ابو عمر الشیشانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ابو عمر الشیشانی
Tarkhan Batirashvili
Tarkhan Tayumurazovich Batirashvili.jpg
پیدائش 1986 (عمر 32–33 سال)[1]
برکیانی، جارجیائی سوویت اشتراکی جمہوریہ، سوویت اتحاد[2]
(ابھی جورجیا)
وفات 14 مارچ 2016[3] (according to U.S. officials)
عمر 30)
وابستگی Flag of جارجیا جارجیا فوج
(2006–2010)
Jaish al-Muhajireen wal-Ansar.jpg Jaish al-Muhajireen wal-Ansar
(2012–2013)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست[4][5]
(مئی 2013– تا حال)
نوکری/شاخ Military of ISIS
عہدہ Field Commander
سالار شمالی سوریہ (شام)
جنگیں/محارب

Russo-Georgian War[6]

شامی خانہ جنگی[6][7]

ابو عمر الشیشانی جو (جارجیائی: თარხან ბათირაშვილი اور انگریزی زبان میں Tarkhan Batirashvili کے نام سے جانا جاتا ہے ایک جارجیائی سوویت اشتراکی جمہوریہ کا نو مسلم شخص ہے جو داعش کا ایک اہم رہنما ہے۔ ابو عمر الشیشانی اس کا جنگی نام ہے۔[8]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Syria crisis: Omar Shishani, Chechen jihadist leader"۔ BBC News Middle East۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 دسمبر 2013۔
  2. Alan Cullison۔ "Meet the Rebel Commander in Syria That Assad, Russia and the U.S. All Fear"۔ The Wall Street Journal۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جولا‎ئی 2014۔(رکنیت درکار) مزید دیکھیے https://www.google.co.uk/#q=meet+the+rebel+commander
  3. "US Confirms ISIS Commander is dead"۔ cbsnews.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ مارچ 15, 2016۔
  4. "The Syrian rebel groups pulling in foreign fighters"۔ BBC News۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 دسمبر 2013۔
  5. "Chechen-led group swears allegiance to head of Islamic State of Iraq and Sham"۔ The Long War Journal۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 دسمبر 2013۔
  6. ^ ا ب "The Islamic State's Anbar Offensive and Abu Umar al-Shishani"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جنوری 2015۔
  7. "Al Nusrah Front commanded Free Syrian Army Unit, 'Chechen emigrants,' in assault on Syrian air defense base"۔ The Long War Journal۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 دسمبر 2013۔
  8. Mroue، Bassem (2 July 2014). "Chechen in Syria a rising star in extremist group". Associated Press. http://washingtonexaminer.com/chechen-in-syria-a-rising-star-in-extremist-group/article/feed/2146182۔ اخذ کردہ بتاریخ 11 July 2014.