چینی ثقافت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
A donkey
چینی پورسلین یا چینی مٹی کی چین کے ساتھ اس کی شناخت کی جاتی ہے۔ عام زوز مرہ کی زبان میں اسے چینی کے برتن بھی کہا جاتا ہے۔
A trout
چینگہواسی(نیلے اور سفید مٹی کے برتن)، چنگ خاندان کے دوران میں چینی مٹی کے برتنوں کی سب سے مشہور قسم۔ "ابتدائی جدید دور" میں یہ چین کی بین الاقوامی تجارت کا سب سے اہم جزو تھا۔
A donkey
جینی پانی کے رنگوں سے بنی تصویر عقاب از لن لیانگ(1416ء-1480ء)۔ یہ تصویر قومی محل میوزیم میں موجود ہے
A trout
برفانی آلو بخارہ اور سارسوں کا جوڑا از نیان جینگژاو(1355ء–1428ء)۔ یہ تصویر گوانگڈونگ عجائب گھر میں موجود ہے۔۔

چینی ثقافت (انگریزی: Chinese culture) (آسان چینی: 中华文化; روایتی چینی: 中華文化; پینین: Zhōnghuá wénhuà) ہزاروں سال قبل شروع ہونے والی دنیا کی سب سے قدیم تہذیبوں میں سے ایک ہے۔ ۔[1][2]

جس علاقے میں ثقافت غالب ہے اس میں مشرقی ایشیا کا ایک بڑا جغرافیائی علاقہ شامل ہے۔ رواج اور روایات صوبوں، شہروں اور یہاں تک کہ قصبوں کے لحاظ سے تبدیل ہوتے رہتے ہین۔ چین قدیم ترین تہذیبوں میں سے ایک ہے، چینی ثقافت انتہائی متنوع اور مختلف ہے اور اس کے فلسفہ، فضیلت، عقل اور ایشیا کی روایات کا بہت زیادہ اثر ہے۔ [3]

چینی ثقافت مشرقی ایشیا کی غالب ثقافت سمجھا جاتا ہے، اسی تہذیب نے مشرقی ایشیائی تہذیب و تمدن کی بنیاد رکھی جس نے خطے میں سب سے اہم اثرات مرتب کیے ہیں۔ [4] چینی زبان، چینی مٹی کے ظروف، فن تعمیر، موسیقی، رقص، ادب، مارشل آرٹس، پکوان، بصری فنون، فلسفہ، کاروباری آداب، مذہب، سیاست اور تاریخ نے دنیا پر گہرا اثر ڈالا ہے۔ جبکہ اس کی روایات اور تہواروں کو بھی منایا جاتا ہے، دنیا بھر میں اس نے لوگوں کو اپنی طرف متوجہ کیا ہے۔ [5][6][7]

شناخت[ترمیم]

چن دور اور ابتدائی چنگ دور میں (221 ق م – 1840 عیسوی) چینی حکومت نے چینی لوگوں کو چار طبقات میں تقسیم کر رکھا تھا جو کہ زمیندار، کسان، کاریگر، اور تاجر تھے۔ زمیندار اور کسان دو بڑے طبقات کی تشکیل کرتے تھے جبکہ جبکہ تاجروں اور دستکاروں کو دو ادنی ذاتیں تصور کیا جاتا تھا۔ چین کے اکثریتی نسلی گرہوں میں ہان چینی اور مشرقی ایشیائی نسلی اقوام شامل ہیں۔

یہ تقریباً جین کی آبادی کا 92 فیصد ہیں، [8] تائیوان کا 95٪ (ہان تائیوانی)، [9] سنگاپور کا 76٪، [10] ملائیشیا کا 23٪ [11] اور عالمی آبادی کا تقریباً 17٪ جو انہیں دنیا کا سب سے بڑا نسلی گروہ بناتی (1.3 بلین افراد سے زیادہ) ہے۔

اہم ذیلی ثقافتیں[ترمیم]

چینی ثقافت میں کئی ذیلی ثقافتیں بھی موجود ہیں۔ ملحقہ صوبوں کے درمیان ثقافتی فرق (اور بعض صورتوں میں ایک ہی صوبے کے اندر ملحقہ کاؤنٹیاں) اتنا ہی گہرا یا بڑا ہو سکتا ہے جتنا عمومی طور پر کسی دو ملحقہ ممالک کت درمیان ہوتا ہے۔ [12] چین میں معروف ذیلی ثقافتوں میں سے کچھ مندرجہ ہیں:

شمال[ترمیم]

جنوب[ترمیم]

تصاویر[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Chinese Dynasty Guide – The Art of Asia – History & Maps"۔ Minneapolis Institute of Art۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 اکتوبر 2008۔
  2. "Guggenheim Museum – China: 5,000 years"۔ Solomon R. Guggenheim Foundation & Solomon R. Guggenheim Museum۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 اکتوبر 2008۔
  3. David Wong (2017)۔ "Chinese Ethics"۔ The Stanford Encyclopedia of Philosophy۔ Metaphysics Research Lab, Stanford University۔
  4. Hugh Dyson Walker۔ East Asia: A New History۔ AuthorHouse۔ صفحہ 2۔
  5. "Chinese Culture, Tradition, and Customs — Penn State University and Peking University"۔ elements.science.psu.edu (انگریزی زبان میں)۔
  6. "The original and unique culture of China"۔ www.advantour.com (انگریزی زبان میں)۔
  7. "Chinese Culture: Ancient China Traditions and Customs, History, Religion"۔ www.travelchinaguide.com۔
  8. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ ciastat نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  9. Executive Yuan, Taiwan۔ The Republic of China Yearbook 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-09-08۔
  10. "Archived copy" (پی‌ڈی‌ایف)۔ مورخہ 2016-02-16 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-02-14۔
  11. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ statistics.gov.my نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  12. Chinese Culture: Customs & Traditions of China
  13. 晉語的使用範圍與歷史起源
  14. 晉語是中國北方的唯一一個非官話方言,但是否歸屬官話
  15. 山西方言與山西文化

بیرونی روابط[ترمیم]