مندرجات کا رخ کریں

امجد پرویز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
امجد پرویز
 

معلومات شخصیت
پیدائش 28 مارچ 1945ء [1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 3 مارچ 2024ء (79 سال)[2]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور [2]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت [1]
برطانوی ہند [3]
ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ پنجاب
گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہور   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مصنف ،  انجینئر   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات

امجد پرویز (مارچ 1945ء - 3 مارچ 2024ء) ایک پاکستانی انجینئر، مصنف اور گلوکار تھے۔ [4] پرویز نے نیسپاک (نیشنل انجینئرنگ سروسز پاکستان) کے چیف انجینئر، جنرل منیجر، نائب صدر اور منیجنگ ڈائریکٹر کے طور پر خدمات انجام دیں۔ [5] [6]

پس منظر[ترمیم]

امجد پرویز 28 مارچ 1945ء کو لاہور ، برٹش انڈیا میں شیخ عبد الکریم کے ہاں پیدا ہوئے جو اسلامیہ کالج لاہور کے شعبہ کیمسٹری کے سربراہ تھے۔ پرویز کے دادا خواجہ دل محمد اسلامیہ کالج لاہور میں پرنسپل تھے۔ وہ تحریک پاکستان کے شاعر بھی تھے کیونکہ ان کی قوم پرست نظمیں انجمن حمایت اسلام کے سالانہ کنونشن میں پڑھی جاتی تھیں جن کی صدارت علامہ اقبال نے کی تھی۔ [5] پرویز نے اپنی بنیادی تعلیم سنٹرل ماڈل اسکول لاہور سے 1960ء میں مکمل کی۔ اس کے بعد انھوں نے گورنمنٹ کالج، لاہور اور یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، لاہور میں داخلہ لیا جہاں سے انھوں نے 1967ء میں مکینیکل انجینئرنگ میں گریجویشن کیا۔ مکینیکل انجینئرنگ کی فیکلٹی میں یو ای ٹی میں شمولیت کے بعد، وہ 1968ء میں یونیورسٹی آف برمنگھم ، برطانیہ گئے جہاں انھوں نے 1969ء میں کوالٹی اینڈ ریلائیبلٹی انجینئرنگ میں ماسٹر ڈگری اور 1972ء میں انجینئرنگ پروڈکشن میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی۔ [5]

کیریئر[ترمیم]

پرویز نے نیسپاک (نیشنل انجینئرنگ سروسز پاکستان) میں تقریباً 30 سال خدمات انجام دیں، جنرل منیجر اور نائب صدر کے عہدوں پر فائز ہوئے اور 2005ء میں منیجنگ ڈائریکٹر اور صدر کے عہدے سے ریٹائر ہوئے۔ منیجنگ ڈائریکٹر کے طور پر اپنے دور میں، انھوں نے نیسپاک کے لیے ایک اہم سالانہ کاروبار لایا۔ [5] نیسپاک سے ریٹائرمنٹ کے بعد، پرویز نے یو ای ٹی میں بطور پروفیسر شمولیت اختیار کی جو اس کے صنعتی اور مینوفیکچرنگ انجینئرنگ ڈیپارٹمنٹ میں گریجویٹ اور پوسٹ گریجویٹ سطحوں پر تدریس اور تحقیق کے ذمہ دار ہیں۔ انھوں نے یو ای ٹی کے لیے 'انجینئرنگ سروسز یو ای ٹی پاکستان لمیٹڈ ' کے نام سے ایک مشاورتی کمپنی بھی قائم کی۔ 2011ء سے 2013ء تک انھوں نے لاہور یونیورسٹی میں مکینیکل انجینئرنگ کے شعبہ کے سربراہ کے طور پر خدمات انجام دیں۔ وہ لاہور لیڈز یونیورسٹی میں وزیٹنگ فیکلٹی ممبر تھے۔ [5]

موسیقی[ترمیم]

پرویز کو بچپن سے ہی موسیقی کا شوق تھا۔ انھوں نے اپنے کیرئیر کا آغاز بطور چائلڈ آرٹسٹ 1954ء میں ریڈیو پاکستان ، لاہور میں بچوں کے پروگرام 'ہونہار' میں کیا اور ساٹھ کی دہائی میں 'خطرِ احباب' میں نمودار ہونے سے پہلے۔ انھوں نے کلاسیکی گائیکی کی تربیت شام چورسیہ گھرانے کے استادوں سے حاصل کی جیسے استاد نزاکت علی خان-استاد سلامت علی خان کی جوڑی (1976ء میں ان کے شاگرد بنے)، استاد غلام شبیر خان-استاد غلام جعفر خان جوڑی (1992ء) اور موسیقار اختر۔ حسین اکھیاں اور تجربہ کار میوزک کمپوزر میاں شہریار۔ وہ سنٹرل پروڈکشن یونٹ، ریڈیو پاکستان میں پریکٹس کرنے والے گلوکار تھے جہاں انھوں نے اپنی ماہانہ پرفارمنس میں 1970 ءکی دہائی سے سینکڑوں غزلیں ، گیت اور دیگر گانے ریکارڈ کیے تھے۔ دو دہائیوں تک انھوں نے ہر ماہ پروگرام "آہنگِ خسروی" کے لیے ایک راگ پیش کیا اور خیالی شکل میں 50 سے زیادہ راگ پیش کیے۔ [6] پرویز نے ہلکی، نیم کلاسیکی موسیقی اور کلاسیکی موسیقی کے دونوں گانے پیش کیے۔ [7] پرویز پاکستان ٹیلی ویژن کارپوریشن (پی ٹی وی) سے بھی 1964ء میں اپنے آغاز سے منسلک تھے۔ اپنے کیریئر میں انھوں نے امریکا، برطانیہ، فرانس، اٹلی، ناروے ، ڈنمارک ، مصر ، سعودی عرب ، قطر ، متحدہ عرب امارات ، بحرین ، میانمار اور بھارت میں بھی پرفارم کیا۔

تحریریں[ترمیم]

  • پرویز کی تحریروں کو بڑے پیمانے پر تسلیم کیا گیا۔ [4] انھوں نے اپنی زندگی کی پچھلی تین دہائیوں سے روزنامہ دی نیشن (پاکستان) ، لاہور ، پاکستان کے لیے کتابوں کا جائزہ لینے کے لیے باقاعدہ کالم لکھے۔
  • ان کی تحریریں دو جلدوں میں جمع کی گئیں: 'سمفنی آف ریفلیکشنز' (2006ء) اور 'رینبو آف ریفلیکشنز' (2011ء)۔ دونوں کتابیں جہانگیر بکز لاہور نے شائع کیں۔
  • پرویز نے موسیقی پر کلام بھی کیا اور لکھا۔ ان کی کتاب کا عنوان 'میلوڈی میکرز آف دی برصغیر' میں 1950ء سے 1980ء کی دہائی تک ہندوستان اور پاکستان کے 47 میوزک کمپوزرز کا احاطہ کیا گیا ہے۔ اسے سنگ میل پبلی کیشنز، لاہور نے 2012ء میں شائع کیا تھا۔ [4]

ایوارڈز[ترمیم]

  • 1977ء میں انسٹی ٹیوشن آف انجینئرز، پاکستان کے لیے بہترین تکنیکی مقالہ لکھنے پر صدر پاکستان کی طرف سے گولڈ میڈل ایوارڈ [5]
  • ڈاکٹر اے کیو خان کو انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرز، پاکستان کی طرف سے 2009ء میں لائف ٹائم اچیومنٹ ایوارڈ [5] [8]
  • صدر پاکستان نے 2000 میں پرائیڈ آف پرفارمنس ایوارڈ دیا۔ [4]

کتابیات[ترمیم]

  • سمفنی آف ریفلیکشنز 2006ء۔ (جہانگیر کتب، لاہور) [4]
  • رینبو آف ریفلیکشنز ، جہانگیر کتب 2011ء۔
  • برصغیر کے میلوڈی میکرز ، سنگ میل پبلی کیشنز 2012ء۔ [5]
  • میلوڈی سنگرز 1 (انگریزی) سنگ میل پبلیکیشنز 2015ء
  • میلوڈی سنگرز 1 (اردو) سنگ میل پبلی کیشنز 2017ء
  • میلوڈی سنگرز 2 (انگریزی) سنگ میل پبلیکیشنز 2019ء
  • مظاہر کی قوس قزح (انڈر پرنٹ)

انتقال[ترمیم]

امجد پرویز کا انتقال لاہور پاکستان میں 3 مارچ 2024ء کو 78 سال کی عمر میں ہوا۔ اگلے دن ان کی تدفین عمل میں آئی۔ [9]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب وی آئی اے ایف آئی ڈی: https://viaf.org/viaf/41454694/ — ناشر: او سی ایل سی
  2. ^ ا ب https://dunyanews.tv/en/Entertainment/795731-Singer-Dr-Amjad-Parvez-dies — اخذ شدہ بتاریخ: 4 مارچ 2024
  3. کتب خانہ کانگریس اتھارٹی آئی ڈی: https://id.loc.gov/authorities/no98041921 — خالق: کتب خانہ کانگریس
  4. ^ ا ب پ ت ٹ REVIEWS: A potpourri of creativity Dawn (newspaper), Published 17 September 2006, Retrieved 1 July 2022
  5. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ "The present government needs to convince their parliamentarians to support construction of Kalabagh and other dams"۔ Jworld Times (magazine)۔ 1 March 2011۔ 12 جون 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اپریل 2018 
  6. ^ ا ب Arts: Learning classical music Dawn (newspaper), Published 7 August 2005, Retrieved 1 July 2022
  7. "Awards conferred upon former MD of NESPAK"۔ National Engineering Services Pakistan۔ 06 جنوری 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اپریل 2018 
  8. "Singer Dr Amjad Parvez dies"۔ Dunya News۔ 4 March 2024۔ اخذ شدہ بتاریخ 04 مارچ 2024