آئی فین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
آئی فین
(چینی میں: 艾芬 ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش 20ویں صدی  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the People's Republic of China.svg عوامی جمہوریہ چین  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ طبیبہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

آئی فین (چینی زبان:艾芬) سینٹرل ہاسپٹل آف ووہان میں شعبہ ایمجنسی کی طبیبہ اور ڈائریکٹر تھی۔ سب سے پہلے انہوں نے ہی دنیا کو کورونا وائرس کی عالمی وبا، 2019ء - 2020ء کے بارے میں بتایا۔ انہیں چین کے ایک عوامی رسالہ میں “سیٹی والی“ (发哨子的人) کا لقب دیا گیا۔[1]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

انہوں نے تونگجی میڈیکل کالج سے 1997ء میں گریجویشن کیا اور ووہان سینٹرل ہاسپٹل میں شعبہ کارڈیووسکولر میڈیسن میں کام کیا۔ 2010ء میں وہ اسی ہاسپٹل میں ایمرجنسی شعبہ کی ڈائریکٹر بن گئی۔[2]

کووڈ 19 کی وبا[ترمیم]

18 دسمبر 2019ء کو آئی کورونا کے پہلے مریض سے ملی جس کے پھیپھڑے میں کئی سارے نشانات تھے۔ وہ ہوانان سی فوڈ ہول سیل مارکیٹ کا ڈیلیوری بوائے تھا۔ 27 دسمبر کو دوسرا مریض ان کے پاس آیا لیکن یہ دوسرا مریض پہلے مریض سے کسی طرح سے رابطہ میں نہیں آیا تھا۔ 30 دسمبر کو دوسرا مریض ٹیسٹ میں کورونا کا مثبت پایا گیا۔ آئی نے جیسے ہی رپورٹ میں سارس دیکھا وہ چونک گئی اور انہوں نے فوراً ہسپتال کے عوامی ہیلتھ ڈپارٹمنٹ کو مطلع کیا۔ انہوں نے لفظ سارس (SARS) کو نشان زد کیا اور ووہان میں ایک دوسرے ہسپتال کے ڈاکٹر کو بھیجا۔ یہ کورونا کا پہلا معاملہ تھا اور وہیں سے پورے ووہان میں پھیلنا شروع ہو گیا۔ یہیں سے لی کو اس کی خبر لگی۔[1] اسی دن دوپہر کو ایک طالبعلم نے وی چیٹ کے ایک گروپ میں اس رپورٹ کو ارسال کیا اور وسل بلاور لی وینلیناگ کے علم میں یہ بات آئی اور اس کا بڑے پیمانے پر رد عمل سامنے آیا۔[3]

1 جنوری 2020ء کو آئی نے پھر سے نئے مریضوں کے آنے کی خبر دی۔ یہ سارے مریض سی فوڈ مارکیٹ نے نزدیکی کلینیک میں بھرتی ہوئے تھے۔ انہوں نے عوامی ڈپارٹمنٹ کو مطلع کیا تاکہ لوگ متنبہ ہو جائیں۔

10 مارچ 2020ء کو چین کی پپلز میگزین نے آئی کا انٹرویو لیا اور اپنے مارچ کے شمارہ میں “دی وسل گوور“ (发哨子的人) کی سرخی لگا کر ان کے انٹرویو کو شائع کیا۔ حالانکہ اسی دن جبرا اس خبر کو ویبسائٹ سے 3 گھنٹو کے اندر ہٹوا لیا گیا۔[4][5]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Kuo، Lily (11 مارچ 2020). "Coronavirus: Wuhan doctor speaks out against authorities". The Guardian. 
  2. 杜玮 (18 فروری 2020). "亲历者讲述:武汉市中心医院医护人员被感染始末" (بزبان چینی). 中国新闻周刊. 18 فروری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  3. 龚菁琦 (10 مارچ 2020). "发哨子的人" (بزبان چینی). 人物周刊. 10 مارچ 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  4. "「发哨人」呼吁坚持「独立思想」 中宣部急删《人物》文章". Radio Free Asia (بزبان چینی). اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2020. 
  5. 葉琪 (10 مارچ 2020). "【新冠肺炎】「發哨人」反被指「造謠」源頭 李文亮同事望獲道歉". 香港01 (بزبان چینی). اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2020. 

بیرونی روابط[ترمیم]