "Areeba Habib apologises to Zara Noor Abbas for mocking her runway walk". DAWN (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 24 دسمبر 2018. 
  13. "Zara Noor Abbas's runway walk, and the case of the mocking trolls". Daily Times (بزبان انگریزی). 12 April 2018. اخذ شدہ بتاریخ 24 دسمبر 2018. 
  14. "Zara Noor Abbas confronts ridiculing models at Fashion Week with Instagram post". دی نیوز (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 30 اگست 2018. 
  15. Staff، Images (12 April 2018). "Actor Zara Noor Abbas calls out models for mocking her at fashion week". Dawn (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 30 اگست 2018. 
  16. "Zara Noor Abbas joins hands with UNHCR to empower refugees | Samaa Digital". Samaa TV (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 23 نومبر 2019. 
  17. Khan، Saira (2019-08-16). "Asma Abbas and Bushra Ansari To Play Sisters On Screen In New Drama". HIP (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 21 ستمبر 2019. 
  18. NewsBytes. "Wajahat Rauf unveils title of his Eid ul Fitr release, Chhalawa". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 مارچ 2019. 
  19. "Mehwish Hayat, Zara Noor Abbas steal the show in Chhalawa trailer". Hum.tv. اخذ شدہ بتاریخ 24 اپریل 2019.