جارج ڈبلیو بش

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
جارج بش

جارج واکر بش (George Walker Bush) امریکہ کے سابق اور 43 ویں صدر ہیں۔ صدر بش دوسری بار امریکی صدارت کے لیۓ منتخب ہوۓ ہیں۔ وہ 2001 اور 2004 میں منتخب ہوۓ۔ اپنے ہمنام باپ سے ممیز کرنے کے لیے اسے عرف عام میں "ڈب یا (doubya یعنی انگریزی حرف W)" کہا اور لکھا جاتا تھا،

ستمبر 2001 میں جب امریکہ پر دہشت گردوں نے حملہ کیا تو صدر بش نے دہشت گردی کے خلاف عالمی جنگ کا اعلان کیا۔ افغانستان پر حملہ کیا گیا اور طالبان کی حکومت کو ختم کر دیا گيا۔ اس کے بعد صدر بش نے عراق پر حملہ کیا بے شمار لوگ مارے گۓ۔ دہشت پر جنگ سلسلہ میں مسلمانوں کو امریکہ سے باہر کیوبا عقوبت خانے میں قید کر کے تشدد کے احکام دیتا رہا۔[1] [2]

صدر بش کی پالیسیوں کو دنیا ناپسندیدگی کی نظر سے دیکھتی ہے۔ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ یہ امریکی اسلحہ بیچنے اور مشرق وسطی میں تیل اور قدرتی گیس کے کنوں پر قبضہ کرنے کی کوشش ہے۔

صدر بش کے آباؤ اجداد کا تعلق سمرسیٹ انگلستان سے ہے۔ وہ سترھویں صدی میں امریکہ آۓ۔ صدر بش 6 جولائی 1946ء کو پیدا ہوۓ۔ وہ امریکی ریاست ٹیکساس کے گورنر بھی رہے۔ صدر بش کے والد بھی امریکہ کے صدر رہ چکے ہیں۔

جنگی جرائم[ترمیم]

تنظیم العفو بین الاقوامی نے اکتوبر 2011ء میں کینیڈا کی حکومت سے مطالبہ کیا کہ بُش کو دورہ کینیڈا کے دوران جنگی جرائم اور تشدد کے الزام میں گرفتار کیا جاوے۔[3]

متعلقہ مضامین[ترمیم]

مزید[ترمیم]



  1. ^ عالمی اشتراکی موقع جال 6 نومبر 2010ء، "Torturer-in-chief: Bush brags about waterboarding"
  2. ^ "Guantanamo lawyers speak out on decade of torture and abuse". عالمی اشتراکی موقع. 14 ستمبر 2011ء. http://wsws.org/articles/2011/sep2011/guan-s14.shtml۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 September 2011. 
  3. ^ "Amnesty calls on Canada to arrest George W. Bush". سی بی سی. 12 اکتوبر 2011ء. http://www.cbc.ca/news/politics/story/2011/10/12/pol-amnesty-canada-bush-arrest.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 5 October 2011.