محمد اجتبا ندوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد اجتبا ندوی
محمد اجتبا ندوی.jpg

معلومات شخصیت
پیدائش 29 ستمبر 1933(1933-09-29)
مجھوامیر ، بستی ، برطانوی ہند
وفات 20 جون 2008(2008-60-20) (عمر  74 سال)
نئی دہلی
شہریت Flag of India.svg ہندوستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
عملی زندگی
مادر علمی
کارہائے نمایاں أبو الحسن علي الحسني الندوي: الداعية الحكيم والمربي الجليل، تاریخ فکر اسلامی
P literature.svg باب ادب

محمد اجتبا ندوی (29 ستمبر 1933 - 20 جون 2008) ایک بھارتی عالم تھے، جو جامعہ ملیہ اسلامیہ، جامعہ کشمیر اور جامعہ الٰہ آباد کے عربی شعبوں کے سابق صدر تھے۔

بستی میں 1933ء کو پیدا ہوئے، ان کی تعلیم دار العلوم ندوۃ العلماء، جامعہ دمشق اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ہوئی تھی، وہ عربی و اردو زبان کی کتابوں کے مصنف تھے۔ ان کی تصانیف میں أبو الحسن علي الحسني الندوي: الداعية الحكيم والمربي الجليل اور اسلام اور حقوقِ انسانی شامل ہیں۔ 20 جون 2008ء کو نئی دہلی میں ان کا انتقال ہوا۔

ذاتی زندگی و تعلیم[ترمیم]

اجتبا ندوی کے دادا سید جعفر علی نقوی؛ سید احمد شہید کے شاگرد تھے۔[1] ان کے دادا نے 1831ء میں بالاکوٹ کی جنگ میں حصہ لیا تھا اور بعد میں بستی، اترپردیش منتقل ہوگئے تھے۔[1] اجتبا ندوی 29 ستمبر 1933 کو بستی ضلع میں واقع گاؤں مجھوامیر میں پیدا ہوئے تھے۔[2] انھوں نے دارالعلوم ندوۃ العلماء سے تعلیم حاصل کرنا شروع کیا اور سن 1955ء میں روایتی "درس نظامی" میں فراغت حاصل کی۔[1] اجتبا ندوی نے 1960ء میں جامعہ دمشق سے عربی ادب میں بی اے کی ڈگری حاصل کی۔[2][1] انھوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ایم اے (1964) اور پی ایچ ڈی (1976) حاصل کیا۔[2][3] ان کے اساتذہ میں مصطفی السباعی ، حسن حبنکہ ، علی الطنطاوی ، ابو الحسن علی حسنی ندوی اور محمد رابع حسنی ندوی شامل ہیں۔[3][4]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

اجتبا ندوی کو 1960ء میں دار العلوم ندوۃ العلماء میں عربی زبان و ادب اور اسلامی فقہ کے استاد مقرر کیے گئے تھے۔[2] 1965 میں ، اس نے جامعہ ملیہ اسلامیہ [ا] کے اس وقت کے شعبہ عربی ، ایرانی اور اسلامی علوم میں فیکلٹی ممبر کی حیثیت سے شمولیت اختیار کی اور بعد میں ایسوسی ایٹ پروفیسر اور پھر ہیڈ پروفیسر بن گئے۔[2]

1979ء میں اجتبا ندوی کو امام محمد بن سعود اسلامی یونیورسٹی میں ایسوسی ایٹ پروفیسر کے طور پر مقرر کیا گیا تھا۔ انھوں نے 1987ء تک جامعہ اسلامیہ، مدینہ منورہ میں تعلیم دی اور 1987ء میں ہندوستان واپس آئے۔[2] انھوں نے 1988ء میں جامعہ کشمیر کے عربی شعبہ میں ہیڈ پروفیسر کی حیثیت سے شمولیت سے قبل قلیل مدت کے لیے جامعۃ الہدایہ جے پور کے مہتمم کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔[2] بعد میں وہ مارچ 1990ء کو جامعہ الٰہ آباد کے عربی شعبہ میں ہیڈ پروفیسر بن گئے ، جہاں سے وہ 30 جون 1994 کو ریٹائر ہوئے۔[2]

اجتبا ندوی ورلڈ لیگ آف اسلامک لٹریچر ( رابطہ ادب اسلامی ) کے بانی ممبروں میں شامل تھے اور ہندوستان میں اس کی شاخ کے صدر کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔[2] وہ ندوۃ العلماء کی مجلس شورٰی کے رکن بھی تھے۔[2] انھوں نے عربی زبان و ادب اور اسلامی تعلیمات کی تحقیق اور ترجمہ میں مدد فراہم کرنے کا ارادہ رکھتے ہوئے نئی دہلی میں "مرکز علمی" کی بنیاد رکھی۔[2]

قلمی خدمات[ترمیم]

اجتبا ندوی کی بعض کتابوں کے نام درج ذیل ہیں:

  • الأمير سيد صديق حسن خان: حياته و آثاره (ترجمہ نواب صدیق حسن خان کے علمی و ادبی کارنامے)
  • أبو الحسن علي الحسني الندوي: الداعية الحكيم والمربي الجليل (ترجمہ مولانا ابو الحسن علی ندوی بہ حیثیت ادیب اور داعی)
  • الشيخ أحمد بن عبدالرحيم المعروف بالشاه ولي الله الدهلوي (ترجمہ امام ولی اللہ دہلوی اور ان کے علمی کارنامے)
  • التعبير و المحادثة
  • عورت اسلام کی نظر میں
  • اسلام اور حقوقِ انسانی
  • نقوشِ تابندہ
  • تاریخ فکر اسلامی[8]

اعزازات[ترمیم]

وفات و وراثت[ترمیم]

اجتبا ندوی 20 جون 2008ء کو نئی دہلی میں دل کی سرجری کے بعد انتقال کر گئے۔ انھیں جامعہ ملیہ اسلامیہ قبرستان میں سپرد خاک کیا گیا۔[2] محمد ادریس نے لکھا "Contribution of Dr Muhammad Ijteba Nadwi to Arabic Literature" ("ڈاکٹر محمد اجتبا ندوی کی عربی ادب میں شراکت")[9]اور قاسم عادل نے لکھا "Dr. Ijteba Nadwi: A Great Scholar of 20th Century in India." ("ڈاکٹر اجتبا ندوی: ہندوستان میں 20 ویں صدی کے ایک بہت بڑے عالم[10]

حواشی[ترمیم]

  1. جامعہ ملیہ اسلامیہ کی سرکاری ویب سائٹ کے مطابق 1988 میں ان محکموں کو "شعبہ عربی"،[5] "شعبہ اسلامیات"[6] اور "شعبہ فارسی" میں تبدیل کردیا گیا [7]۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت "Condolence ceremony held in the Darul Uloom Nadwatul Ulama after the demise of Professor Ijteba Nadwi". تعمیر حیات. 45 (15): 31. 
  2. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ "سید اجتبا ندوی کا سوانحی خاکہ"، التعبیر و المحادثہ (عربی میں) 
  3. ^ ا ب "The demise of Mawlana Sayyid Muhammad Ijteba Nadwi". Tameer-e-Hayat, Lucknow. 45 (15): 30. 
  4. AHMED، MOBAROK. "Disciples of Rabey Hasani Nadwi". A study on Arabic prose writers in India with special reference to Maulana Muhammad Rabey Hasani Nadwi (PDF). Gauhati University. صفحات 150–151. [مردہ ربط]
  5. "Department of Arabic of JMI". Jamia Millia Islamia. اخذ شدہ بتاریخ 26 ستمبر 2020. 
  6. "The department of Islamic Studies of JMI". Jamia Millia Islamia. اخذ شدہ بتاریخ 26 ستمبر 2020. 
  7. "The Persian department of JMI". Jamia Millia Islamia. اخذ شدہ بتاریخ 26 ستمبر 2020. 
  8. نور عالم خلیل امینی، پس مرگ زندہ، صفحات 820–821 
  9. قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان. "NCPUL SANCTION ORDER" (PDF). urducouncil.nic.in. صفحہ 54. اخذ شدہ بتاریخ 03 اپریل 2020. 
  10. "Revised Self study Report, May-2016" (PDF). zakirhusaindelhicollege.ac.in. ذاکر حسین دہلی کالج. صفحہ 224. اخذ شدہ بتاریخ 03 اپریل 2020. 

کتابیات[ترمیم]