سید میر جان شاہ صاحب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حضرت سید میر جان شاه صاحب
خواجه خواجگان جهان, قطب الاقطاب, مغل شہزادہ اور نویں حضرت ایشان
Darbare Hazrat Eshan after renovation by Khwaja Sardar Sayyid Mir Sultan Masood Dakik.jpg
زیارت شاه صاحب
جانشینشهزاده میر سید محمود آغا اور آج: سید پادشاہ میر اسد اللہ بن میر محمد جان بن میر فضل اللہ
والدامیر سید حسن بن عظیم اللہ
والدہبی بی سیدہ ایشانی
پیدائش1800
کابل
وفات1901
بیگم پورہ، لاہور
تدفینبیگم پورہ، لاہور
مذہبنقشبندی سنی اسلام (سپریم لیڈر)
پیشہفقیہ

حضرت سید میر جان شاہ صاحب کابلی نقشبندی (پیدائش: 1800؛ وفات: 13 نومبر 1901) کابل کے نقشبندیہ ترتیب کے ایک اسلامی عالم، مبلغ اور صوفی (قطب) تھے۔ وہ بہاؤالدین نقشبند سے تھا، جو نقشبندیہ کے بانی تھے اور ان کے روایتی جانشین اور اولاد خواجہ خواند محمود، جنہیں حضرت ایشان کے نام سے جانا جاتا ہے۔ اس نے انہیں نقشبندی حکم کا آٹھواں اعلیٰ ترین سربراہ بنا دیا اور شاہ کا خطاب دیا۔

سیرت[ترمیم]

نسب[ترمیم]

حضرت شاہ صاحب ایک سید خاندان میں پیدا ہوئے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ اپنی بیٹی فاطمہ اور ان کے داماد علی ابن ابی طالب کے ذریعے اسلامی پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی اولاد تھے۔ ان کا خاندان افغانستان میں سیدوں کے قبائلی سردار تھے۔ خاندانی درختوں سے پتہ چلتا ہے کہ وہ 28 ویں نسل میں پیغمبر محمد کی نسل سے ہیں۔ نقشبندی ترتیب کے بانی محمد بہاء الدین نقشبند اور ان کے داماد علاؤالدین عطار اور گیارہویں امام حسن العسکری اور سید عبدالقادر گیلانی اور خواجہ خواند محمود کے دیگر اجداد ہیں۔ اپنی والدہ کے مطابق، وہ بھی شہنشاہ اورنگزیب کی اولاد کے طور پر ایک مغل شاہی شہزادہ تھا۔[1]

ابتدائی بچپن اور تعلیم[ترمیم]

اپنے ابتدائی سالوں میں، اس نے قرآن حفظ کیا اور اسلامی الہیات اور فقہ کا مطالعہ کیا۔ پانچ سال کی عمر سے وہ اپنے والد شہزادہ سید میر حسن کے شاگرد تھے جنہوں نے انہیں تصوف کا بنیادی علم سکھایا۔ سید میر جان کے آباؤ اجداد اپنے وقت کے عظیم عالم تھے (فارسی: خواجگان) جنہوں نے اسلامی تصوف اور الہیات کا اپنا بنیادی علم باپ سے بیٹے تک منتقل کیا۔ یہ روایت ساتویں امام امام موسیٰ کاظم سے ان کے بیٹے ابو قاسم سید میر حمزہ تک گزری۔

اپنی بنیادی تربیت کے بعد، انہوں نے معروف علماء اور صوفی بزرگوں سے اپنی تعلیم جاری رکھی۔ وہ مشہور اسلامی اسکالرز کے ساتھ اس وقت کے معیاری مطالعہ وقت کے تحت بہترین نتائج کے ساتھ اپنی تعلیم مکمل کرنے کے لیے جانا جاتا تھا۔[2]

شاہ صاحب کی قبر درمیان میں ان کے چھوٹے بھائی اور اجداد کے ساتھ ہے۔

وظیفہ[ترمیم]

سید میر جان نے کابل میں اپنی تعلیم مکمل کرنے کے بعد، صوفی بزرگ مولوی سید احمد یار بخاری کے ساتھ جاری رکھا۔ ان کی طرف سے مولوی سید احمد یار صاحب بخاری ملاوی محمد شریف صاحب کے شاگرد تھے جو شاہ احمد سعید مجددی کے شاگرد تھے۔

سید میر جان نے ان سے اسلامی تصوف کے 7 راستے عربی میں طریقت سیکھے اور اپنے جانشین کے طور پر اپنی تعلیمات مکمل کیں جسے خلیفہ بھی کہا جاتا ہے۔ خلیفہ کے طور پر، سید میر جان نے مکہ اور مدینہ کی زیارت کی اور وہیں مسجد نبوی کے معزز امام کی حیثیت سے رہے۔ اس نے مدینہ میں شریف مکہ کی بیٹی سے شادی کی اور دو بیٹے پیدا ہوئے۔ جب اسے مدینہ میں اپنے دادا کی طرف سے ہندوستان میں اسلام کی تبلیغ کی ہدایات موصول ہوئیں تو وہ وہاں گئے اور لاہور میں بیٹھ گئے۔[3]

لاہور میں مبلغ اور محسن[ترمیم]

لاہور میں وہ اپنے جد امجد سید خواجہ خواند محمود کے مزار پر گئے اور نسب تقریباً ختم ہونے کے بعد اقتدار سنبھال لیا۔ اس کی وجہ سید میر جان کے پردادا سید کمال الدین کشمیر کی شہادت تھی جس میں حضرت ایشان کا خاندان بھاگ کر کابل چلا گیا۔ حضرت سید میر جان اپنے چھوٹے بھائی شہزادہ سید محمود آغا کے ساتھ مل کر اس وقت کے بہت سے سکھوں اور ہندوؤں کو اسلام قبول کرنے اور اپنے آباؤ اجداد کے طریقے کو پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیم دینے کے لیے مشہور تھے۔ انہوں نے لاہور میں اپنے جد امجد سید خواجہ خواند محمود کے مزار پر ایک مدرسہ قائم کیا، جہاں وہ اس طرح پڑھاتے تھے۔ وہ غریبوں خصوصاً یتیموں کی مدد کرنے کے لیے بھی جانا جاتا تھا۔

وہ لاہور میں دفن ہوئے اور اپنے بھائی شہزادہ سید محمود آغا کے ساتھ اپنے جد امجدسید خواجہ خواند محمود کے مزار میں مدفون ہیں۔[4]

اعزازات[ترمیم]

حضرت سید میر جان اپنے علمی علم کے اعلیٰ درجے کی وجہ سے عصر حاضر کے علماء میں اس نام سے مشہور تھے:

  • پیغمبر کی پاکیزہ اولاد کے آقا، فارسی میں <<سید السادات>>
  • علماء کے پروفیسر، فارسی میں <<خواجہ-خواجگان>>
  • اہل علم کے لیے زندگی کا سرچشمہ، فارسی میں <<جانِ جانانِ عارفان>>
  • علمائے کرام کا فخر، فارسی میں <<نور چشمے خواجگان>>

ادب[ترمیم]

  • تذکرہ خانوادے حضرت ایشان، تصنیف محمد یاسین قصواری نقشبندی، ناشر: ادارہ تعلیم نقشبندیہ، لاہور۔ (حضرت ایشان کے خاندان کی تاریخ پر مبنی کتاب)
  • ڈیوڈ ولیم ڈیمرل: ایک بھولی ہوئی نعمت: خواجہ خواند محمود نقشبندی وسطی ایشیا اور مغل ہندوستان میں۔ ایڈ: ڈیوک یونیورسٹی۔ مائیکرو فلم یونیورسٹی، ڈرہم، شمالی کیرولائنا، USA 1994۔

بیرونی روابط[ترمیم]

  • www.sayidraphaeldakik.com (سید میر جان کے عظیم جانشین کے نجی دفتر کی سرکاری سائٹ)
  • www.hazrat-ishaan.com (نقشبندیان سپریم لیڈر شپ آفس کی آفیشل ویب سائٹ)
  • www.imamalaskari.com (امام حسن العسکری پر نقشبندی کی سرکاری ویب سائٹ)
  • خاندانی تاریخ کا مواد: سوبھ نور، 19 جنوری 2019، 92 نیوز ایچ ڈی پروگرام؛ YouTube https://www.youtube.com/w پر ریکارڈ اور شائع کیا گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. تذکرہ خانوادے حضرت ایشان، تصنیف محمد یاسین قصواری نقشبندی، ناشر: ادارہ تعلیم نقشبندیہ، لاہور، ص۔ 281
  2. تذکرہ خانوادے حضرت ایشان، تصنیف محمد یاسین قصواری نقشبندی، ناشر: ادارہ تعلیم نقشبندیہ، لاہور، ص۔ 281 ایف۔
  3. خاتمے زیارت شریفے حضرت ایشان بخاری (تحریر و تحقیق میاں احمد بدر اخلاق (BSC)) دوسری بار 1988 میں چھپی مصنف اور انسپکٹر میاں محمد حسن اخلاق (M.Km) 1988 کمپنی: Koperatis Lahorin
  4. تذکرہ خانوادے حضرت ایشان، تصنیف محمد یاسین قصواری نقشبندی، ناشر: ادارہ تعلیم نقشبندیہ، لاہور، ص۔ 281 ایف۔