منگولیا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں


"Монгол улс
منگولیا"
منگولیا کا پرچم منگولیا کا قومی نشان
پرچم قومی نشان
شعار: ندارد
ترانہ: Бүгд Найрамдах Монгол
منگولیا کا محل وقوع
دارالحکومت اولان‌ باتور
عظیم ترین شہر اولان‌ باتور
دفتری زبان(یں) منگولیائی
نظامِ حکومت
صدر
وزیرِ اعظم
جمہوریہ (نیم صدارتی نظام)
نامبرین اینخبایار
سنجاگین بایار
آزادی
- قیام
عوامی جمہوریہ
چین سے
1206ء
24 نومبر 1924ء
رقبہ
 - کل
 
 - پانی (%)
 
1564116  مربع کلومیٹر (19)
603909 مربع میل
0.6
آبادی
 - تخمینہ:2007ء
 - 2000 مردم شماری
 - کثافتِ آبادی
 
2,629,000 (138)
2407500
1.7 فی مربع کلومیٹر(238)
4 فی مربع میل
خام ملکی پیداوار
     (م۔ق۔خ۔)

 - مجموعی
 - فی کس
تخمینہ: 2007ء

8.448 ارب بین الاقوامی ڈالر (146 واں)
2900 بین الاقوامی ڈالر (128 واں)
انسانی ترقیاتی اشاریہ
   (تخمینہ: 2007ء)
0.7
(114) – متوسط
سکہ رائج الوقت توگرک (MNT)
منطقۂ وقت
 - عمومی
۔ موسمِ گرما (د۔ب۔و)

(یو۔ٹی۔سی۔ 8)
غیر مستعمل (یو۔ٹی۔سی۔ 8)
انٹرنیٹ ڈومین .mn
کالنگ کوڈ +976

منگولیا ایشیا میں واقع ایک ملک ہے۔ منگولیا چین اور روس کے درمیان ایک زمین بند ملک ہے.اس کے شمال کی جانب روس اور جنوب کی جانب چین واقع ہے۔. دارالحکومت اور سب سے بڑا اولان‌ باتور شہر ہے، ماضی میں اس شہر کو اولان تبور کہتے تھے۔ ملک کی آبادی کا 38٪ اسی شہر میں رہتی ہے۔ منگولیا کا سیاسی نظام پارلیمانی جمہوریہ ہے. ملک کے زیادہ تر لوگ بدھ مت کے پیروکار ہیں. ان میں سے بہت سے لوگوں نے خانہ بدوش ہیں، لیکن یہ لوگ اب تبدیل ہو رہے ہیں. ملک کے شمالی اور مشرقی حصوں میں بہت سے پہاڑ ہیں. جنوبی حصے میں صحرائے گوبی ہے. رقبے کے لحاظ سے دنیا کا 18واں سب سے بڑا ملک ہے۔ جرائم کی شرح اور رات کی زندگی بہت کم ہیں. ان کی زبان منگول ہے، لیکن کچھ انگریزی، چینی اور روسی بھی جانتے ہیں۔ منگولیا کی آبادی کی کثافت دنیا میں سب سے کم ہے۔

تاریخ[ترمیم]

منگولیا پر بہت سے نامور بادشاہوں نے حکومت کی ہے . 1206ء میں چنگیز خان نے منگولیا پر حکومت کی 16 ویں صدی کے آخر میں بدھ مت مذہب یہاں پر پھیل گیا. 17 ویں صدی کے آخر میں منگولیا راجونش خاندان کی حکمرانی میں چلا گیا جب 1911ء میں منگولیا نے آزادی کا اعلان کیا تو انہیں آزادی کے لیے بادشاہوں سے لڑنا پڑا جس میں سوویت یونین نے ان کی مدد کی. 1921ء میں دنیا نے منگولیا کو آزاد ملک تسلیم کر لیا. منگولیا اب بھی بنیادی طور پر دیہی ہے. منگولیا میں ریڈ کراس سوسائٹی 1939ء میں قائم کیا گیا . اس کے ہیڈ کوارٹر اولان‌ باتور میں قائم ہیں۔ 1939ء سوویت یونین کے خاتمے پر روس کی منگولیا میں دلچسپی ختم ہو گئی جو اس سے قبل منگولیا میں دلچسپی دکھا رہا تھا۔ اب چین اور جنوبی کوریا منگولیا کے کے ساتھ تجارت کو شعبے میں دلچسپی دکھا رہے ہیں۔

آب و ہوا[ترمیم]

منگولیا کی آب و ہوا شدید قسم کی ہے. موسم سرما بہت سرد اور موسم گرما معتدل ہوتا ہے۔ حال ہی میں سردیوں میں بہت سردی ہو گئی تھی جس نے بہت سے لوگوں اور جانوروں کوموت کے منہ میں دھکیل دیا۔ 2008 کے برفانی طوفان میں 52 افراد مارے گئے متعدد زخمی ہوئے اس کے ساتھ 2 لاکھ مویشی بھی سردی کی وجہ سے مر گئے۔ ایک بھاری مٹی کا طوفان کو شمال مشرقی چین اور منگولیا کے مختلف حصوں میں یکم مارچ کو شروع ہوا جو 4 مارچ کو شمالی اور جنوبی کوریا کے حصون میں جا کر ختم ہوا۔ 8 مئی 2008 کو ایک برفانی طوفان میں 21 لوگ مارے گئے اس طوفان میں اندرونی منگولیا کے بھی کچھ حصوں کو نقصان پہنچا۔ اپریل 2010 میں منگولیا میں درجہ حرارت -50 ڈگری سینٹی گریڈ تک پہنچ گیا۔ منگولیا میں سردیوں کا موسم بہت سخت اور طویل ہوتا ہے ہر سال سردیوں میں بہت سا جانی و مالی نقصان ہوتا ہے۔

صوبے[ترمیم]

  • ارخانگی
  • بےآن اولگی
  • بےآن خونگور
  • بلغان
  • درکان-اُل
  • دورنود
  • دورنوگوی
  • دندوگوی
  • گووی التائی
  • گووی سمبر
  • کھینتی
  • خوود
  • خووسگول
  • اومنوگووی
  • اورخون
  • اورخون گائی
  • سیلینج
  • سک باتار
  • توو
  • اُوس
  • زوکھان

متعلقہ مضامین منگولیا[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

General sources[ترمیم]

Notes[ترمیم]

Incomplete-document-purple.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کرکے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔