ڈیوڈ پامر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
ڈیوڈ پامر
پامر 2002 یو ایس اوپن جیتنے کے بعد پلیٹ ٹرافی تھامے ہوئے ہیں۔
مکمل نامڈیوڈ ٹرائے پامر
ملک آسٹریلیا
رہائشنیو یارک, امریکا
پیدائش28 جون 1976ء (عمر 47 سال)لیتھگو، نیو سائوتھ ویلز
قد1.88 m
وزن82 kg
پیشہ ور بنا1994
ریٹائر2011
کھیلدائیں ہاتھ
ویب سائٹwww.davidpalmer.com
مینز سنگلز
اعلی ترین درجہ بندینمبر 1 (ستمبر 2001, فروری 2006)
ٹائٹل20
ٹور فائنل40
ورلڈ اوپنW (2002, 2006)
آخری ترمیم: 12 April 2022۔

ڈیوڈ ٹرائے پامر (پیدائش 28 جون 1976 کو لتھگو ، نیو ساؤتھ ویلز ) ایک آسٹریلوی ریٹائرڈ پروفیشنل اسکواش کھلاڑی ہیں۔ انھوں نے 2002 میں سپر سیریز کے فائنل، 2002 اور 2006 میں ورلڈ اوپن جیتے۔ 2001، 2003، 2004 اور 2008 میں برٹش اوپن اور 2008 میں آسٹریلین اوپن جیتے۔ [1] انھوں نے ستمبر 2001 میں اور پھر فروری 2006 میں (ایک ماہ کے لیے) عالمی نمبر 1 کی درجہ بندی حاصل کی۔

کیریئر کا جائزہ[ترمیم]

2018 کے کامن ویلتھ گیمز میں، پالمر نے مردوں کے ڈبلز میں پارٹنر زیک الیگزینڈر کے ساتھ گولڈ میڈل جیتا۔ 2006 کے کامن ویلتھ گیمز میں، پالمر نے فائنل میں انگلینڈ کے پیٹر نکول سے ہارنے کے بعد مردوں کے سنگلز میں چاندی کا تمغا جیتا تھا۔ اسی 2006 کامن ویلتھ گیمز میں اس نے مردوں کے ڈبلز (ساتھی ڈین جینسن) اور مکسڈ ڈبلز (ساتھی راچیل گرنہم ) میں کانسی کے تمغے بھی جیتے تھے۔ 2002 کے کامن ویلتھ گیمز میں اس نے مردوں کے سنگلز اور مینز ڈبلز (ساتھی پال پرائس ) دونوں میں کانسی کے تمغے جیتے تھے۔ پالمر پروفیشنل اسکواش ایسوسی ایشن کے صدر کے طور پر خدمات انجام دے چکے ہیں۔ چنئی ، بھارت میں 2004 کی ورلڈ ڈبلز اسکواش چیمپئن شپ کے بعد، ان پر 13 ماہ کے لیے ورلڈ اسکواش فیڈریشن کے زیر انتظام ایونٹس میں کھیلنے پر پابندی عائد کر دی گئی تھی جب ایک ڈسپلنری پینل نے اسے ریفری کے ساتھ بدسلوکی کا مجرم پایا تھا۔ [2] 2011 میں ایک پیشہ ور اسکواش کھلاڑی کی حیثیت سے ریٹائرمنٹ کے بعد، پامر نے فلوریڈا کے اورلینڈو میں اپنی ڈیوڈ پامر اسکواش اکیڈمی میں ایک کامیاب، اعلیٰ سطحی کوچ کے طور پر اپنی حیثیت برقرار رکھی۔ نومبر 2016 میں، پامر نے اپنے کالج اسکواش کوچنگ کا آغاز کیا کیونکہ اسے کارنیل یونیورسٹی میں جیمز براڈ ہیڈ '57 ہیڈ کوچ آف اسکواش نامزد کیا گیا تھا۔ پامر اب نیویارک کے اتھاکا میں واقع کورنیل یونیورسٹی میں مردوں اور خواتین کی اسکواش ٹیم کی قیادت کر رہے ہیں۔[3][4][5]

ورلڈ اوپن کے فائنل میں شرکت[ترمیم]

ڈیوڈ پامر اور ٹام رچرڈز ایکشن میں۔

2 ٹائٹل اور 1 رنر اپ[ترمیم]

نتیجہ سال مقام فائنل میں حریف فائنل میں اسکور
فاتح 2002 اینٹورپ ، بیلجیم سکاٹ لینڈ کا پرچمجان وائٹ 13–15، 12–15، 15–6، 15–14، 15–11
دوسرے نمبر پر 2005 ہانگ کانگ مصر کا پرچمعمرو شبانہ 11–6، 11–7، 11–8
فاتح 2006 دوحہ ، قطر فرانس کا پرچمگریگوری گالٹیئر 9–11، 9–11، 11–9، 16–14، 11–2

میجر ورلڈ سیریز کے فائنل میں[ترمیم]

برٹش اوپن: 4 فائنلز (4 ٹائٹلز، 0 رنر اپ)[ترمیم]

نتیجہ سال فائنل میں حریف فائنل میں اسکور
فاتح 2001 انگلستان کا پرچم کرس واکر 12–15، 13–15، 15–2، 15–9، 15–5
فاتح 2003 انگلستان کا پرچم پیٹر نکول 15–13، 15–13، 15–8
فاتح 2004 مصر کا پرچم عمرو شبانہ 14–16، 11–7، 13–11، 11–7
فاتح 2008 انگلستان کا پرچم جیمز ولسٹراپ 11–9، 11–9، 8–11، 6–11، 13–11

ہانگ کانگ اوپن: 1 فائنل (1 ٹائٹل، 0 رنر اپ)[ترمیم]

نتیجہ سال فائنل میں حریف فائنل میں سکور
فاتح 2001 فرانس کا پرچم تھیری لنکو 15–13، 15–6، 15-9

قطر کلاسک: 4 فائنلز (0 ٹائٹل، 4 رنر اپ)[ترمیم]

نتیجہ سال فائنل میں حریف فائنل میں سکور
دوسرے نمبر پر 2001 انگلستان کا پرچم پیٹر نکول 15–12، 15–5، 10–15، 12–15، 15-10
دوسرے نمبر پر 2002 انگلستان کا پرچم پیٹر نکول 15–9، 13–15، 15–6، 13–15، 15-7
دوسرے نمبر پر 2005 انگلستان کا پرچم جیمز ولسٹراپ 11–1، 11–7، 11-7
دوسرے نمبر پر 2007 مصر کا پرچم رامی اشور 8-11، 11-9، 11-9، 11-6

یو ایس اوپن: 3 فائنلز (1 ٹائٹل، 2 رنر اپ)[ترمیم]

نتیجہ سال فائنل میں حریف فائنل میں سکور
فاتح 2002 آسٹریلیا کا پرچمسٹیورٹ بوسویل 15–13، 15–10، 15-11
دوسرے نمبر پر 2003 انگلستان کا پرچم پیٹر نکول 15–10، 14–15، 15–14، 17-15
دوسرے نمبر پر 2005 انگلستان کا پرچم لی بیچل 11–7، 9-11، 8-11، 11–1، 11-8

کامن ویلتھ گیمز کے فائنل میں شرکت[ترمیم]

2006 میلبورن گیمز، مردوں کے سنگلز رنرز اپ (1)
سال فائنل میں حریف فائنل میں اسکور
2006 انگلستان کا پرچم پیٹر نکول 9–5، 10–8، 4–9، 9–2
2018 گولڈ کوسٹ گیمز، فاتح (1) زیک الیگزینڈر کے ساتھ مردوں کے ڈبلز
سال فائنل میں حریف فائنل میں اسکور
2018 انگلستان کا پرچم ڈیرل سیلبی اور ایڈرین والر 11–9، 3-11، 11-6

کل تمغے جیتے، 1 گولڈ، 1 سلور، 4 برانز

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Dent A It's Palmer—finally آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ squashsite.co.uk (Error: unknown archive URL) at squashsite.co.uk
  2. Beck R. WSF Spanks Palmer
  3. "Deans' secret weapon to squash All Blacks"۔ TVNZ۔ 23 April 2009۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 دسمبر 2009 
  4. Beck R. WSF Spanks Palmer
  5. Rod Gilmour (29 April 2009)۔ "David Palmer can squash All Blacks by helping Wallabies"۔ The Daily Telegraph۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2010 

بیرونی روابط[ترمیم]