مندرجات کا رخ کریں

پیلی بھیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے

पीलीभीत
پیلی بھیت/ ਪੀਲੀਭੀਤ
ضلعی صدرمقام
ملک بھارت
ریاستاتر پردیش
خطّہروہیل کھنڈ
ڈویژنبریلی ڈویژن
ضلعپیلی بھٹ
متناسقات52 وارڈ
آبادیاوآخر 15ویں صدی
قائم ازرحمت خاں روہیلہ
حکومت
 • مجلسپیلی بھٹ نگر پالیکہ پریساد
 • چیئرمینپرابھٹ جیسوال
 • MPورن گاندھی
 • MLAریاض احمد
رقبہ
 • کل47 کلومیٹر2 (18 میل مربع)
بلندی172 میل (564 فٹ)
آبادی (2011)
 • کل2,037,225
 • کثافت559/کلومیٹر2 (1,450/میل مربع)
زبانیں
 • دفتریہندی، اردو، انگریزی، پنجابی زبان
منطقۂ وقتبھارتی معیاری وقت (UTC+5:30)
ڈاک اشاریہ رمز262001
رمز ٹیلی فون05882
آیزو 3166 رمزآیزو 3166-2:IN
گاڑی کی نمبر پلیٹUP-26
کوسٹ لائن0 کلومیٹر (0 میل)
انسانی جنسی تناسب889 مذکر/مؤنث
خواندگی63.58%
نمائندہ شہرپیلی بھٹ نگر پالیکہ پریساد
دہلی سے فاصلہ274 کلومیٹر (170 میل) NW (زمینی)
لکھنؤ سے فاصلہ270 کلومیٹر (170 میل) SE (زمینی)
حاکم عملہحکومتِ اُترپردیش
حکومت ہند
آب و ہواHS-TH (کوپن)
عمل ترسیب780 ملیمیٹر (31 انچ)
اوسط سالانہ درجہ حرارت25.5 °C (77.9 °F)
اوسط گرمائی درجہ حرارت36.8 °C (98.2 °F)
اوسط سرمائی درجہ حرارت14.5 °C (58.1 °F)
لفظ ”پیلی بھٹ“ کا مطلب ”نارنجی مٹی کی دیوار“ ہے۔

پیلی بھیت (انگریزی: Pilibhit) پیلی بھیت ہندوستان کی ریاست اترپردیش کے پیلی بھیت ضلع کا ایک شہر اور میونسپل بورڈ ہے۔ پیلی بھیت بریلی ڈویژن کا شمال مشرقی ضلع ہے، جو نیپال کی سرحد پر شیوالک سلسلے کے دامن کے ساتھ ذیلی ہمالیائی سطح مرتفع پٹی کے روہیل کھنڈ علاقے میں واقع ہے۔ یہ دریائے گومتی کا ماخذ اور جنگلات سے مالا مال ہے۔ شمالی ہندوستان کے علاقے پیلی بھیت کو بانسری نگری کے نام سے بھی جانا جاتا تھا کیونکہ یہاں بانسری بڑے پیمانے پر بنائی اور برآمد کی جاتی تھی ۔ حکومت ہند کی طرف سے جاری کردہ ایک رپورٹ کے مطابق پیلی بھیت ہندوستان کے اقلیتی مرتکز علاقوں میں سے ایک ہے ۔[1]

تاریخ[ترمیم]

مقامی لوگوں کا خیال ہے کہ پیلی بھیت پر ایک قدیم بادشاہ میوردھواج یا موردھواج یا بادشاہ وینو کی حکومت تھی، جو بھگوان کرشن کا بہت بڑا عقیدت مند اور ارجن کا وفادار دوست تھا۔ بادشاہ وینو کا نام اور اس کی سلطنت کا جغرافیہ مہابھارت میں موجود ہے۔


شہر پیلی بھیت مغل دور میں بریلی صوبہ کے تحت ایک انتظامی اکائی تھا۔ تحفظ کے لیے مغل صوبیدار علی محمد خان نے 1734 عیسوی میں انتظامی عمارت کے چاروں طرف چار شاندار دروازے تعمیر کروائے تھے۔ ان دروازوں کو مغرب میں بریلوی دروازہ، مشرق میں حسینی دروازہ، شمال میں جہان آبادی دروازہ اور جنوب میں دکھنی دروازہ کا نام دیا گیا۔ مناسب دیکھ بھال کی کمی کی وجہ سے تمام دروازے تباہ ہو چکے ہیں صرف ان کے کھنڈر باقی ہیں۔


ڈوٹی، نیپال کے شاہ خاندان کے آخری بادشاہ پرتھیوی پتی شاہ کو نیپال کے گورکھا بادشاہ کے حملے کے بعد 1789 عیسوی میں رام پور کے حاکم فیض اللہ خان نے پیلی بھیت میں پناہ دی تھی۔

آزادی کے جنگجو مولانا عنایت اللہ نے پیلی بھیت سے رضاکارانہ طور پر اودھ کی جلاوطن ملکہ بیگم حضرت محل کی میزبانی کی، جو 1859 کے آخر میں نیپال پہنچی تھیں۔

تفصیلات[ترمیم]

پیلی بھیت کا رقبہ 47 مربع کلومیٹر ہے اور اس کی مجموعی آبادی 2,037,225 افراد پر مشتمل ہے اور 172 میٹر سطح دریا سے بلندی پر واقع ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. انگریزی ویکیپیڈیا کے مشارکین۔ "Pilibhit"