پیل وفد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
روداد از شاہی وفد برائے فلسطین
PeelMap.png
پیل وفد کا تقسیمی منصوبہ , جولائی 1937ء
تاریخجولائی 1937ء
توثیق7 جولائی 1937ء [1]
مقصدتحقیات برائے وجوہات 1936 فلسطینی عرب بغاوت

پیل وفد، جو باضابطہ طور پر فلسطین رائل کمیشن کے نام سے جانا جاتا ہے، تحقیقات کا ایک برطانوی شاہی وفد تھا ، جو لارڈ پیل کی سربراہی میں ، 1936ء میں برطانوی زیر انتظام انتداب فلسطین میں بدامنی کی وجوہات کی تحقیقات کے لئے مقرر کیا گیا تھا، ،جسے چھ ماہ طویل انتداب فلسطین میں عام ہڑتال، کے بعد تشکیل دیا گیا تھا۔

7 جولائی 1937ء کو ، کمیشن نے ایک رپورٹ شائع کی جس میں ، پہلی بار کہا گیا کہ جمعیت اقوام حکمنامہ ناقابل عمل بن ہوگیا ہے اور تقسیم کی سفارش کی گئی ۔ [2] برطانوی کابینہ نے تقسیم کے منصوبے کی اصولی طور پر توثیق کی، لیکن مزید معلومات کی بھی درخواست کی۔ [3] اشاعت کے بعد، 1938ء میں وڈہیڈوفد مقرر کیا گیا تاکہ اس کی تفصیلات سے جانچ اور تقسیم کے اصل منصوبے کی سفارشات مرتب کی جاسکیں۔

عربوں نے تقسیم کے منصوبے کی مخالفت کی اور اس کی متفقہ مذمت کی۔ [4] اعلی عرب کمیٹی نے یہودی ریاست کے نظریے[5] کی مخالفت کی اور "تمام جائز یہودی و دیگر اقلیتی حقوق کے تحفظ اور معقول برطانوی مفادات کے تحفظ " سمیت فلسطین کی آزاد ریاست کا مطالبہ کردیا ۔ [6] انہوں نے تمام یہودی نقل مکانی اور زمینی خریداری ختم کرنے کا مطالبہ بھی کیا۔ ان کا مؤقف تھا کہ یہودی ریاست کی تشکیل اور آزاد فلسطین کا فقدان برطانیہ کا اپنے قول سے انحراف و دھوکہ ہے۔ [3] [7]

اس منصوبے پر صہیونی قیادت تلخی سے تقسیم ہوگئ تھی۔ [5] صہیونی کانگریس میں 1937ء میں منظور کی گئی ایک قرارداد میں، مندوبین نے تقسیم کے مخصوص منصوبے کو مسترد کردیا۔ تاہم خیال کیا جاتا ہے کہ تقسیم کے اصول کو عام طور پر کسی بڑے دھڑے نے "قبول" یا "مسترد نہیں کیا" تھا: مندوبین نے آئندہ کے مذاکرات کے لئے قیادت کو اختیار دیا۔ [8] [9] [10] یہودی ایجنسی کونسل نے بعد ازاں درخواست منسلک کی کہ غیر منقسم فلسطین کے معاملے پر پُرامن تصفیہ کی تلاش میں ایک کانفرنس بلائی جائے۔ بینی مورس کے مطابق، بین گوریون اور ویزمان نے اسے 'مزید توسیع اور پورے فلسطین پر حتمی قبضے کے لئے پہلا قدم قرار دیا۔' [11]

تاریخ[ترمیم]

فلسطین شاہی وفد کی روداد Cmd 5479

یہ وفد روزافزوں بڑھتے ہوئے عرب یہودی تشدد کے وقت قائم کیا گیا تھا۔ سن 1936ء کی عرب یہود جھڑپیں شروع ہوئیں اور تین سال تک جاری رہیں۔ 11 نومبر 1936ء کو ، کمیشن بغاوت کی وجوہات کی تحقیقات کے لئے فلسطین پہنچا۔ اس کمیشن پر فسادات کی وجوہ کا تعین کرنے اور دونوں فریقوں کی شکایات پر فیصلہ کرنے کا الزام عائد کیا گیا ۔ کھائیم ویزمان نے یہود کی جانب سے ایک تقریر کی۔ 25 نومبر 1936ء کو پیل کمیشن کے سامنے گواہی دیتے ہوئے ، ویزمان نے کہا کہ یورپ میں ساٹھ لاکھ یہودی موجود ہیں ... "جن کے لئے دنیا ان جگہوں میں منقسم ہے جہاں وہ جی نہیں سکتے ہیں اور جہاں وہ داخل نہیں ہوسکتے ہیں۔"

یروشلم کے مفتی ، حاجی امین الحسینی ، نے کمیشن کے سامنے گواہی دیتے ہوئے یہود کے ساتھ عرب سرزمین کی کسی بھی تقسیم کی مخالفت کی۔ انہوں نے یہودی نقل مکانی کو مکمل طور پر بند کرنے کا مطالبہ کیا۔ اگرچہ عربوں نے باضابطہ طور پر وفد کا مقاطعہ(بائیکاٹ)جاری رکھا ، تاہم ویزمان کے دعوے کا فوری جواب دینے کی قطعیت و ناگزیریت کا احساس پیدا ہوا۔ یروشلم کے سابق ناظم راغب بے النشاشبی - جو اندرونی فلسطینی میدان میں مفتی کے حریف تھے، اس طرح بےضابطہ ذرائع سے عرب نقطہ نظر کی وضاحت کے لئے بھیجا گیا۔[حوالہ درکار]

1981ء میں یہ انکشاف ہوا کہ یہودی ایجنسی کے سیاسی شعبہ کے اعلی مختارکار نے اس کمرے میں مائکروفون نصب کیے تھے جس میں وفد اجلاس کررہا تھا اور بن گوریان کیمرے میں رکھے شواہد کی نقلیں پڑھنے کے قابل تھے۔

نتائج[ترمیم]

لارڈ پیل ، 1936ء
کھائیم ویزمان ثبوت دیتے ہوئے

پچھلے سال شروع ہونے والی عرب بغاوت کی وجوہات کو یوں بیان کیا گیا کہ

"عربوں کی آزادی کی تمنا اور فلسطین میں یہودی قومی وطن کے قیام کی مخالفت، عربوں میں یہودی تسلط کے خوف میں عجلت کی وجہ بنی۔ عراق، اردن پار، مصر، شام اور لبنان کی حصول آزادی فلسطینی عربی رائے پر اثر انداز وجوہات میں سے ایک وجہ تھی۔ وسطی اور مشرقی یورپ سے فرار ہونے والے یہودی تارکین وطن فلسطین کی جانب کوشش؛ حکومت اور عوام کے سامنے اپنا مقدمہ پیش کرنے میں بالترتیب عربوں اور یہود کی عدم مساوات ؛ عربی عدم اعتماد میں بڑھوتری؛ یہودی قوم پرستی کے گہری کردار اور "جدیدیت" سے عرب اراضی کی مسلسل خریداری پر عربی واویلہ۔ اور آخر کار عمومی غیر یقینی صورتحال، جو معاہدے میں کچھ جملوں کی مبہمیت سے انتدابی قوت کے حتمی ارادوں کی طرف اشارہ کرتی ہے۔ " [12]

وفد کو ادرک ہوا کہ "ریاستہائے متحدہ میں نقل مکانی پر سخت پابندی ، 1933ء میں جرمنی میں قومی اشتراکی حکومت کی برسر اقتدار آمد اور پولستان میں یہود پر بڑھتے ہوئے اقتصادی دباؤ کی وجہ معاہدے کے مسودہ نگار بڑے پیمانے پر یہودی نقل مکانی کا اندازہ نہیں لگا سکتے تھے۔ " [13] انہوں نے لکھا کہ "نسبتا پسماندہ مقامی آبادی پر ذہین اور کاروباری خارجی نسل کے مستقل تصادم،جو بڑے مالی وسائل کے تعاون سے اثر انداز ہوتے ہیں، اور جو ایک مختلف ثقافتی سطح پر ہوں، وقت کے ساتھ شدید رد عمل پیدا کرسکتے ہیں۔" [14]

وفد اس نتیجے پر پہنچی کہ "اگرچہ یہودی نقل مکانی سے عربوں نے اپنے ملک کی ترقی سے فائدہ اٹھایا ، لیکن اس کا کوئی مفاہمانہ اثر نہیں ہوا۔ اس کے برعکس، فلسطین کی معاشی صورتحال میں بہتری کا مطلب سیاسی صورتحال کا بگاڑ ہے۔ " [14] "عربوں کے الزام کہ یہود نے بہت زیادہ بہتر اراضی حاصل کرلی کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ یہ دعویٰ برقرار نہیں رکھا جاسکتا اکثر زمین جس پر اب سنترے کے جھنڈ ہیں پہلے جب خریدے گئے رتیلے ٹیلے اور دلدل تھے" [15] وہ لکھتے ہیں کہ "ہمارا خیال ہے کہ زمین کی قلت، یہود کے حاصل کردہ اراضی سے زیادہ عربوں کی آبادی میں اضافے کی وجہ سے ہے۔" "عربوں کی یہود کو انتقال اراضی پر قابو پانے کی کوششیں کامیاب نہیں ہوسکیں۔ پہاڑیوں میں یہود کی مزید گنجان آباد کاری کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ میدانی علاقوں میں اس کی اجازت صرف مخصوص پابندیوں کے تحت کی جانی چاہئے۔ " [12]

وفد نے بتایا کہ حکومت نے یہود اور عربوں کے مابین "توازن برقرار رکھنے" کی معاہدے کی مشکل کی شرائط کی متضاد ذمہ داریوں کو انجام دینے کی کوشش کی ہے۔ دونوں نسلوں میں مصالحت کی بار بار کوششوں نے پریشانی میں مزید اضافہ کیا ہے۔ فلسطین کی صورتحال تعطل کا شکار ہوگئی ہے۔ [12] مقامی خود مختاری اور خودعنان اداروں کی ترقی میں بھی رکاوٹ کا شکار ہوگئی ہے۔

دیرپا تصفیے کے امکان سے متعلق اختصاری رودادکے بیان میں کہا گیا کہ: "ایک چھوٹے ملک کی تنگ حدود میں دو قومی برادریوں کے مابین ایک ناقابل برداشت تنازعہ پیدا ہوا ہے۔ ان کے درمیان کوئی مشترکہ بنیاد نہیں ہے۔ ان کی قومی خواہشات متضاد ہیں۔ عرب اپنے سنہری دور کی روایات کو زندہ کرنا چاہتے ہیں۔ یہودی چاہتے ہیں کہ جب وہ یہودی قوم آغاز کی اس سرزمین میں آباد کیا جائے تو وہ کیا کچھ حاصل نہیں کرسکیں گے۔ دونوں قومی نظریوں کا ایک ہی سرزمین میں اکٹھ یک ریاستی مفاد میں نہیں ہے۔ [16]

سفارشات[ترمیم]

وفد اس نتیجے پر پہنچا کہ چونکہ تعہد ناقابل عمل ہوگیا ہے اور عرب یہودی "تعطل" کا واحد حل یہی ہے کہ تقسیم کے حق میں [2] اسے ختم کرنا ہوگا۔ اس میں دس نکات کی نشاندہی کی گئی: عرب اور یہودی ریاستوں اور نئی تعہدی حکومت کے مابین ایک معاہدہ کا نظام ۔ مقدس مقامات کے لئے ایک معاہدہ؛ محاذوں؛ بین ریاستی مالی اعانت کی ضرورت؛ برطانوی مالی اعانت کی ضرورت۔ محصولات اور بندرگاہیں۔ قومیت؛ سرکاری ملازمت؛ صنعتی مراعات۔ اور زمین اور آبادی کا تبادلہ۔ [17]

عراقی - شام کی نظیر پر مبنی ایک معاہدہ نظام، جس کی تجویز پیش کی گئی: یروشلم اور "راہداری"کے علاقے کے لئے مستقل تعہد جو بحیرہ روم کے ساحل پر یافہ تک پھیلی ہوئی ہے اور اس کے زیر اقتدار زمین (اور اس کے مطابق عرب اور یہودی آبادی دونوں کی منتقلی) کسی عرب اور یہودی ریاست کے مابین تقسیم ہوجائیں۔ یہودی فریق نے مغربی وسط اور شمال میں ایک چھوٹا علاقہ وصول کرنا تھا کوہ کرمل سے لیکر بیئر توویا کے جنوب میں اور وادی یزرعیل اور جلیل، جبکہ فلسطینی عرب ریاست جو اردن پار سے منسلک تھی، اسے جنوب اور مشرقی وسط میں ایسا علاقہ دیا جانا تھا جس میں یہودیہ ، سامرہ اور بڑے صحرائے نقب شامل ہوں۔ [18]

اس روداد میں کہا گیا ہے کہ یہودی فلسطین کی آمدنی میں فی کس عربوں کے مقابلے میں زیادہ حصہ ڈالتے ہیں، اور اس طرح عربوں کے لئے عوامی سہولیات کو بہترین سطح پر برقرار رکھنے کے قابل بنایا گیا تھا جو بصورت دیگر ممکن نہ ہوتیں۔ تقسیم کا مطلب یہ ہوگا کہ عرب علاقہ یہودی علاقے کی قابل ٹیکس استعداد سے فائدہ نہیں اٹھائے گا۔ دوسری طرف، (1) یہودی علاقے میں یہود کو خودمختاری حق حاصل ہو جائیگا۔ (2) وہ علاقہ موجودہ یہودی سرزمین اور آباد کاری کے رقبے سے بڑا ہوگا۔ (3) یہود اپنے علاقے سے باہر عربوں کی فلاح و بہبود کے فروغ میں امداد کی موجودہ ذمہ داری سے آزاد ہوں گے۔ لہذا، یہ تجویز کیا گیا ہے کہ جب یہ تقسیم عمل میں آجائے تو یہودی ریاست کو عرب ریاست کی مالی معاونت ادا کرنی چاہئے۔ انہوں نے اسہی طرح کے مالی سمجھوتہ اور تصفیہ کے مثال کے لئے سندھ کی بمبئی اور برما کی برطانوی بھارت سے علیحدگی کا حوالہ دیا. [18] [19]

روداد میں کہا گیا کہ تقسیم کو مؤثر حتمی تصفیے کے فروغ کیلئے صرف حدود کھینچنے اور دو ریاستوں کے قیام سے کہیں زیادہ ہونا چاہئے۔ جلد یا بدیر زمین کی منتقلی ہونی چاہئے اور جہاں تک ممکن ہو تبادلۂ آبادی ہونا چاہئے۔ مثال کے طور پر 1923ء کے یونانی اور ترکی میں آبادی کے تبادلے کا حوالہ دیتے ہوئے ، جس نے ان کی اقلیتوں کے مابین مستقل جھگڑے کو حل کیا۔ عربوں کو دوبارہ آباد کرنے کے لئے قابل کاشت اراضی کی عدم موجودگی پر بھی غور کرتے ہوئے ، جس سے اردن پار، بئرسبع اور وادی اردن میں آبپاشی ، آبی ذخائر کے ترقی کے بڑے بڑے منصوبوں کی ضرورت ہوگی۔ اگر آبادی کا تبادلہ ہوتا تو 225،000 عرب اور 1،250 یہود کی منتقلی ہوتی۔ [18] [20]

ردود عمل[ترمیم]

عربوں کا رد عمل[ترمیم]

فلسطینی عرب معاشرے کے مکمل طیف نے تقسیم کے اس منصوبے کو مسترد کردیا۔ ذرائع ابلاغ اور مذہبی شخصیات سمیت عوام میں وسیع پیمانے پر عوام اسکی مخالفت کی گئی۔ [5] [6] ہنری لارینز کے مطابق، عربوں نے اس منصوبے کی اشاعت کو تعہدی حکام کی اپنے قیام کے آغاز سے دی گئی ہر کلیدی ضمانت کی تردید کے طور پر دیکھا جیساکہ انہوں نے ضمانت دےرکھی تھی یہود کی کوئی علیحدہ ریاست نہیں ہوگی، نہ ہی زمین پر قبضہ ہوگا اور نہ ہی ملک بدری کی جائے گی۔ مجوزہ زمینی انتقالات اور آبادی کی منتقلی کو خطے کی ایک صدی کی معاشی ترقی کو منسوخ اور پلٹتے ہوئے دیکھا گیا ، اس کے ساتھ ہی ، یافا اور غزہ کے علاوہ ، فلسطینیوں کو سابقہ صدی کے دوران ہونے والی ساحلی ترقی کی بنیادی دیہی اور شہری ورثہ سے محروم کردیا گیا- یروشلم کو مستقبل کی فلسطینی ریاست سے باہر رکھا گیا ۔ [21] فلسطینی دونوں اعلانات سے حیرت زدہ تھے ، کہ انکی زمین کی تقسیم کی جائیگی اور انہیں ریاست کے حق سے محروم کردیا جائیگا (سوائے صرف اردن پار کے ساتھ اتحاد کے) ، جبکہ یہودی ریاست ملک کے ایک تہائی حصے پر محیط ہوگی [22] اور وہ پورے الجلیل کو ضم کرلیں گے، جہاں زمین کی ایک غالب اکثریت عربوں کی ملکیت تھی اور یہود کی موجودگی برائے نام اور نخیف تھی۔ [23] [24] [25] تلافی کیلئے، عربوں کو اردن کے مشرق اور بیسان ذیلی ضلع کے جنوبی حصے میں قیمتی علاقوں کی پیش کش کی گئی جہاں آبپاشی ممکن ہوتی۔ غم و غصہ عربوں اس بات پر تھا کہ منصوبے نے انہیں "بنجر پہاڑ" مختص کردیئے تھے جب کہ یہود کو پانچ زرخیز میدانی علاقوںساحلی میدان، عکا کا میدان ، مرج ابن اسمیر ، ہولہ وادی اور وادی اردن کا اکثر حصہ مختص ہوا۔ [26] عربوں میں تصور یہ تھا کہ ، منصوبے کے تحت صیہونیوں کو بہترین زمینیں دی گئیں، جس سے فلسطینی بنیادی برآمدات کا٪ 82٪ ، ترنجی پھل ، یہودیوں کے زیر تسلط دے دیا گیا تھا۔ [27] [28]

آبادی کی منتقلی کے تصور کو سخت مخالفت کا سامنا ہوا۔ [11] پیل کی تجویز کے مطابق،منتقلی سے قبل مجوزہ عرب ریاست میں 1،250 یہودی تھے جبکہ یہودی ریاست میں 225،000 عرب آباد تھے۔ پیل کی تجویز میں 1923ء کے یونانی اور ترکی میں آبادی کے تبادلے کی طرز پر آبادی کی منتقلی کی تجویز دی گئی تھی، جو "آخری اور لازمی.....امید" ہوتی۔ [6] یہ بات دونوں فرقوں میں سمجھی گئی کہ مجوزہ یہودی ریاست کے لئے مختص زمین کو تقسیم کرنے کا کوئی ایسا حل قابل غور نہیں جس میں عربوں کی ایک بڑی تعداد (اکثریت یا ایک بڑی اقلیت میں ) ہوں۔ [29]

قیادت کی سطح پر ، دھڑوں کے مابین تناؤ رہا۔ حسینی ، جو اپنے سوانح نگار کے مطابق "آمرانہ اور مخالفت کو برداشت نہیں کرسکتے تھے" ، انہیں شاہ عبد اللہ کی زیر حکمرانی اردن پار کے ساتھ تجویز کردہ انضمام کا خدشہ تھا۔ مؤخر الذکر اس طرح کی تقسیم سے بہت کچھ حاصل کرنے کے قابل ہوجاتا۔ نشاشیبیوں کے ساتھ کسی معاہدے تک پہنچنا اس کی حکمرانی کو مستحکم کرسکتا تھا اور حسینی کو بے اختیار چھوڑ سکتا تھا۔ [5] فلسطینیوں نے مشرقی اردن پار کے معاشی طور پر انتہائی کمزور معاشرے میں شمولیت کی بھی مخالفت کی۔ [21]

نشاشیبی خاندان کے قابل ذکر افراد اور اردن کے شاہ عبداللہ کی کچھ ابتدائی حمایت کے باوجود، [2] [23] اعلی عرب کمیٹی (ایچ اے سی) اور نشاشیبیوں (جن کی ساحلی خطے اور یروشلم دونوں میں مضبوط جڑیں تھیں انھوں نے اس کمیٹی سے انحراف کیا ) تقسیم کے منصوبے کی مخالفت کی اور اس کی متفقہ مذمت کی۔ انہوں نے استدلال کیا کہ یہودی ریاست کی تشکیل اور آزاد فلسطین کا فقدان برطانیہ کے کئے گئے وعدے سے انحراف ہے ، [3] اور یہودیوں کو زمین دینے کے خیال کو شدت سے مسترد کردیا۔ [30] اس اعتراض کے ساتھ یہ تجویز پیش کی گئی کہ برطانیہ یہودی اقلیت کے حقوق کی آئینی ضمانتوں کے ساتھ ایک خودمختار جمہوری ریاست کے اپنے وعدے پر عمل پیرا رہے۔ [5] 8 ستمبر کو شام میں بلائی گئی بلدان مجلس میں اس منصوبے کی تردید کی گئی تھی ، جہاں تمام عرب دنیا کی جماعتوں نے فلسطین کے تعہد میں یہودی ریاست کی تقسیم اور اس کے قیام دونوں کو مسترد کردیا تھا۔ سن 1937ء میں ، یروشلم میں امریکی قونصل جنرل نے محکمہ خارجہ کو اطلاع دی کہ مفتی اعظم بیت المقدس نے تقسیم کے اصول سے انکار کیا اور اس پر غور کرنے سے انکار کردیا۔ قونصل نے کہا کہ امیر عبداللہ نے اس بنیاد پر قبولیت پر زور دیا کہ حقائق کا سامنا کرنا ہوگا ، لیکن وہ غیر جانبدار محصورہ میں مجوزہ حدود اور عرب انتظامیہ میں ترمیم چاہتے ہیں۔ قونصل نے یہ بھی نشاندھی کی کہ نشاشیبی نے اس اصول کو پس پشت ڈال دیا ، لیکن وہ سازگار ترمیم کے لئے مذاکرات پر راضی ہیں۔ [31]

یہود کا رد عمل[ترمیم]

20 اگست 1937ء کو ، بیسویں صہیونی اجتماع نے اظہار خیال کیا کہ بالفور اعلامیے کے وقت ، یہ سمجھا گیا تھا کہ یہودی قومی وطن اردن پار سمیت پورے تاریخی فلسطین میں قائم ہونا تھا، اور اس اعلامیے میں فلسطین کے اندر یہودی ریاست کے ارتقا کا امکان راسخ تھا۔ [32]

جبکہ اجتماع کے کچھ دھڑوں نے پیل روداد کی حمایت کرتے ہوئے یہ دلیل دی کہ بعد میں سرحدوں کو باالترتیب کیا جاسکتا ہے ، دوسروں نے اس تجویز کی مخالفت کی کیونکہ یہودی ریاست بہت چھوٹی ہوگی۔ کانگریس نے پیل وفد کی تجویز کردہ مخصوص سرحدوں کو مسترد کرنے کا فیصلہ کیا، لیکن اس نے اپنی انتظامیہ کو فلسطین میں یہودی ریاست کے لئے زیادہ سازگار منصوبے پر بات چیت کرنے کا اختیار بھی دیا۔ [33] [34] پیل وفد کے نتیجے میں یہودی ایجنسی نے ریاست کے لئے منصوبہ بندی شروع کرنے کے لئے کمیٹیاں تشکیل دیں۔ اس وقت ، اس نے "حکومتِ برطانوی تعہدِ فلسطین کے شانہ بشانہ یہودی حکومت" کا مکمل انتظامی ڈھانچہ تشکیل دے دیا تھا۔

اسی صہیونی اجتماع میں ، یہودی ایجنسی برائے فلسطین انتظامی کمیٹی کے اس وقت کے چیئرمین ، ڈیوڈ بین گوریئن نے ، حاضرین سے کہا کہ ، اگرچہ " اسرائیل کی سرزمین کا کوئی حصہ ترک کرنے کا سوال نہیں پیدا ہوتا۔" ، ... قابل بحث یہ تھا کہ حتمی مقصد کے تیز ترین حصول کے لئے پیل وفد کی تجاویز کو قبول کیا جائے۔ " [35] یونیورسٹی آف اریزونا کے پروفیسر چارلس ڈی اسمتھ نے مشورہ دیا ہے کہ، "ویزمان اور بین گوریئن کو محسوس نہیں ہوا تھا کہ انھیں [پیل وفدکے ذریعہ] تجویز کردہ سرحدوں کا پابند ہونا پڑے گا۔ وہ ان سرحدوں کو مستقبل میں وسعت دینے کے لئے عارضی حدود سمجھتے رہے۔ " بین گوریون نے اس منصوبے کو صرف ایک بڑی یہودی ریاست کے حصول کے ایک مرحلے کے طور پر ہی دیکھا۔ [36]

دو اہم یہودی رہنماؤں ، کھائیم ویزمان اور بین گوریئن نے ، صہیونی اجتماع کو مزید مذاکرات کی بنیاد کے طور پر پیل کی سفارشات کو متفقہ طور پر منظور کرنے پر قائل کیا تھا۔ [37] [38]

اثرات[ترمیم]

پیل منصوبے تقسیم کا ہمہ گیر منصوبہ ثابت ہوا، جس کے تمام نقاط یا جن سے ان کا موازنہ کیا گیا، اس بنیاد پر تھے کہ فلسطین کے مستقبل کے بارے میں برطانوی نقطہ نظر میں ایک بنیادی تبدیلی کا آغاز ہو۔ [3]

اس روداد کے اشاعت کے بعد برطانوی حکومت نے ایک بیان جاری کیا، جس نے اس کے نتائج پر اتفاق کیا اور جمیعت اقوام کے اختیار سے اس تقسیم کے منصوبے پر عملدرآمد کرنے کی تجویز پیش کی۔ [2] مارچ 1938ء میں ، انگریزوں نے ووڈ ہیڈ وفد کو "پیل کمیشن منصوبے کی تفصیل سے جانچ پرکھ کرنے اور تقسیم کے اصل منصوبے کی سفارشات مرتب کرنے" کے لئے مقرر کیا۔ ووڈ ہیڈ وفد نے تین مختلف منصوبوں پر غور کیا ، ان میں سے ایک پیل منصوبہ پر مبنی تھا۔ 1938ء میں روداد پیش کرتے ہوئے ، وفد نے پیل منصوبہ کو درحقیقت اس بنیاد پر مسترد کیا کہ عربوں کی زبردستی منتقلی کے بغیر اس پر عمل درآمد نہیں کیا جاسکتا (جسے برطانوی حکومت پہلے ہی مسترد کرچکی تھی)۔ اپنے کچھ ممبروں کی ناموافقت کے ساتھ، وفد نے ایک دوسرے ایسے منصوبے کی سفارش کی جس سے برطانوی تعہد کے تحت الجلیل کو چھوڑ دیا جائے، لیکن اس نے اس کے ساتھ سنگین مسائل پر زور دیا جس میں مجوزہ عرب ریاست کی مالی خود کفالت کا فقدان بھی شامل تھا۔ برطانوی حکومت نے ووڈ ہیڈ روداد کی اشاعت میں انکی مجوزہ حکمت عملی کو "سیاسی ، انتظامی اور مالی مشکلات" کی وجہ سے تقسیم کو ناقابل عمل قرار دیا تھا۔ [39]

سن 1937ء میں بلوڈان اجتماع میں ، پوری عرب دنیا کی جماعتوں نے فلسطین میں یہودی ریاست کی تقسیم اور قیام دونوں کو مسترد کردیا ، اس طرح اس اجتماع نے تمام فلسطین پر دعویٰ کیا۔

مزید دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Debate and vote on 23 May 1939; Hansard. Downloaded 10 December 2011
  2. ^ ا ب پ ت Anglo-American Committee of Inquiry - Appendix IV Palestine: Historical Background
  3. ^ ا ب پ ت Mandated Landscape: British Imperial Rule in Palestine 1929-1948
  4. Mazin B. Qumsiyeh, Popular Resistance in Palestine: A History of Hope and Empowerment (New York, 2011), p. 85.
  5. ^ ا ب پ ت ٹ Elie Podeh, Chances for Peace: Missed Opportunities in the Arab-Israeli Conflict, University of Texas Press 2015 pp.28ff.
  6. ^ ا ب پ Sumantra Bose (30 June 2009). Contested Lands. Harvard University Press. صفحہ 223. ISBN 978-0-674-02856-2. 
  7. British Policy in Palestine, 1937-38: From the Peel to the Woodhead Report, Bulletin of International News, Vol 15, No. 23 (Nov. 19, 1938), pp.3-7
  8. Itzhak Galnoor, Partition of Palestine, The: Decision Crossroads in the Zionist Movement, State University of New York Press 2012 p.208.
  9. Allan Gerson, Israel, the West Bank and International Law, Frank Cass 1978 pp.87-88 n.33.
  10. Herbert Druks, The Uncertain Friendship: The U.S. and Israel from Roosevelt to Kennedy, ABC-Clio/Greenwood Publishing Group, 2001 p.33.
  11. ^ ا ب Benny Morris, Righteous Victims: A History of the Zionist- Arab Conflict, 1881-2001, Vintage Books 2001 pp.136-7
  12. ^ ا ب پ Report, p. 363-364.
  13. Report, p. 289.
  14. ^ ا ب Report, p. 299.
  15. Report, p. 242.
  16. LEAGUE OF NATIONS SUMMARY OF THE REPORT OF THE PALESTINE ROYAL COMMISSION." "Archived copy". 09 جون 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 اکتوبر 2005. 
  17. Mandated Landscape: British Imperial Rule in Palestine 1929-1948, By Roza El-Eini, pages 320
  18. ^ ا ب پ OFFICIAL COMMUNIQUE IN 9/37: Summary of the Report of the 'Palestinian Royal Commission'
  19. The Arab-Israeli Conflict: An Introduction and Documentary Reader, 1 September 2009, By Gregory S. Mahler, Alden R. W.
  20. Report, p. 389–391
  21. ^ ا ب Henry Laurens, Un mission sacrée de civilisation, 1922–1947, vol.2 of La Question de Palestine, , Fayard Paris pp.351–403 pp.351–52.
  22. British Policy in Palestine, 1937–38: From the Peel to the Woodhead Report, Bulletin of International News, Vol 15, No. 23 (Nov. 19, 1938), pp.3–7
  23. ^ ا ب Ted Swedenburg, 'The Role of the Palestinian Peasantry in the Great Revolt 1936–1939,' in Edmund Burke III and Ira Lapidus (eds.), Islam, Politics, and Social Movements, University of California Press pp 189–194.
  24. Philip Mattar, Encyclopedia of the Palestinians, Infobase Publishing 2005 p.366.
  25. W. F. Deedes, Words and Deedes: Selected Journalism 1931-2006, Pan Macmillan, 2013 p.289: 88,200 Arabs versus 2,900 Jews, the former controlling 1,321,000 dunums compared to the latter’s 35,900.
  26. Roza El-Eini, Mandated Landscape: British Imperial Rule in Palestine 1929-1948, Routledge, 2004 pp.328–329.
  27. Hurewitz، J. C. (1979). The Middle East and North Africa in World Politics: A Documentary Record. British-French supremacy, 1914-1945. 2. Yale University Press. صفحہ 712. ISBN 978-0-300-02203-2. اخذ شدہ بتاریخ 11 اکتوبر 2015. 
  28. Jacob، Daniel (30 June 2014). Citrus Fruits. Oxford Book Company. ISBN 9789350301906. 
  29. Benny Morris (2004). The Birth of the Palestinian Refugee Problem Revisited. Cambridge University Press. صفحہ 59. ISBN 978-0-521-00967-6. 
  30. British Policy in Palestine, 1937-38: From the Peel to the Woodhead Report, Bulletin of International News, Vol 15, No. 23 (Nov. 19, 1938), pp.3–7
  31. Foreign relations of the United States diplomatic papers, 1937. The British Commonwealth, Europe, Near East and Africa Volume II, Page 894
  32. Zionist Peel Commission resolution. At Wikisource
  33. Jewish Agency for Israel, Twentieth Congress - Zurich, 1937
  34. Jewish Agency for Israel, Timeline: 1937
  35. Charles D. Smith, Palestine and the Arab-Israeli Conflict, 7th ed. (Boston: Bedford/St. Martin's, 2010), 138-140.
  36. Mandated Imaginations in a Regional Void. Moshe Behar, Middle East Studies Online Journal, Issue 5, Volume 2 (2011), pp. 102-104
  37. William Roger Louis (2006). Ends of British Imperialism: The Scramble for Empire, Suez, and Decolonization. I.B.Tauris. صفحہ 391. ISBN 978-1-84511-347-6. اخذ شدہ بتاریخ 25 جولا‎ئی 2013. 
  38. Benny Morris (2009). One state, two states: resolving the Israel/Palestine conflict. Yale University Press. صفحہ 66. اخذ شدہ بتاریخ 25 جولا‎ئی 2013. 
  39. Statement by His Majesty's Government in the United Kingdom, Presented by the Secretary of State for the Colonies to Parliament by Command of His Majesty November 1938. "Archived copy". 03 نومبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2014. 



مزید پڑھئے[ترمیم]

  • فلسطینی شاہی وفد کی روداد پیش کردہ ریاست کی پارلیمانی سیکرٹری برائے کالونیاں بحکم سے بادشاہ معظم، جولائی 1937ء میں پیش کی گئی۔ شاہی اسٹیشنری مکتب۔ ، لندن ، 1937ء۔ 404 صفحات + نقشے۔
  • اہارون کوہن ، اسرائیل اور عرب دنیا (فنک اور ویگنالس ، نیو یارک ، 1970ء) صفحات۔207–210

بیرونی روابط[ترمیم]