سید غافر رضوی چھولسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بارہ امامی شیعہ عالم
سید غافر رضوی چھولسی
سید غافر رضوی چھولسی

معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 2 جنوری 1983(1983-01-02)
تاریخ وفات باحیات
رہائش دہلی، "دارالحکومتہندوستان
قومیت
عرفیت فلکؔ چھولسی ، ضیاء الافاضل
نسل بھارتی
مذہب اسلام
فرقہ اثناعشری شیعہ
عملی زندگی
تعليم اسلامیفقہ و اصول فقہ
پیشہ عالم ؛ اسلامک ریسرچ اسکالر
ویب سائٹ
ویب سائٹ ساغر علم ؛ Saghar-e-iLm


مولانا سید غافر رضوی کا شمار پندرہویں صدی ہجری کے مفکرین، محققین، مصنفین، مترجمین، ادباء، اردو شعرا اور علمائے شیعہ میں ہوتا ہے نیز آپ سرزمین ہندوستان کے مسلم مذہبی رہنما ہیں۔ ادارہ پیام اسلام فاؤنڈیشن آپ ہی کی زیر نگرانی ترقی کے مراحل طے کر رہا ہے۔ آپ ہندوستانی اسلامی اسکالر (Indian Islamic Scholar) ہیں نیز آپ علمائے چھولس سادات میں شمار کئے جاتے ہیں۔

اجمالی خاکہ[ترمیم]

چھولس کے افق پر پندرہویں صدی ہجری کا چمکتا ستارہ[ترمیم]

مولانا موصوف کا نام نامی اسم گرامی: حجۃ الاسلام والمسلمین مولانا سید غافر حسن رضوی صاحب قبلہ۔ (Maulana Syed Ghafir Hasan Rizvi Sb. Qibla) خطاب: "ضیاء الافاضل"۔ والد گرامی کا نام: سید احسن رضا رضوی۔ وطن: ہندوستان کے دارالسلطنت "دہلی" سے پینتالیس یا پچاس کلومیٹر کے فاصلے پر سادات کی بستی "چھولس ۔ Chholas Sadat" کے نام سے معروف ہے [1]۔ موصوف کے آباؤ و اجداد ایران کے سبزہ زار شہر "سبزوار" سے ہجرت کرکے ہندوستان آئے تھے اور ان کو چھولس کا مقام پسند آیا اور اس بستی میں رہائش اختیار کی۔ موصوف کا سلسلہ نسب امام رضا علیہ السلام تک پہنچتا ہے اسی لئے ان کا فیملی نام "رضوی" ہے۔[2]۔ آپ مذہبی ادارہ پیام اسلام فاؤنڈیشن کے سیکریٹری ہیں، یہ ادارہ آپ کے بڑے بھائی مولانا سید ذاکر رضا چھولسی صاحب قبلہ نے ترویج و تشہیر انسانیت کے پیش نظر قائم کیا ہے۔


سید غافر رضوی چھولسی
سید غافر رضوی چھولسی

معلومات شخصیت
عملی زندگی
پیشہ شاعر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

تاریخ ولادت[ترمیم]

مولانا موصوف نے چھولس "Chholas Sadat" نامی سادات کی بستی میں عید کی خوشیوں کے موقع پر 21/شوال المکرم 1406ہجری (بمطابق: 02/01/1983) میں آنکھیں کھولیں۔ اس زمانہ میں چھولس کا ضلع "بلند شہر" تھا اس کے بعد یہ بستی ضلع غازی آباد میں شمار ہونے لگی اور حاضر میں اس بستی کو ضلع گوتم بدھ نگر "جس کا شارٹ کٹ جی بی نگر ہوتا ہے" یعنی نوئیڈا یا گریٹر نوئیڈا میں شمار کیا جاتا ہے۔[3] مولانا موصوف کے والدین کے بقول: مولانا کی زندگی کے ابتدائی ایام بہت نازک حالات سے گزرے اور امید زندگی کی لو مدھم پڑ چکی تھی لیکن چونکہ خداوندعالم کو ان کی ذات سے اسلام کی تبلیغ درکار تھی لہٰذا ہوا نے فانوس بن کر چراغ کی حفاظت کا ثبوت دیا۔[4]۔ اور حاضر میں مولانا میڈیا اور سوشل میڈیا کے ذریعہ دنیا بھر میں انسانیت کی ترویج کر رہے ہیں، مولانا کے خدمات کو ویب سائٹس، یوٹیوب، فیس بک، انسٹاگرام، ٹیلیگرام، واٹسیپ گروپس، ویب لاگز، ٹیوٹر وغیرہ پر ملاحظہ کیا جاسکتا ہے۔[5] [6] [7] [8]


سید غافر رضوی چھولسی
سید غافر رضوی چھولسی

معلومات شخصیت
عملی زندگی
پیشہ شاعر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

تعلیمی مراحل[ترمیم]

آپ نے ابتدائی تعلیم اپنے وطن "چھولس سادات" میں حاصل کی؛ مولانا کی ذہنیت قابل داد و تحسین ہے کہ آپ درجہ اطفال سے پانچویں کلاس تک ہمیشہ ممتاز کا درجہ حاصل کرتے رہے۔ قابل ذکر ہے کہ مولنا کو بچپن سے ہی تعلیم سے لگاؤ رہا ہے۔ مکتب امامیہ سے فارغ ہونے کے بعد "چھولس سادات" میں موجود مدرسہ جامعہ رضویہ میں اپنی تعلیم کا سلسلہ آگے بڑھایا۔ 2 فروری سنہ 2000ء میں عازم ایران ہوئے اور 4 فروری 2000ء میں قم المقدسہ ایران کی پاکیزہ سرزمین پر نزول اجلال فرمایا۔ یہ بات بھی قابل بیان ہے کہ مولنا تقریباً سترہ اٹھارہ سال کی عمر میں ایران تشریف لے گئے تھے؛ ایران میں رہتے ہوئے فارسی اور عربی زبان سے بی اے اور ایم اے فائنل کر کے اکتوبر 2017ء میں واپس اپنے وطن پلٹ آئے۔ یہ بات بھی یاد رہے کہ جب تک مولانا ایران میں رہے تو اس وقت تک اپنے تعلیمی سلسلہ کے ساتھ تحقیقی کاوشوں میں بھی مشغول رہے اور ان کی تحقیقی کاوشیں ویب سائٹس اور ہندوستان کے مشہور و معروف اخباروں میں قابل دید ہیں۔ تحقیقی کاوشوں کے علاوہ زمانہ کے تقاضوں کے پیش نظر مولانا نے ٹیلیگرام چینل پر فارسی زبان کی کلاسیں بھی رکھیں جس میں کامیابی نے قدم چومے۔ مولانا نے ایران میں رہتے ہوئے تحقیقی کاوشوں کی بابت اسناد بھی حاصل کیں۔[9] مولانا کے ایران جانے کا تذکرہ چھولس سادات سے متعلق لکھی جانے والی کتاب یادوں کی بارات میں بھی موجود ہے جس میں ان کو "غافر رضا" کے نام سے یاد کیا گیا ہے۔[10] البتہ مولانا سے گفتگو کرتے ہوئے معلوم ہوا کہ یہ انہی کا تذکرہ ہے لیکن ان کا اصلی نام "غافر حسن رضوی" ہے اور اس کتاب میں غلطی سے "رضوی" کی جگہ "رضا" لکھ دیا گیا ہے؛ اس غلط فہمی کا سبب یہ ہے کہ مولانا کے برادر بزرگ کا نام "مولانا ذاکر رضا رضوی" ہے تو اسی اعتبار سے "ذاکر رضا" کے پیش نظر "غافر رضا" لکھ دیا گیا ہے۔[11]

تبلیغی سرگرمیاں[ترمیم]

یوں تو موصوف منبر سے وعظ و نصیحت میں بھی اپنی مثال آپ ہیں لیکن منبر کے علاوہ بھی ان کا جذبہ یہ ہے کہ بشریت کو زیادہ سے زیادہ راہ راست پر لایا جائے اور جو لوگ راہ ہدایت پر ہیں ان کو اسی راہ پر گامزن رکھا جائے نیز ان کو بھٹکنے نہ دیا جائے؛ اسی مقصد کے پیشِ نظر آپ نے پیام اسلام فاؤنڈیشن کی نگرانی قبول کرتے ہوئے اسی کے ذریعہ اپنی وعظ و نصیحت کا سلسلہ جاری کیا مولانا کی کلیپس آپ کے یوٹیوب چینل پر دستیاب ہیں، آپ کی ایک کلیپ اتحاد کا حقیقی مفہوم،[12]۔ ایک کلیپ ہفتہ وحدت کے عنوان سے،[13]۔ اور ایک کلیپ معجزہ کا حقیقی مفہوم،[14]۔ جیسے عناوین سرفہرست ہیں اس کے علاوہ عزاداری کے متعلق متعدد کلیپس اسی چینل پر دستیاب ہیں۔[15]

تقریری میدان[ترمیم]

مسجد باب العلم اوکھلا وہار نئی دہلی؛ تقریر کی ایک جھلک

موصوف اردو زبان میں بہترین تقریر کرتے ہیں، متعدد بار تقریر سننے کا موقع فراہم ہوا؛ ایک مرتبہ مسجد باب العلم اوکھلا وہار (نئی دہلی) میں موصوف نے ایک نہایت عمدہ تقریر کی جس میں آپ نے فرمایا: "دہشت گردی کسی بھی مذہب میں جائز نہیں ہے؛ ہر مذہب دہشت گردی کی مخالفت کرتا ہے؛ جو لوگ دہشت گرد ہیں ان کا کسی مذہب سے کوئی تعلق نہیں ہے؛ خداوند عالم نے سب کے لئے قوانین نافذ فرمائے ہیں لہذا ہم سب کو اس کے فرامین پر عمل پیرا ہونا چاہئے"[16]

اسناد و دستاویزات[ترمیم]

موصوف نے جامعہ اردو علی گڑھ سے اردو ادب کی تمام ڈگریاں حاصل کیں یعنی ادیب سے لیکر معلم تک کی تمام اسناد لیں؛ اسی طرح الہ آباد عربی فارسی بورڈ سے آپ نے مولوی سے لیکر فاضل تک کی اسناد حاصل کیں۔ موصوف نے کون سے سنہ میں کون سی سند دریافت کی اس کی تفصیل کچھ اس طرح ہے:

عربی فارسی بورڈ الہ آباد سال جامعہ اردو علی گڑھ سال جامعۃ المصطفیٰ (ایران) سال جامعہ رضویہ سال جامعہ ملیہ دہلی سال
مولوی 1996ء ادیب 1996ء کارشناسی (بی اے فارسی) 2010ء کلاس پنجم و تحتانیہ 2000ء ایم اے فارسی 2018ء
منشی 1997ء ادیب ماہر 1997ء ارشد (ایم اے فارسی) 2017ء
عالم 1998ء ادیب کامل 1998ء عربی مکالمہ 2012ء
فاضل فقہ 2005ء معلم 2015ء

۔[17]

یہ تو مولانا کی علمی صلاحیتوں کا آشکار نمونہ ہے، مزید برآن آپ نے تحقیقی میدان میں بھی کافی اسناد حاصل کی ہیں جن میں سے جشنوارہ شیخ طوسی نامی قم المقدسہ ایران میں منعقد ہونے والا سمینار اور جامعہ ہمدرد دہلی میں معنقد ہونے والا امام رضا علیہ السلام موضوع پر عالمی سیمینار سر فہرست ہیں۔[18]

مولانا کے اساتذہ[ترمیم]

تحتانیہ اساتذہ کے اسمائے گرامی[ترمیم]

* ماسٹر ہادی حسن صاحب * ماسٹر حسن امام صاحب * ماسٹر ناظم حسین صاحب * ماسٹر منوج کمار تیوتیا

فوقانیہ اساتذہ کے اسمائے گرامی[ترمیم]

* مولانا شمشاد احمد رضوی صاحب قبلہ * مولانا مظفر حسین صاحب قبلہ * مولانا افضال حسین صاحب قبلہ * مولانا محمد مسلم صاحب قبلہ * مولانا فتحیاب صاحب قبلہ * مولانا عون محمد نقوی صاحب قبلہ
* مولانا بشارت حسین صاحب قبلہ * مولانا علی عباس حمیدی صاحب قبلہ * مولانا سلطان حسین رضوی صاحب قبلہ * مولانا علی عباس خان صاحب قبلہ * مولانا وزیر عباس صاحب قبلہ * مولانا مظاہر حیدری صاحب قبلہ

ایرانی اساتذہ کے اسمائے گرامی[ترمیم]

* مولانا مجتہدی صاحب قبلہ * مولانا نوروزی صاحب قبلہ * مولانا لالانی صاحب قبلہ * مولانا سید حسینی صاحب قبلہ (عراقی) * مولانا سید محمد صاحب قبلہ (عراقی) * مولانا ولی زادہ صاحب قبلہ
* مولانا سید جواد نقوی صاحب قبلہ (پاکستانی) * مولانا سید مہدی محمدی صاحب قبلہ * مولانا ربانی صاحب قبلہ * مولانا محمد علی مقدادی صاحب قبلہ * مولانا حسن شکوری صاحب قبلہ * مولانا حائری صاحب قبلہ

مذکورہ اساتذہ کے علاوہ بھی بہت سے اسمائے اساتذہ ہیں جو تحریر میں طول کا سبب قرار پاسکتے ہیں اسی لئے ان سے غض نظر کیا جاتا ہے۔[19]

شاعری[ترمیم]

مولانا موصوف کی شاعری اپنی مثال آپ ہے؛ آپ نے بے شمار نوحہ جات، قصائد، فضائل، مناقب، نظم، مسدس، اور مثنوی تحریر کئے۔[20] مزید بر آن مولانا موصوف کو تغزل اور غزل کے میدان میں بھی استادانہ مہارت حاصل ہے۔[21] موصوف کا ہر شعر لاجواب اور اپنی مثال آپ ہوتا ہے موصوف کی شاعری خود موصوف کی آواز میں بھی دستیاب ہے جس کے بعض ٹائٹلز میں "ادیب زمن" لکھا ہوا ملتا ہے۔[22] ۔ آپ کا شمار پندرہویں صدی ہجری کے بہترین اردو شعرا میں کیا جا سکتا ہے۔ آپ کی شاعری دیگر حضرات کی آواز میں بھی دستیاب ہے۔[23] ۔ نیز ٹیکسٹ کی صورت میں پڑھنا چاہیں تو ٹیکسٹ کی صورت میں بھی دستیاب ہے۔[24]

شاعری سے دلچسپی[ترمیم]

مولانا کو 15 سال کی عمر سے شاعری سے بے حد لگاؤ رہا، اسی لگاؤ اور دلچسپی کی تاثیر ان کے کلاموں میں آج بھی نظر آتی ہے؛ کچھ مخلصین کی گزارش کے پیش نظر آپ نے کچھ فارسی مناقب و قصائد کا اردو میں منظوم ترجمہ بھی کیا؛ ان منظوم ترجموں میں سے ایران کے مشہور و معروف منقبت خواں علی فانی کی نظم بطاھا بیاسین کا عین اسی طرز پر ترجمہ کیا جس روش پر علی فانی نے وہ کلام پڑھا؛ اس کلام کے ترجمہ کی ابتدا دسمبر 2014 میں ہوئی اور یہ ترجمہ جنوری 2015 میں مکمل ہوچکا تھا جو حال حاضر میں منظر عام پر آچکا ہے۔[25]

تخلص[ترمیم]

شاعری کے میدان میں آپ نے اپنی پہچان " فلکؔ چھولسی" سے بنائی ہے یعنی آپ کے کلاموں میں جو لکھا ہوا ٹائٹل ملتا ہے وہ کچھ اس طرح ہے "مولانا سید غافر رضوی فلکؔ چھولسی"۔[26] [27] [28] [29] البتہ جیسا کہ آپ سے انٹرویو لیتے ہوئے پتہ چلا کہ آپ نے اپنا تخلص " فلکؔ " 24 ذی الحجہ 1438 ہجری میں معین کیا ہے ورنہ اس سے پہلے آپ کا تخلص " غافرؔ " ہی تھا یہی وجہ ہے کہ آپ کے بہت سے کلاموں میں " غافرؔ " تخلص پایا جاتا ہے اور بہت سے کلاموں میں " فلکؔ " ملتا ہے۔[30]

تحقیقی کاوشیں[ترمیم]

مولانا موصوف کے آثار سے ظاہر ہے کہ آپ ایک عمدہ مؤلف، مترجم اور مقالہ نگار ہیں۔ آپ کے مضامین 2014ء سے 2016/17 تک ہندوستان کے مشہور و معروف اخباروں میں شائع ہوتے رہے ہیں، اب بھی گاہ بہ گاہ نظروں سے گزرتے رہتے ہیں۔ یوں تو موصوف کے مقالات کا شمار خود موصوف ہی کرسکتے ہیں کہ آپ نے ابتدائے شوق سے ابھی تک کتنے مقالات تحریر کئے ہیں! لیکن ان میں سے بعض مقالات کو موصوف کی وبلاگ پر ملاحظہ کیا جاسکتا ہے۔[31] [32] نیز اردو زبان کی بعض سائٹس پر بعض مقالات کا وجود پایا جاتا ہے۔[33] [34] [35] [36] موصوف نے تالیف کے میدان میں کافی حد تک کام کیا ہے، آپ نے متعدد کتابیں تالیف کی ہیں اور بہت سی کتابوں کا فارسی اور عربی زبان سے اردو میں ترجمہ کیا ہے؛ آپ کی بعض تصنیفات، تالیفات اور ترجمے آنلائن دستیاب ہوسکتے ہیں۔ موصوف کے آثار کو خود موصوف کے نام کے ذریعہ سرچ کر کے تلاش کیا جاسکتا ہے۔[37]

شجرہ چھولس سادات[ترمیم]

مولانا موصوف جہاں ایک بہترین محقق، مفکر، مضمون نگار، مقرر، مؤلف اور مترجم ہیں وہیں آپ ایک بہترین اصلاح اور نظر ثانی کرنے والوں میں بھی شمار ہوتے ہیں؛ آپ نے متعدد لوگوں کی اردو کتابوں اور متعدد فارسی مضامین کی اصلاح فرمائی ہے۔ آپ نے چھولس سادات کے شجرہ "گلستان رضویہ" جو مولانا سید ذاکر رضا چھولسی صاحب قبلہ نے آمادہ کیا ہے اس پر بھی دقت نظر کے ساتھ نظر ثانی کی ہے۔[38] ۔ اس میں کوئی دورائے نہیں کہ ہر انسان کو اپنا شجرہ یاد رکھنا ضروری ہے اسی بات کے پیش نظر یہ شجرہ آمادہ کیا گیا ہے۔ اس شجرہ کا ناشر پیام اسلام فاؤنڈیشن نامی ادارہ ہے۔ یہ شجرہ اسی ویکی پیڈیا پر بیرونی روابط میں شجرہ (چھولس سادات ۔ Shajra Chholas Sadat) کے نام سے موجود ہے شجرہ کے شوقین حضرات وہاں کلک کر کے چھولس سادات کے شجرہ کا مطالعہ کرسکتے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://afkarezia.blogspot.com/2015/09/blog-post.html
  2. http://ziaulafazil.blogfa.com/
  3. http://ziaulafazil.blogfa.com
  4. interview with Maulana's parents, 14/02/2000.
  5. http://ziaulafazil.blogfa.com
  6. http://afkarezia.blogspot.com/2015/09/blog-post.html
  7. http://ziaulafazil.blogfa.com
  8. http://payameislam.blogspot.com/p/shajra-chholas-sadat.html
  9. Interview with Maulana Ghafir Rizvi 25/11/2018
  10. Yaado'n ki Baarat; By: Jameel Akhtar Chhaulsi
  11. Interview with Maulana Ghafir Rizvi 25/11/2018
  12. https://www.youtube.com/watch?v=SkaDw7bcGlQ
  13. https://www.youtube.com/watch?v=8SMd9tjmWXU
  14. https://www.youtube.com/watch?v=4dj8q0Cntuw
  15. https://www.youtube.com/channel/UC5VcHNo1bVVdMVClR9QiIeQ
  16. Taqreer at: Babul ilm; Okhla Vihar Delhi; 16/10/2018.
  17. Interview with Maulana Ghafir Rizvi 20/03/2018
  18. https://www.youtube.com/watch?v=L13rkunKwBI
  19. Interview with Maulana Ghafir Rizvi 20/03/2018
  20. http://bazmeahlebait.blogspot.com/
  21. https://www.youtube.com/watch?v=ZWdc2H48RMI
  22. https://www.youtube.com/watch?v=r8u39XxZMzk&list=PLv5W1FffQHqXmFPMquJOnAL54WnAkTZvM&index=8
  23. https://www.youtube.com/watch?v=0UWXoHzNV0M
  24. http://bazmezia.blogspot.com/
  25. https://www.youtube.com/watch?v=_geDyu2DUkU
  26. http://ziaulafazil.blogfa.com
  27. http://bazmezia.blogspot.com
  28. https://www.youtube.com/watch?v=0UWXoHzNV0M
  29. http://bazmeahlebait.blogspot.com
  30. interview with Maulana Ghafir Rizvi, 4 February 2018
  31. http://afkarezia.blogspot.com
  32. http://ziaulafazil.blogfa.com
  33. http://www.shaoorewilayat.com/UR-Articles.aspx
  34. http://www.zainabianews.com
  35. https://www.islamtimes.org/ur/interview/534955
  36. http://educationalsocietylucknow.blogspot.com/2015/08/blog-post.html
  37. http://www.ziyaraat.net/findbook.asp
  38. http://payameislam.blogspot.com/p/shajra-chholas-sadat.html

بیرونی روابط[ترمیم]

|٭| سوانح عمری مولانا |٭| -- |٭| مولانا کا یوٹیوب چینل |٭| -- |٭| پیام اسلام |٭| -- |٭| شجرہ چھولس سادات ۔ Shajra Chholas Sadat |٭| -- |٭| بزم اھلبیت |٭| -- |٭| بزم ضیاء |٭| -- |٭| افکار ضیاء |٭| -- |٭| اخبار ضیاء |٭| -- |٭| شعور ولایت |٭|