میر برکت علی خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
میر برکت علی خان
مدعی تاج و تخت
پیدائ‏ش 6 اکتوبر 1934ء (عمر 84 سال)
Hilafet Palace, نیس، فرانسیسی جمہوریہ سوم
القاب میر برکت علی خان
تاج ریاست حیدرآباد
مدعیت از 24 فروری 1967-تا حال
(Titular نظام حیدرآباد)
موقوفی بادشاہت 1948
آخری بادشاہ Mir نواب میر عثمان علی خان
تعلق داری Grandson
شاہی خاندان نظام حیدرآباد
والد اعظم جاہ
والدہ خدیجہ خیریہ عائشہ در شہوار، Imperial Princess of the Ottoman Empire
شریک حیات Princess Esra Birgin
(1959–1974; divorced)
Aysha Simmons
(1979–1989; widowed)
Manolya Onur
(1992–1997; divorced)
Jameela Boularous (co-wife)
(since 1992)
Princess Orchedi (co-wife)
(since 1994)
بچے Prince Azmet Jah
Sahibzadi Shehkyar
Alexander Azam Khan
Mohammod Umar Khan (deceased)
Nilufer
Zairin
قبل ازاں نواب میر عثمان علی خان

میر برکت علی خان مکرم جاہ آصف جاہ ہشتم ، صدیقی بےآفندی ، آصف جاہ کے نام سے جانے جاتے ہیں۔ 1967ء میں اس کے دادا کی وفات پر نظام حیدرآباد کا لقب برائے نام ملا۔[1]

ذاتی زندگی[ترمیم]

پس منظر[ترمیم]

مکرم جاہ ، اعظم جاہ کا بیٹا تھا اور عثمان علی خان کا وارث تھا جو ریاست حیدرآباد کا آخری حکمران تھا۔ اس کی شادی شہزادی در شہوار سے ہوئی جو  آخری عثمانی خلیفہ عبد الماجد دوم کی بیٹی تھی۔[2] جاہ نے  دی ڈون اسکول سے تعلیم حاصل کی اور اس  کے  بعد ہارورڈ انگلستان میں پیٹر ہاؤس کیمبرج، لندن اسکول آف اکنامکس اور سینڈ ہرٹس میں تعلیم حاصل کی۔[3][4] جاہ بھارت کے پہلے وزیر اعظم جواہر لعل نہرو کا دوست تھا۔ 2010ء میں جاہ نے بیان دیا کہ نہرو اسے اپنا ذاتی سفیر یا مسلم ملک میں بھارتی سفیر بنانا چاہتا تھا۔[5]

حیدرآباد میں اس کے دو بڑے محلات  چو محلہ اور فلک نما  کو دوبارہ سیٹ کیا گیا اور عوام کے کھول دیا گیا اور نظام دور کا عجائب گھر اور بعد میں ایک لگژری ہوٹل میں تبدیل کر دیا۔ سال 2010 میں تاج فالکونما ہوٹل کا افتتاح ہوا اور تاج گروپ  دس سال کی بحالی پر  لیز پر دیا گیا۔[6]

اپنے والد کی طرح، مکرم 1980ء  کی دہائی تک بھارت کا سب سے امیر  ترین انسان تھا۔ تاہم 1990ء کی دہائی میں اس کے آبائی اثاثوں میں سے زیادہ تر  حکومت بھارت کی طرف سے زبردستی تحویل میں لے لیے گئے اور کچھ طلاق کے معاملات پر ضبط کر لیے گئے۔ اس کا تخمینہ ایک بلین ڈالر سے کچھ زیادہ ہی ہے۔[7][8]

شادیاں[ترمیم]

مکرم جاہ 1999ء میں ترکی شہزادی (پیدائش 1936ء) اسریٰ برگن سے  1959ء  میں شادی کی۔[1][9] جاہ حیدرآباد محل شیپ اسٹیشن آسٹریلیا سے واپسی کے لیے چھوڑا اور اپنی بیوی کو طلاق دے دی جو جانا نہیں چاہتی تھی۔[10] 1979ء میں ایک سابق ہوائی میزبان اور بی بی سی میں کام کرتی تھی جس کا نام ہیلن سائمون (پیدائش 1949ء- وفات 1989ء ) تھا۔[11] اس نے اسلام قبول کر لیا اور اپنا نام عائشہ رکھ لیا۔ اس کی موت کے بعد اس نے منولیا اونور ( پیدائش 1954ء ) سے شادی کی جو 1992ء میں سابقہ مس ترکی تھی اور اس سے شادی کی۔ پانچ سال بعد 1997ء میں اس کو طلاق دے دی۔[10][11][12]

محلات[ترمیم]

اُن کے زیر ملکیتی محلات

 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
16. Afzal ad-Dawlah, Asaf Jah V (1827–1869)
 
 
 
 
 
 
 
8. Mahbub Ali Khan, Asaf Jah VI (1866–1911)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
17. Allah Rakhi Begum
 
 
 
 
 
 
 
4. نواب میر عثمان علی خان (1886–1967)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
18. Mukhtar ul-Mulk, Shuja ud-Daula, Nawab Mir Sir Tawab ‘Ali Khan, Salar Jang Bahadur
 
 
 
 
 
 
 
9. Amat uz-Zahra un-nisa Begum Sahiba (d. 1929)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
19. Preetamji Sahiba
 
 
 
 
 
 
 
2. اعظم جاہ (1907–1970)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
20. Haidar ud-Daula, Nawab Mir Khushru Ali Khan Bahadur, Haidar Jang
 
 
 
 
 
 
 
10. Nawab Mir Jahangir Ali Khan Bahadur, Jahangir Jang
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
21. Sahibzadi Rahat un-nisa Begum Sahiba
(granddaughter of Nasir-ud-dawlah, Asaf Jah IV)
 
 
 
 
 
 
 
5. Dulhan Pasha Begum Sahiba (1889–1955)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
1. Prince Mukarram Jah
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
24. محمود ثانی (1785–1839)
 
 
 
 
 
 
 
12. عبد العزیز اول (1830–1876)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
25. پرتیونیال سلطان (1812–1883)
 
 
 
 
 
 
 
6. عبد المجید ثانی (1868–1944)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
13. حیران دل قادین افندی (1846–1895)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
3. خدیجہ خیریہ عائشہ در شہوار (1914–2006)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
7. Atiya Mihisti (1892–1964)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب John Zubrzycki، The Last Nizam: An Indian Prince in the Australian Outback، Pan Macmillan Australia Pty, Limited، آئی ایس بی این 1-4050-3722-9
  2. "Princess Durru Shehvar passes away"، The Hindu
  3. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ asafjahidynasty نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  4. Kishore Singh، "India's wealthiest man the country forgot"، Business Standard
  5. "Nehru had big plans for me, says Mukarram Jah"، The Times of India
  6. Taj Falaknuma Palace, Hyderabad – Opening فروری 2010، مورخہ 22 مارچ 2010 کو اصل سے آرکائیو شدہ
  7. Natwest Bank account freeze
  8. Costliest divorce in India
  9. Mohan Guruswamy۔ "Books: The Last Nizam by John Zubrzycki. Picador India, Delhi, 2006."۔ City of Hope: a symposium on Hyderabad and its syncretic culture۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2008-12-30۔
  10. ^ ا ب William Dalrymple، "The lost world"، Guardian
  11. ^ ا ب "Turkish Beauty Fights for Justice"، Times of India، مورخہ 20 جنوری 2010 کو اصل سے آرکائیو شدہ
  12. Namita A Shrivastava، "Princess diaries"، Times of India