کارون نائر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کارون نائر
Karun nair With Rashid Zirak.jpg
ذاتی معلومات
مکمل نامکارون کلادھرن نائر
پیدائش6 دسمبر 1991ء (عمر 30 سال)
جودھ پور، راجستھان، بھارت
قد5 فٹ 6 انچ (1.68 میٹر)
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا آف بریک گیند باز
حیثیتبلے بازی
تعلقاتسنایا ٹانکاری والا|2020ء (بیوی)
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 287)26 نومبر 2016  بمقابلہ  انگلستان
آخری ٹیسٹ25 مارچ 2017  بمقابلہ  آسٹریلیا
پہلا ایک روزہ (کیپ 212)11 جون 2016  بمقابلہ  زمبابوے
آخری ایک روزہ13 جون 2016  بمقابلہ  زمبابوے
ایک روزہ شرٹ نمبر.69
قومی کرکٹ
سالٹیم
2012–presentکرناٹک
2012–2013رائل چیلنجرز بنگلور (اسکواڈ نمبر. 69)
2014–2015راجستھان رائلز (اسکواڈ نمبر. 69)
2016–2017دہلی کیپیٹلز (اسکواڈ نمبر. 69)
2018–2020کنگز الیون پنجاب (اسکواڈ نمبر. 69)
2021-تاحالکولکاتا نائٹ رائیڈرز
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 6 2 76 78
رنز بنائے 374 46 5,436 1,953
بیٹنگ اوسط 62.33 23.00 50.33 31.50
100s/50s 1/0 0/0 14/25 2/12
ٹاپ اسکور 303ناٹ آؤٹ 39 328 120
گیندیں کرائیں 12 1269 750
وکٹ 0 13 14
بالنگ اوسط 52.30 44.78
اننگز میں 5 وکٹ 0 0
میچ میں 10 وکٹ 0 0
بہترین بولنگ 2/11 2/16
کیچ/سٹمپ 3/– 0/– 64/– 29/–
ماخذ: ESPNCricinfo، 25 December 2019

کارون کلادھرن نائر (پیدائش: 6 دسمبر 1991ء) ایک ہندوستانی بین الاقوامی کرکٹر ہے جو ڈومیسٹک کرکٹ میں کرناٹک اور انڈین پریمیئر لیگ میں راجستھان رائلز کے لیے کھیلتا ہے۔ وہ دائیں ہاتھ کا ٹاپ آرڈر بلے باز اور کبھی کبھار آف بریک بولر ہے۔ [1] وہ ٹیسٹ کرکٹ میں ٹرپل سنچری بنانے والے دوسرے ہندوستانی بلے باز ہیں۔ [2] اس نے 2016ء میں زمبابوے کے خلاف ون ڈے میں اپنے ہندوستانی کیریئر کا آغاز کیا۔ [3] انہوں نے اپنا ٹیسٹ ڈیبیو 2016ء میں انگلینڈ کے خلاف کیا تھا

ابتدائی زندگی[ترمیم]

کارون 6 دسمبر 1991ء کو جودھ پور راجستھان میں پیدا ہوئے۔ [4] اس کے والدین کلادھرن نائر اور پریما نائر کا تعلق کیرالہ کے الاپپوزا ضلع کے چنگنور سے ہے۔ [5] کالادھرن، جو مکینیکل انجینئر ہیں، اپنے بیٹے کی پیدائش کے وقت جودھ پور میں تعینات تھے اور بعد میں اپنے خاندان کے ساتھ کورامنگلا، بنگلور چلے گئے جہاں انہوں نے ایم چنا سوامی اسٹیڈیم میں سپرنکلر سسٹم پر بھی کام کیا۔ [6] نائر کی ماں، پریما چنمایا ودیالیہ ، بنگلور میں ٹیچر ہیں۔ کارون کی ایک بڑی بہن شروتی نائر ہے۔ قبل از وقت بچے کے طور پر پیدا ہوئے، کارون کے والدین کو ڈاکٹروں نے مشورہ دیا تھا کہ وہ اپنے بیٹے کو اس کے کمزور پھیپھڑوں کے علاج کے حصے کے طور پر کھیلوں سے متعارف کروائیں۔ [7] نائر نے 28 مارچ 2001ء کو کورامنگالا کرکٹ اکیڈمی میں شمولیت اختیار کی، اس کے ایک سال بعد جب ان کا خاندان بنگلورو منتقل ہوا اور شیوانند کی قیادت میں کوچ کیا گیا۔ [8] اس نے چنمایا ودیالیہ میں تعلیم حاصل کی، کیا اس کی والدہ کو چوتھی جماعت تک پڑھایا گیا اور کرکٹ کے بہتر مواقع کے لیے فرینک انتھونی پبلک اسکول میں چلے گئے۔ [9] اس نے بنگلور کی جین یونیورسٹی میں بی کام (آنرز) کی تعلیم حاصل کی۔ وہ کئی زبانوں پر عبور رکھتا ہے۔ : انگریزی ، ہندی ، ملیالم ، کنڑ اور تامل ۔ اس کی مادری زبان ملیالم ہے۔ [10]

ڈومیسٹک کیریئر[ترمیم]

نائر نے اپنا فرسٹ کلاس ڈیبیو 2013-14 کے سیزن میں کیا جس میں کرناٹک نے رنجی ٹرافی جیتی۔ اس نے اپنے آخری لیگ کھیل اور پہلے دو ناک آؤٹ میچوں میں لگاتار تین سنچریاں بنائیں۔ وہ 2014-15 کے سیزن میں کم اسکور کے ساتھ ایک دبلے پیچ سے گزرا لیکن فائنل میں اس نے 328 رنز بنا کر واپس اچھال دیا جس سے کرناٹک کو دوبارہ ٹائٹل جیتنے میں مدد ملی۔ [11] وہ ٹرپل سنچری بنانے والے کرناٹک کے دوسرے کھلاڑی اور 1946–47 کے بعد رنجی فائنل میں ٹرپل سنچری بنانے والے پہلے بلے باز بھی بن گئے۔ [12] یہ رنجی ٹرافی کے فائنل میں کسی بلے باز کا سب سے زیادہ سکور بھی تھا۔ [13] انہوں نے 2015-16 رانجی ٹرافی میں دو سنچریوں اور دو نصف سنچریوں سمیت 500 رنز بنائے۔ [14] اس نے اگلے سیزن میں اپنی اچھی کارکردگی کو جاری رکھا جس میں سیزن میں اپنے چھ میچوں میں سے ایک سنچری اور تین نصف سنچریاں بنائیں۔ [15] اکتوبر 2018ء میں اسے 2018-19 دیودھر ٹرافی کے لیے انڈیا اے کے اسکواڈ میں شامل کیا گیا۔ [16] اگلے مہینے، اسے 2018-19 رنجی ٹرافی سے پہلے دیکھنے والے آٹھ کھلاڑیوں میں سے ایک کے طور پر نامزد کیا گیا۔ [17] اگست 2019ء میں اسے 2019-20 دلیپ ٹرافی کے لیے انڈیا ریڈ ٹیم کے اسکواڈ میں شامل کیا گیا۔

بین الاقوامی کیریئر[ترمیم]

نائر کو مئی 2016ء میں زمبابوے کے خلاف ان کی سیریز کے لیے ہندوستانی ODI اور T20I اسکواڈز میں شامل کیا گیا تھا [18] [3] 11 جون 2016ء کو ہرارے اسپورٹس کلب میں سیریز میں اپنا ایک روزہ بین الاقوامی ڈیبیو کیا تھا۔ 26 نومبر 2016ء کو اس نے موہالی میں انگلینڈ کے خلاف اپنا ٹیسٹ ڈیبیو کیا۔ انہوں نے ایم اے چدمبرم اسٹیڈیم میں سیریز کے آخری میچ میں اپنی پہلی ٹیسٹ سنچری سکور کی اور ناٹ آؤٹ 303 رنز بنائے ۔ اس وقت بین الاقوامی کرکٹ میں ان کی عمر صرف تین اننگز تھی، اس طرح وہ ٹیسٹ کرکٹ کی تاریخ میں کھیلے گئے میچوں کی تعداد کے لحاظ سے پہلی ٹرپل سنچری بنانے والے تیز ترین بلے باز بن گئے۔ وہ وریندر سہواگ کے بعد ہندوستان کے دوسرے ٹرپل سنچری بھی تھے، اور کھیل کی تاریخ میں پہلے ٹیسٹ سنچری کو ٹرپل میں تبدیل کرنے والے صرف تیسرے آدمی تھے۔ [19] بھارت نے یہ میچ ایک اننگز اور 75 رنز سے جیتا اور نائر کو میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔ [20]

انڈین پریمیئر لیگ[ترمیم]

کارون انڈین پریمیئر لیگ کے 2012ء اور 2013ء کے سیزن میں رائل چیلنجرز بنگلور کا حصہ تھے۔ [21] اس نے 2014ء کے آئی پی ایل میں راجستھان رائلز کے ساتھ سیزن میں 142.24 کے اسٹرائیک ریٹ سے 330 رنز بنائے۔ [22] 2016ء میں دہلی ڈیئر ڈیولز نے غیر قانونی بیٹنگ اور میچ فکسنگ کی تحقیقات میں قصوروار پائے جانے کے بعد راجستھان پر دو سال کے لیے مقابلے سے پابندی عائد کیے جانے کے بعد کارون پر دستخط کیے تھے۔ [23] انہوں نے 2017 کے سیزن میں ظہیر خان کے زخمی ہونے کے بعد 3 میچوں میں دہلی کی کپتانی کی۔ [24] انہیں کنگز الیون پنجاب نے 2018ء کی آئی پی ایل نیلامی میں خریدا تھا۔ [25] فروری 2021ء میں نائر کو کولکتہ نائٹ رائیڈرز نے 2021ء انڈین پریمیئر لیگ سے قبل آئی پی ایل کی نیلامی میں خریدا۔ [26] فروری 2022ء میں وہ 2022 کے انڈین پریمیئر لیگ ٹورنامنٹ کی نیلامی میں راجستھان رائلز میں واپس آئے۔ [27]

ذاتی زندگی[ترمیم]

جولائی 2016 میں، کارون اپنا ODI ڈیبیو کرنے کے بعد تھینکس گیونگ مندر کے دورے کے دوران کیرالہ میں دریائے پمپا میں کشتی کے حادثے میں بال بال بچ گئے۔ [28] انہوں نے 29 جون 2019ء کو اپنے سوشل میڈیا ہینڈلز کے ذریعے دیرینہ گرل فرینڈ سنایا ٹانکاری والا کے ساتھ اپنی منگنی کا اعلان کیا، جو ایک میڈیا پروفیشنل ہیں۔ [29] جوڑے نے 19 جنوری 2020ء کو راجستھان کے ادے پور میں ایک نجی تقریب میں شادی کی [30] ان کا بیٹا کیان نائر جنوری 2022ء میں پیدا ہوا [31] ۔

  1. "Karun Nair". ESPNcricinfo. 
  2. "Karun Nair's record-shattering triple hundred: All the stats you need to know". India Today (بزبان انگریزی). 19 December 2016. اخذ شدہ بتاریخ 03 ستمبر 2021. 
  3. ^ ا ب "India tour of Zimbabwe, 1st ODI: Zimbabwe v India at Harare, Jun 11, 2016". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 11 جون 2016. 
  4. "Karun Nair: Quick Facts About India's New Batting Star". News 18. 20 December 2016. اخذ شدہ بتاریخ 03 مئی 2022. 
  5. "Cricket was in his blood from age 10: Karun Nair's parents". Sports Keeda. 20 December 2016. اخذ شدہ بتاریخ 03 مئی 2022. 
  6. Monga، Sidharth. "Parental pride as Nair feels the hand of fortune at last". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 19 دسمبر 2016. 
  7. "Karun Nair's Incredible Journey To Become A Star Cricketer". outlookindia. 
  8. "Karun Nair was destined for great things; feels childhood coach Shivanand". crictracker. اخذ شدہ بتاریخ 03 مارچ 2021. 
  9. Chatterjee، Soumya. "As Karun Nair joins elite 300 club, proud school in Bengaluru recalls his dedication". The News Minute. اخذ شدہ بتاریخ 19 دسمبر 2016. 
  10. "What languages does Karun Nair speak?". Google Cameos. 
  11. "The Ranji Trophy" (بزبان انگریزی). ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 07 جنوری 2021. 
  12. "Karun Nair first batsman in 68 years to score triple century in Ranji final". The Hindu. اخذ شدہ بتاریخ 19 دسمبر 2016. 
  13. "The most exhilarating ODI of them all". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2018. 
  14. "Records / Ranji Trophy, 2015/16 - Karnataka / Batting and bowling averages". ESPNcricinfo. 
  15. "Records / Ranji Trophy, 2016/17 - Karnataka / Batting and bowling averages". ESPNcricinfo. 
  16. "Rahane, Ashwin and Karthik to play Deodhar Trophy". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2018. 
  17. "Eight players to watch out for in Ranji Trophy 2018-19". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 03 نومبر 2018. 
  18. "India pick Faiz Fazal for Zimbabwe tour". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2016. 
  19. "Karun Nair had 1 or 2 average Test matches and he was sidelined," says former batting coach Sanjay Bangar". India Today (بزبان انگریزی). 4 July 2021. اخذ شدہ بتاریخ 03 ستمبر 2021. 
  20. "England tour of India, 5th Test: India v England at Chennai, Dec 16–20, 2016". 
  21. "IPL: 5 Players who were part of RCB you never know". Crictracker. اخذ شدہ بتاریخ 05 مئی 2022. 
  22. "Whenever I scored runs, there's someone else who scored better: Karun Nair". The New Indian Express. اخذ شدہ بتاریخ 05 مئی 2022. 
  23. "IPL scandal: Chennai Super Kings and Rajasthan Royals suspended". بی بی سی نیوز. 14 May 2015. اخذ شدہ بتاریخ 18 جولا‎ئی 2015. 
  24. "5 surprise captains in the history of IPL". Sports Keeda. اخذ شدہ بتاریخ 05 مئی 2022. 
  25. "List of sold and unsold players". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 27 جنوری 2018. 
  26. "IPL 2021 auction: The list of sold and unsold players". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 18 فروری 2021. 
  27. "IPL 2022 auction: The list of sold and unsold players". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 فروری 2022. 
  28. "How Karun Nair escaped death and went on to create cricket history for India". Hindustan Times. اخذ شدہ بتاریخ 05 مئی 2022. 
  29. "Karun Nair gets engaged to long-time girlfriend". Sports NDTV (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 30 جون 2020. 
  30. "Karun Nair marries long-time girlfriend Sanaya Tankariwala". Sports NDTV (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 19 جنوری 2020. 
  31. "Finch Jr Meets Nair Jr". Rediff.com. 19 April 2022. اخذ شدہ بتاریخ 05 مئی 2022.