2016ء برسلز دھماکے

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
2016ء برسلز دھماکے
2016 Brussels bombings

Location of the incidents in Brussels. Despite its name, Brussels Airport is located outside Brussels, in the city of Zaventem.
مقام برسلز ہوائی اڈا اور مالبیک میٹرو اسٹیشن، برسلز، بلجئیم
متناسقات 50°54′05″N 4°29′04″E / 50.90139°N 4.48444°E / 50.90139; 4.48444 (ہوائی اڈا)
50°50′35″N 4°22′48″E / 50.843190°N 4.380025°E / 50.843190; 4.380025 (میٹرو)
تاریخ 22 مارچ 2016
ت 08:00–09:11 (UTC+1)
نشانہ شہری، نقل و حمل کے مراکز
حملے کی قسم خودکش حملہ، قتل عام
ہلاکتیں کم از کم 34:
کم از کم برسلز ہوائی اڈا
20 مالبیک میٹرو اسٹیشن[1][2]
زخمی کم از کم 187:
ہوائی اڈے پر کم از کم 81
کم از کم 106 میٹرو میں، 17 شدید[2]
مشتبہ مرتکبین عراق اور الشام میں اسلامی ریاست[3]


22 مارچ 2016ء، تین دھماکے برسلز، بلجئیم میں ہوئے : دو برسلز ہوائی اڈا پر اور ایک مالبیک میٹرو اسٹیشن۔ کم از کم 34 افراد کی ہلاکت کی خبر دی جا رہی ہے اور درجنوں زخمیوں کی۔[4]

حملے[ترمیم]

برسلز ہوائی اڈا[ترمیم]

برسلز ہوائی اڈے کے بین الاقوامی روانگی ہال کے اندر 08:00 مقامی وقت کے مطابق دو دھماکے ہوئے۔[5] ایک دھماکا امریکن ایئر لائنز اور برسلز ایئر لائنز کے چیک ان ڈیسک پر ہوا، دوسرا آگے ایک سٹاربکس کافی کی دکان پر۔[6]

میٹرو اسٹیشن[ترمیم]

9 بج کر 11 منٹ پر مالبیک میٹرو اسٹیشن کے قریب بھی دھماکا ہوا۔ یہ اسٹیشن برسلز ایئرپورٹ سے دس کلومیٹر (6 میل) کے فاصلے پر ہے۔[6][7][8][9][10]

متاثرین[ترمیم]

میٹرو اسٹیشن پر ہونے والے دھماکے میں اب تک 17 افراد کے ہلاک ہونے اور 130 کے زحمی ہونے کی تصدیق ہو چکی ہے، جن میں سے 17 کی حالت تشویش ناک ہے،[2][11] جبکہ ہوائی اڈے پر ہونے والے دھماکوں میں 14 ہلاک اور 100 زحمی ہوئے ہیں۔[1][2][11]

حملہ آور[ترمیم]

شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ نے برسلز حملوں کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ اپنے خبررساں ادارے اعماق پر نشر ہونے والے ایک بیان میں تنظیم نے کہا ہے کہ یہ حملہ اس نے کروایا ہے۔[12]

رد عمل[ترمیم]

بین الاقوامی[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب "Attentat suicide à Zaventem confirmé، explosion à Maelbeek: respectivement 11 et 15 morts" (French زبان میں)۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  2. ^ ا ب پ ت "Explosions au métro de Maelbeek: le quartier européen bouclé" (French زبان میں)۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  3. Tom Batchelor۔ "Brussels terror attack – Islamic State behind Belgium bomb blasts – World – News – Daily Express"۔ Express.co.uk۔
  4. Alissa J. Rubin, Aurelien Breeden؛ Anita Raghavan۔ "Explosions at Airport and Subway Leave 'Numerous' Dead in Brussels"۔ نیو یارک ٹائمز۔ ISSN 0362-4331۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-03-22۔
  5. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ BBC initial report نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  6. ^ ا ب Matthew Weaver۔ "Brussels Airport explosions – live updates"۔ The Guardian۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 مارچ 2016۔
  7. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ DeardenIndependent نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  8. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ ChappellNPR نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  9. "Fumée métro maelbeeck" (ٹویٹ)۔
  10. "Evacuation des passagers entre la station Arts-Loi et Maelbeek" (ٹویٹ)۔
  11. ^ ا ب نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ Botelho نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  12. ^ ا ب "دولتِ اسلامیہ نے ذمہ داری قبول کر لی"۔ بی بی سی اردو، لندن۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 مارچ 2016۔
  13. [1] بی بی سی اردو