بیگ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ایران، ترکی، قفقاز، برصغیر اور افغانستان کے شاہانہ اور اشرافیہ کے مراتب
A sultan's turban helmet
بادشاہ / شہنشاہ
پادشاہ
شاہ / شہنشاہ
سلطان
سلطانہ
شاہی شہزادہ
میرزا
شاہ / شہزادہ
سلطان زادہ
اشرافیہ
بیگ
میرزا
نواب
وزیر
پاشا
شرفا کا شہزادہ
صاحب زادہ
بیگ زادہ
نواب زادہ
شاہی خاندان
داماد (عثمانی لقب)
حکومتی
لالا
آغا
اتابک
خزانے دار

بیگ یا بے۔ ترکی اور تاتاری زبان کا ایک اعزازی خطاب کسی زمانے میں شاہزدگان، امرا اور معززین کے لیے مخصوص تھا۔ لیکن بعد میں فوجی افسروں کے لیے مخصوص ہو گیا۔ سلجوقی ترک یورپ گئے تو بیگ کا لفظ بے رہ گیا۔لفظ بیگ کا استعمال مغل قوم میں ہلاکو خان کی چوتھی پُشت سے پوتے امیرایکوتمربانی ترخان خاندان کے لڑکے امیر شکل بیگ کے نام کی نسبت سے شروع ہوااور امیرشکل بیگ کی اولاد نے متواتر لفظ “بیگ” استعمال کیا ۔امیرتیمور کی اپنی خودنوشت “تزک تیموری ”مترجم سید ابوہاشم ندوی کے صفحہ 89 پر درج ہے کہ “بیگ باشی ”ایک فوجی یونٹ کا نام ہے یہ فوجی اس کے عزیز ترین ماتحت ہوتے تھے۔ترکستان میں قدیم ایّام سے رواج چلا آتا ہے کہ میدان کارزار میں جو شخص جان بازی کرتا ہے اس کو بیگ کے خطاب سے سرفراز کیا جاتا ہے بیگ کے لغوی معنی سردار اور چیف کے ہیں اور پاک و ہند کے مغل اپنے نام کے ساتھ بیگ کا لاحقہ لگاتے ہیں۔ یہ لوگ منگولیا یا ترکستان کے تھے۔ شہنشاہ بابر کے ساتھ ہندوستان آئے اور بیگ کہلائے۔بیگم کا لفظ بیگ ہی کا مونث ہے۔ بیگم سے ہی بیگی اور بی بی کے لفظ نکلے ہیں ۔

اسلامی القاب[ترمیم]