دوحہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
دوحہ (الدوحة)
اوپر سے (بائیں سے دائیں، جامعہ قطر، فنون اسلامیہ کا عجائب گھر، دوحہ کی بلند و بالا عمارات، سوق واقف، اللولو (دی پرل)
اوپر سے (بائیں سے دائیں، جامعہ قطر، فنون اسلامیہ کا عجائب گھر،

دوحہ کی بلند و بالا عمارات، سوق واقف، اللولو (دی پرل)

اوپر سے (بائیں سے دائیں، جامعہ قطر، فنون اسلامیہ کا عجائب گھر، دوحہ کی بلند و بالا عمارات، سوق واقف، اللولو (دی پرل)
اوپر سے (بائیں سے دائیں، جامعہ قطر، فنون اسلامیہ کا عجائب گھر،

دوحہ کی بلند و بالا عمارات، سوق واقف، اللولو (دی پرل)

ملک قطر
رقبہ  
 - شہر 132 مربع کلومیٹر  (51 مربع میل)
آبادی  
 - شہر (2004) 339،847
 - کثافت 2،574/مربع کلومیٹر (6،690/مربع میل)
منطقۂ وقت AST (یو۔ ٹی۔ سی۔+3)

دوحہ (عربی: الدوحة) مملکت قطر کا دارالحکومت ہے جو خلیج فارس کے ساحلوں پر واقع ہے۔ 4 لاکھ کی آبادی (بمطابق 2005ء مردم شماری) کے ساتھ یہ ملک کا سب سے بڑا شہر ہے اور ملک کی 80 فیصد آبادی اسی شہر اور اس کے گرد و نواح میں رہائش پذیر ہے۔ یہ مملکت کا اقتصادی مرکز ہے۔

تاریخ[ترمیم]

یہ شہر 1850ء میں البدا کے نام سے قائم کیا گیا۔ 1883ء میں شیخ قاسم نے مقامی قطریوں پرمشتمل ایک فوج کے ذریعے عثمانیوں کے خلاف فتح حاصل کی۔ 1916ء میں اسے برطانیہ کے زیر سرپرستی قطر کا دارالحکومت قرار دیا گیا اور جب 1971ء میں ملک نے آزادی حاصل کی تب اسے قومی دارالحکومت برقرار رکھا گیا۔ 1917ء میں شیخ عبد اللہ قاسم آل ثانی نے شہر کے مرکز میں قلعہ الکوت تعمیر کرایا۔ 1949ء میں قطر میں تیل کی تلاش کا آغاز ہوا۔ آج یہ ملک کل 8 لاکھ بیرل روزانہ تیل پیدا کرتا ہے۔ 1969ء میں گورنمنٹ ہاؤس کا قیام عمل میں آیا جسے آج قطر کی سب سے اہم عمارت سمجھا جاتا ہے۔ 1973ء میں جامعہ قطر اور 1975ء میں قطر قومی عجائب گھر قائم کیا گیا، جو دراصل 1912ء میں حاکم کا محل تھا۔ معروف عربی خبری ٹیلی وژن چینل الجزیرہ نے 1996ء میں اپنی نشریات کا آغاز کیا ، اس کے صدر دفاتر اور نشریاتی مراکز دوحہ ہی میں واقع ہیں۔

اعداد و شمار[ترمیم]

دوحہ کی آبادی کی خصوصیات تبدیل ہوتی رہتی ہیں کیونکہ شہر کی اکثریت غیر ملکی تارکین وطن پر مشتمل ہے اور قطری باشندے اقلیت میں ہیں۔ قطر کی آبادی کا بیشتر حصہ جنوبی ایشیائی باشندوں پر مشتمل ہے، جبکہ لیونت کے عرب ممالک اور مشرقی ایشیا سے رہنے والے بھی بڑی تعداد میں یہاں رہتے ہیں۔ دوحہ میں امریکہ، جنوبی افریقہ، برطانیہ، ناروے اور دیگر مغربی ممالک کے باشندے بھی رہائش پذیر ہیں۔ ماضی میں تارکین وطن قطر میں ملکیت رکھنے کی اجازت نہیں رکھتے تھے لیکن اب غیر قطری باشندے دوحہ کے متعدد علاقوں میں جائیداد خرید سکتے ہیں۔

معیشت[ترمیم]

قطر کی بیشتر تیل و قدرتی گیس کی تنصیبات دوحہ میں واقع ہے۔ ملکی اقتصادی سرگرمیوں کے اس مرکز میں ملک کے بڑے تیل و گیس نکالنے واللے اداروں کے صدر دفاتر ہیں جن میں قطر پٹرولیم، قطر گیس اور راس گیس شامل ہیں۔ دوحہ کی معیشت تیل و قدرتی گیس کی صنعت سے حاصل ہونے والی آمدنی کی بنیادوں پر کھڑی ہے اور قطری حکومت تیل پر اس انحصار کو کم کرنے کے لیے ملکی معیشت میں تیزی سے تنوع لا رہی ہے۔ نتیجتاً شہر بہت تیزی سے ترقی پا رہا ہے جو درا صل حاکم قطر شیخ حمد بن خلیفہ آل ثانی کے جدیدیت کے منصوبے کا حصہ ہے۔ متحدہ عرب امارات کے قریبی شہر دبئی کی طرح دوحہ کی معیشت بھی تیزی سے تیل و قدرتی گیس پر انحصار کم کرتی جا رہی ہے لیکن دبئی کی طرح اس کی بنیادی توجہ سیاحت پر مرکوز نہیں۔ اقتصادی سرگرمیوں کے باعث شہر کی آبادی میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے اور 2004ء سے 2006ء کے درمیان شہر کی آبادی میں 60 ہزار افراد کا اضافہ ہوا؛ نتیجتاً جائیداد و تعمیرات کے شعبے میں زبردست ترقی ہوئی اور جائیداد کی قیمتیں آسمانوں پر پہنچ گئی ہیں۔ جنوری 2007ء میں برطانوی نشریاتی ادارے (بی بی سی) کی رپورٹ کے مطابق دوحہ جائیداد کی قیمتوں کے حوالے سے دبئی سے بھی مہنگا شہر ہے۔ آبادی میں تیزی سے اضافے کے باعث دوحہ کے شمال میں ایک نیا شہر آباد کرنے کا منصوبہ ہے جہاں 2 لاکھ افراد رہائش پذیر ہوں گے۔ تجارتی و کاروباری سرگرمیوں میں اضافے کے باعث دوحہ میں جدید تعمیرات میں بھی اضافہ ہوا ہے او رشہر بلند و بالا عمارات کا مرکز بنتا جا رہا ہے۔

تعلیم[ترمیم]

دوحہ میں جامعہ قطر واقع ہے جو 1973ء میں قائم ہوئی جبکہ اس کے علاوہ دوحہ کے شہر تعلیم (ایجوکیشن سٹی) میں متعدد جامعات بھی واقع ہیں۔ شہر تعلیم میں دنیا کی کئی معروف جامعات کی شاخیں واقع ہیں جن میں جارج ٹاؤن یونیورسٹی، ویل میڈیکل کالج آف کارنیل یونیورسٹی، ورجینیا کامن ویلتھ یونیورسٹی، ٹیکساس اے اینڈ ایم یونیورسٹی اور کارنیگی میلون یونیورسٹی بھی شامل ہیں۔ دوحہ میں کئی بین الاقوامی مدارس (اسکول) بھی واقع ہیں جو تارکین وطن کے لیے ہیں۔

آب و ہوا[ترمیم]

دوحہ ایک گرم صحرائی علاقہ ہے جہاں گرمیوں کا موسم سردیوں کی نسبت زیادہ لمبا ہوتا ہے۔ گرمیوں میں بعض اوقات درجہ حرارت 47 ڈگری سنٹی گریڈ سے بھی زیادہ ہو جاتا ہے۔

دوحہ کا موسم
مہینہ جنوری فروری مارچ اپریل مئی جون جولائی اگست ستمبر اکتوبر نومبر دسمبر سال
بلند ترین سینٹی گریڈ (فارنہائیٹ) 31.2
(88.2)
36.0
(96.8)
39.0
(102.2)
46.0
(114.8)
47.7
(117.9)
49.0
(120.2)
48.2
(118.8)
48.0
(118.4)
45.5
(113.9)
43.4
(110.1)
38.0
(100.4)
32.2
(90)
39
اوسطاً بلند سینٹی گریڈ (فارنہائیٹ) 21.7
(71.1)
23.0
(73.4)
26.8
(80.2)
31.9
(89.4)
38.2
(100.8)
41.2
(106.2)
41.5
(106.7)
40.7
(105.3)
38.6
(101.5)
35.2
(95.4)
29.5
(85.1)
24.1
(75.4)
32.7
(90.86)
یومیہ اوسط سینٹی گریڈ (فارنہائیٹ) 17.0
(62.6)
17.9
(64.2)
21.2
(70.2)
25.7
(78.3)
31.0
(87.8)
33.9
(93)
34.7
(94.5)
34.3
(93.7)
32.2
(90)
28.9
(84)
24.2
(75.6)
19.2
(66.6)
26.68
(80.03)
اوسطاً کم سینٹی گریڈ (فارنہائیٹ) 12.8
(55)
13.7
(56.7)
16.7
(62.1)
20.6
(69.1)
25.0
(77)
27.7
(81.9)
29.1
(84.4)
28.9
(84)
26.5
(79.7)
23.4
(74.1)
19.5
(67.1)
15.0
(59)
21.58
(70.84)
کم ترین سینٹی گریڈ (فارنہائیٹ) 3.8
(38.8)
5.0
(41)
8.2
(46.8)
10.5
(50.9)
15.2
(59.4)
21.0
(69.8)
23.5
(74.3)
22.4
(72.3)
20.3
(68.5)
16.6
(61.9)
11.8
(53.2)
6.4
(43.5)
3.8
بارش م م (انچ) 13.2
(0.52)
17.1
(0.673)
16.1
(0.634)
8.7
(0.343)
3.6
(0.142)
0
(0)
0
(0)
0
(0)
0
(0)
1.1
(0.043)
3.3
(0.13)
12.1
(0.476)
75.2
(2.961)
نمی 71 70 63 52 44 41 49 55 62 63 66 71 58.9
اوسطاً یومیہ بارش (≥ 1.0 mm) 1.7 2.1 1.8 1.4 0.2 0.0 0.0 0.0 0.0 0.1 0.2 1.3 8.8
دھوپ (گھنٹے) 244.9 224.0 241.8 273.0 325.5 342.0 325.5 328.6 306.0 303.8 276.0 241.8 3,432.9
ماخذ: NOAA (1962-1992) [1]

کھیل[ترمیم]

دوحہ میں متعدد کھیلوں کے میدان واقع ہیں جن میں سے بیشتر 15 ویں ایشیائی کھیلوں کے لیے تعمیر نو کی مراحل سے گزرے جو دسمبر 2006ء میں منعقد ہوئے۔ دوحہ نے دسمبر 2005ء میں تیسرے مغربی ایشیائی کھیلوں کی بھی میزبانی کی۔ شہر کے اہم کھیلوں کے میدان یہ ہیں:

  • الاہلی اسٹیڈیم
  • الغرافہ اسٹیڈیم
  • الاتحاد اسپورٹس کلب
  • جاثم بن حماد اسٹیڈیم (السعد اسٹیڈیم)
  • گرینڈ حماد اسٹیڈیم
  • حماد ایکویٹک سینٹر
  • خلیفہ انٹرنیشنل اسٹیڈیم (2006ء ایشیائی کھیلوں کا مرکز)
  • خلیفہ ٹینس اسٹیڈیم
  • مرخیہ اسپورٹس کلب
  • قطر اسپورٹس کلب اسٹیڈیم

2004ء میں شروع کی جانے والی ایسپائر اکیڈمی (ASPIRE) کا مقصد عالمی معیار کے کھلاڑی پیدا کرنا ہے۔ یہ اسپورٹس سٹی کمپلیکس میں واقع ہے جس میں خلیفہ انٹرنیشنل اسٹیڈیم بھی شامل ہے۔ امکان ہے کہ دوحہ 2016ء کے اولمپک کھیلوں کے لیے بولی بھی لگائے گا۔

موسم[ترمیم]

دوحہ جزیرہ نما عرب کے مشرقی کنارے پر واقع ہے اور اس کا موسم انتہائی گرم ہے۔ مئی سے ستمبر کے دوران اوسط درجہ حرارت 40 درجہ سیلسیس (104 درجہ فارن ہائٹ) ہوتا ہے اور ہوا میں نمی کا تناسب بہت زیادہ ہوتا ہے۔ موسم گرما میں شہر میں بارشیں نہ ہونے کے برابر ہیں جبکہ دیگر مہینوں میں بھی ایک انچ (2.5 س م) سے بھی کم بارش پڑتی ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]


‘‘http://ur.wikipedia.org/w/index.php?title=دوحہ&oldid=817742’’ مستعادہ منجانب