اظہر محمود

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اظہر محمود ٹیسٹ کیپ نمبر 146
Azher mehmood.jpeg
ذاتی معلومات
مکمل ناماظہر محمود ساگر
بلے بازیدائيں ہاتھ سے
گیند بازیدائيں فاسٹ میڈیم
حیثیتباؤلر
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 146)6 اکتوبر 1997  بمقابلہ  جنوبی افریقہ
آخری ٹیسٹ31 مئی 2001  بمقابلہ  انگلینڈ
پہلا ایک روزہ (کیپ 108)16 ستمبر 1996  بمقابلہ  بھارت
آخری ایک روزہ17 مارچ 2007  بمقابلہ  آئرلینڈ
قومی کرکٹ
سالٹیم
1993/94–2006/07اسلام آباد کرکٹ ٹیم
1995/96–1996/97یونائیٹڈ بینک لمیٹڈ کرکٹ ٹیم
1998/99–2004/05راولپنڈی کرکٹ ٹیم
1999/00–2001/02پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز
2002–2007; 2013–2016سرئے
2006/07–2010/11حبیب بینک لمیٹڈ کرکٹ ٹیم
2006/07–2010/11اسلام آباد لیپرڈز
2008–2012کینٹ
2011/12–2012/13 آکلینڈ
2012ڈھاکہ گلیڈی ایٹرز
2012–2013پنجاب کنگز
2012/13سڈنی تھنڈر
2013باریسل برنرز
2013کیپ کوبراز
2013بارباڈوس ٹرائیڈنٹس
2015کولکاتا نائٹ رائیڈرز
2016اسلام آباد یونائیٹڈ
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ فرسٹ کلاس ايک روزہ ٹيسٹ
میچ 175 143 21
رنز بنائے 7654 1521 900
بیٹنگ اوسط 31،89 18،10 30،00
سنچریاں/ففٹیاں 9 / 42 -- / 3 3 / 1
ٹاپ اسکور 204 67 136
گیندیں کرائیں 29672 6242 3015
وکٹیں 609 123 39
بولنگ اوسط 25،06 39،13 35،94
اننگز میں 5 وکٹ 27 3 0
میچ میں 10 وکٹ 3 -- 0
بہترین بولنگ 8/61 6/18 4/50
کیچ/سٹمپ 141 / -- 37 / -- -- / 14
ماخذ: [1]، 16 مارچ 2012

اظہرمحمود ساگر (پیدائش:28 فروری 1975ء راولپنڈی،پنجاب) نے اپنے کریئر کا آغاز جنوبی افریقا کے خلاف تین سنچریاں بنا کر کیا۔ وہ جلد ہی ایک روزہ میچوں میں پاکستانی ٹیم کا ایک اہم رکن بن گئے۔ عبدالرزاق کے آنے سے اُن کے کیریئر کا جلد ہی ختم ہو گیا مگر وہ انگلینڈ میں کاونٹی کرکٹ کھیلتے رہے۔ وہ داِئیں ہاتھ کے ایک بلےباز اور دائیں ہاتھ ہی کےمیڈیم فاسٹ باولر تھے۔

اظہر محمود (پیدائش: 28 فروری 1975) ایک پاکستانی کرکٹ کوچ اور سابق کرکٹر ہیں۔ وہ 2019 تک پاکستانی قومی کرکٹ ٹیم کے باؤلنگ کوچ تھے۔ اس سے قبل، انہوں نے انگلینڈ میں پاکستان کی قومی کرکٹ ٹیم اور کاؤنٹی کرکٹ کے لیے ٹیسٹ اور ون ڈے کھیلے۔ اظہر دوہری برطانوی شہری ہے۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

اظہر محمود کی شادی کی تقریب 2003 میں ہوئی تھی۔ اس کی بیوی برطانوی ہے۔

گھریلو کیریئر[ترمیم]

ایک نوجوان کے طور پر، اظہر کی تربیت عرفان بھٹی نے کی جنہوں نے 1990 کی دہائی کے اوائل میں پاکستان کے لیے ایک روزہ بین الاقوامی کھیلا۔ اصل میں ان کے والد نے کرکٹ میں ان کی دلچسپی پر اعتراض کیا، لیکن بعد میں ان کے کارناموں کو دیکھ کر اس کی تعریف کرنا شروع کر دی۔ جب نیٹ پریکٹس نہیں کرتے تھے تو اظہر اپنے گھر کے سامنے کرکٹ گراؤنڈ میں سیمنٹ کی پچ پر ٹیپ بال کرکٹ کھیلنا پسند کرتے تھے۔ انھوں نے سرے کے لیے کاؤنٹی کرکٹ کھیلی اور نومبر 2007 میں کینٹ کے لیے کھیلنے کے لیے دو سال کا معاہدہ کیا۔ 2011 میں ایک برطانوی شہری بن گیا۔ اس نے اسے انگلش کوالیفائیڈ کھلاڑی کے طور پر کینٹ کے لیے کھیلنے کی اجازت دی، جس سے وہ خود کو پاکستانی ٹیم میں واپس بلانے سے مزید دور ہو گیا۔ 2011/12 کے سیزن میں۔ 2012 کی آئی پی ایل نیلامی میں، محمود کو کنگز الیون پنجاب کو 200,000 ڈالر میں فروخت کیا گیا، جو اس کی بنیادی قیمت $100,000 سے دگنی تھی۔ 2015 میں، انہیں KKR نے جیمز نیشم کے متبادل کے طور پر سائن کیا اور کچھ میچ کھیلے لیکن اگلے ہی سیزن میں انہیں اسکواڈ سے ڈراپ کر دیا گیا۔ اس نے اسورو اڑانا کے ساتھ مل کر تمام قسم کے T20 میں آٹھویں وکٹ کی سب سے زیادہ شراکت قائم کی (120)۔ 2012 میں افتتاحی SLPL لیگ۔

ابتدائی ایام[ترمیم]

اظہر نے 1996 میں ٹورنٹو کرکٹ کلب، ٹورنٹو میں بھارت کے خلاف ایک روزہ بین الاقوامی کرکٹ کا آغاز کیا، لیکن اگلے سال راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم، راولپنڈی میں جنوبی افریقہ کے خلاف اپنے ٹیسٹ ڈیبیو تک اس نے بڑی پہچان حاصل نہیں کی جب انہوں نے نصف سنچری بنائی۔ آؤٹ کیے بغیر سنچری بعد میں اس نے جنوبی افریقیوں کے خلاف مزید دو سنچریاں اسکور کیں۔ وہ بنیادی طور پر ایک میڈیم پیسر کے طور پر پاکستانی ٹیم میں شامل ہوئے لیکن انہوں نے اپنی بلے بازی کی طاقت سے بہت سے لوگوں کو حیران کر دیا۔ ان کی ہارڈ ہٹ لیکن آرتھوڈوکس بلے بازی کی مہارت بھی ایک روزہ کھیل میں انتہائی کارآمد رہی ہے۔ زیادہ تر پاکستانی تیز گیند بازوں کے برعکس جو سوئنگ باؤلرز ہیں، وہ انگلش طرز کا ایک کارآمد سیم باؤلر ہے، جو ضرورت کے وقت وکٹیں لے سکتا ہے۔ 2000 میں پی سی بی کے اس وقت کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل توقیر ضیاء نے کہا کہ بورڈ ان کا انتخاب کرے گا۔ اگلا کپتان - صرف سنیارٹی کی بنیاد پر نہیں - اور اگر لوگوں کو انتخاب ناقابل قبول لگتا ہے تو انہیں منتخب نہیں کیا جائے گا۔ بعد میں – کچھ سینئر کھلاڑیوں کے سامنے – انہوں نے اظہر محمود کو بتایا کہ وہ پاکستان کے اگلے کپتان ہوں گے۔ مل کر مستقبل کی حکمت عملی طے کریں گے۔ لیکن آج تک ایسا کبھی نہیں ہوا۔

واپسی[ترمیم]

انہیں 2007 کے اوائل میں جنوبی افریقہ کے خلاف ون ڈے سیریز کے لیے قومی ٹیم میں واپس بلایا گیا تھا، لیکن بعد میں جب 2007 کے کرکٹ ورلڈ کپ کی ٹیم کا اعلان کیا گیا تو وہ ٹیم سے باہر ہو گئے۔ تاہم عبدالرزاق کے گھٹنے کی انجری کے بعد انہیں ٹیم کے ساتھ ویسٹ انڈیز جانے کے لیے واپس بلایا گیا تھا۔ یہ محمود کا تیسرا ورلڈ کپ تھا۔ تاہم، ایک پریکٹس میچ کھیلنے کے علاوہ، اظہر کو ورلڈ کپ میں شرکت کا موقع نہیں ملا اور پاکستان کے ٹورنامنٹ سے جلد باہر ہونے کا مطلب یہ تھا کہ وہ ایک بار پھر، ورلڈ کپ سے باہر ہونے کی قطار میں ہیں۔ قومی اسکواڈ. ان کے اخراج کے بعد، اظہر برطانیہ میں کاؤنٹی کرکٹ کھیلنے کے لیے واپس آئے۔ کئی سالوں کے دوران پاکستانی اسکواڈ سے مسلسل اخراج اور اس حقیقت کی وجہ سے کہ اس نے 30 سال کا ہندسہ عبور کر لیا ہے، ایسا لگتا ہے کہ محمود پاکستانی لائن اپ میں واپس آنے میں اتنی دلچسپی نہیں رکھتے جیسا کہ وہ پہلے تھے۔ اس کے وزن میں اضافہ، ون ڈے میں معمولی کارکردگی، سب کے لیے سخت مقابلے کے ساتھ مل کر

حوالہ جات[ترمیم]