فوزیہ وہاب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فوزیہ وہاب
رکن ایون زیریں پاکستان
مدت منصب
2008ء – 2012ء
سیکرٹری اطلاعات پاکستان پیپلز پارٹی
مدت منصب
18 مارچ 2009ء – 17 جون 2012ء
معلومات شخصیت
پیدائش 14 نومبر 1956  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
کراچی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
تاریخ وفات 17 جون 2012 (56 سال)[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
رہائش کراچی
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب اسلام
جماعت پاکستان پیپلز پارٹی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ کراچی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ سیاست دان،  اداکارہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات

فوزیہ وہاب (14 نومبر 1956ء - 17 جون 2012ء) پاکستان پیپلز پارٹی سے تعلق رکھنے والی پاکستانی سیاست دان تھیں اور ایوان زیریں پاکستان کی رکن تھیں۔ انہوں نے شیری رحمٰن کی جگہ 18 مارچ 2009ء کو پارٹی کے شریک صدر آصف علی زرداری کے حکم سے پیپلزپارٹی کی سیکرٹری اطلاعات کا عہدہ سنبھالا۔[2]

ذاتی زندگی[ترمیم]

فوزیہ 14 نومبر 1956ء کو پیدا ہوئیں اور وہ اپنے چار بہن بھائیوں میں سب سے بڑی تھیں۔ انہوں نے 1978ء میں وہاب صدیقی جو ایک صحافی اور بعید نما کے میزبان تھے، سے شادی کی۔ 14 برس تک وہ ایک گھریلو خاتون رہیں اور ان کے ہاں چار بچے پیدا ہوئے۔ حسینہ معین کے ٹیلویژن پروگرام "کہر" میں انہوں نے مشہور اداکار جنید بٹ کی رشتہ دار کا کردار ادا کیا۔ یہ ڈراما 1991-1992 میں ہدایتکار ظہیر خان نے پیش کیا۔ 1993 میں وہاب صدیقی دل کا دورہ پڑنے سے انتقال کر گئے اور یہیں سے فوزیہ کی زندگی نے ایک نیا رخ اختیار کیا۔[3] اس کے بعد فوزیہ نے ماہر امراض دل ڈاکٹر اطہر حسین سے شادی کر لی۔

سیاست[ترمیم]

فوزیہ پاکستان پیپلز پارٹی سے تعلق رکھنے والی سیاست دان تھیں۔ انہیں طالب علمی کے دنوں سے سیاست سے دلچسپی رہی وہ ترقی پسند خیالات رکھتی تھیں۔ 1993ء میں جب وزیر اعظم بینظیر بھٹو نے بلدیہ عظمیٰ کراچی کے لیے ایدھی ایئر ایمبولینس کے کپتان فہیم الزمان کو ایڈمنسٹریٹر مقرر کیا تو دیگر امور چلانے کے لیے ایک مشاورتی کمیٹی بھی تشکیل دی گئی، اس کمیٹی فوزیہ وہاب بھی شامل تھیں۔ انہی دنوں پیپلز پارٹی کی جانب سے انسانی حقوق سیل قائم کیا گیا اور فوزیہ وہاب اس کی کوآرڈینیٹر مقرر ہوئیں۔ وہ انسانی حقوق کی مقامی اور بین الاقوامی تنظیموں اور میڈیا سے رابطے میں رہیں اور اپنی جماعت کا بھرپور دفاع کرتی دکھائی دیں۔ یہ سرگرمیاں حقوقِ انسانی کے شعبے میں ان کی دلچسپی بڑھانے کی وجہ بنیں اور وہ خود انسانی حقوق کی کارکن بن گئیں۔ اسی پس منظر کے تحت وہ حدود آرڈیننس اور توہین رسالت کے قانون کے خاتمے کے لیے سرگرم رہیں۔[4] 2008ء کے انتخابات میں وہ دوسری بار خواتین کے لیے مخصوص نشست پر کامیاب ہوئیں اور جب شیری رحمان کو وفاقی وزیر اطلاعات کے عہدے سے ہٹایا گیا تو ان سے پارٹی کے شعبۂ اطلاعات کی سیکرٹری کی بھی ذمہ داری واپس لے لی گئی اور یہ ذمہ داری فوزیہ وہاب کے حصے میں آئی۔

بعد ازاں محترمہ بینظیر بھٹو نے انہیں پیپلز پارٹی شعبۂ خواتین کی سیکرٹری اطلاعات مقرر کیا اور جب 1996ء میں پیپلزپارٹی کی حکومت ختم ہو گئی تو 1997ء کے انتخابات میں انہوں نے حلقہ این اے 193 سے رکن ایوان زیریں کے امیدوار کے طور پر انتخابات میں حصہ لیا۔ یہ انتخابات پیپلز پارٹی ہار گئیں اور حزب اختلاف کے طور پر ایوان میں اپنا کردار ادا کیا۔

17 جون 2012ء میں وفات کے وقت وہ پیپلز پارٹی کی مرکزی سیکرٹری اطلاعات کے عہدے پر فائز تھیں۔

وفات[ترمیم]

فوزیہ وہاب پتہ کے مرض میں مبتلا تھیں[5] 30 مئی 2012ء کو کراچی کے او ایم آی ہسپتال میں سرجن بدر صدیقی نے ان کے پتے کی جراحی کی لیکن اس سے مسائل میں اضافہ ہو گیا اور وہ کومہ میں چلی گئیں اور انہیں انتہائی نگہداشت میں رکھا گیا۔ لیکن ان کی صحت بحال نہ ہو سکی اور بالآخر اتوار 17 جون 2012ء کو وہ وفات پا گئیں۔[6][7] پاکستان پیپلز پارٹی نے ان کی وفات پر 10 روز تک جماعتی سرگرمیاں معطل کرنے کا اعلان کیا۔[8]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://tribune.com.pk/story/395044/fauzia-wahab-slips-into-coma%7Caccessdate=17
  2. "Fauzia replaces Sherry as PPP Info Secretary"۔ Dailytimes.com.pk۔ مورخہ 2012-07-27 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-05-28۔
  3. "Leading News Resource of Pakistan"۔ Daily Times۔ مورخہ 2012-07-24 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-05-28۔
  4. بی بی سی اردو
  5. Fauzia Wahab to undergo surgery The News International, May 29, 2012
  6. Fauzia Wahab in stable condition , The News, May 30, 212
  7. Fouzia Wahab Died
  8. 10 days mourning on Fauzia Wahab death

بیرونی روابط[ترمیم]