معمار سنان پاشا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
معمار سنان
(ترکی میں: Mimar Sinan خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
سنان پاشا کی شبیہ
سنان پاشا کی شبیہ

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1490[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
وفات 17 جولا‎ئی 1588 (97–98 سال)[2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
استنبول  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
قومیت عثمانی ترک
عملی زندگی
پیشہ معمار
پیشہ ورانہ زبان عثمانی ترک زبان[3]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
کارہائے نمایاں فرحت پاشا مسجد،  بنیا باشی مسجد،  شہزادہ مسجد،  جامع سلیمانیہ،  سلیمیہ مسجد،  محمد پاشا سوکولویچ پل  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں کارہائے نمایاں (P800) ویکی ڈیٹا پر
دستخط
Mimar Sinan signature.png 

سنان پاشا یا معمار سنان پاشا (مکمل نام: معمار سنان ابن عبد المنان) (ولادت: 15 اپریل 1489ء، وفات: 17 جولائی 1588ء) عثمانی سلاطین سلیم اول، سلیمان اول، سلیم دوم اور مراد سوم کے دور کے اہم ماہر تعمیرات تھے۔ ادرنہ کی سلیمیہ مسجد اور استنبول کی سلیمانیہ مسجد ان کے فن کا منہ بولتا ثبوت ہیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

سنان پاشا اناطولیہ کے ایک مسیحی خاندان میں پیدائے ہوئے۔ 1511ء میں وہ عثمانی افواج میں شامل ہوئے اور استنبول آ گئے جہاں انہوں نے اسلام قبول کر لیا اور سنان کا نام پایا۔ تین سال بعد تعمیرات اور انجینئری کا ماہر سنان مشرق میں عثمان سلطان سلیم اول کے پیش قدمی کرنے والے دستوں میں شامل تھا اور قاہرہ پر قبضہ کرنے والے دستے کا رکن تھا۔ اس فتح کے بعد سنان کو اعلی ماہر تعمیرات مقرر کیا گیا۔ انہیں پیادہ افواج کا کمانڈر مقرر کیا گیا لیکن ذاتی خواہش پر توپ خانے میں منتقل کر دیے گئے۔ ایران کے خلاف جنگ کے دوران 1535ء میں انہوں نے جھیل وان عبور کرنے کے لیے جہاز تعمیر کیے جس پر انہیں سلطان کے ذاتی محافظین کا آغا مقرر کر دیا گیا۔

معمار سنان پاشا

سنان کا پہلا معروف تعمیراتی کام 1548ء میں قائم کردہ شہزادہ مسجد تھی۔ 1550ء میں انہوں نے سلیمانیہ مسجد پر کام شروع کیا جو 1557ء میں مکمل ہوا۔ انہوں نے استنبول اور دیگر شہروں میں کئی عمارات، مساجد اور پل وغیرہ تعمیر کیے جن میں ادرنہ کی سلیمیہ مسجد، استنبول کی رستم پاشا مسجد، ادرنہ کی محرمہ سلطان مسجد اور استنبول کی قادرگا صوقولو مسجد شامل ہے۔ انہوں نے دمشق میں تقیہ السلیمانیہ خان مسجد بھی تعمیر کی جو آج بھی شہر کی اہم ترین یادگاروں میں سے ایک ہے۔ وہ بلغاریہ کے دار الحکومت صوفیہ کی واحد مسجد بنیا باشی مسجد کے بھی معمار ہیں۔

اپنی سوانح حیات "تذکرات بنیان" کے مطابق وہ ادرنہ کی جامع سلیمیہ مسجد کو اپنے فن تعمیر کا بہترین نمونہ قرار دیتے ہیں۔ جب جامع سلیمیہ کی تعمیر جاری تھی جو مسیحیوں نے دعوی کیا تھا کہ دنیا کوئی بھی معمار خصوصا مسلمان ایاصوفیہ کے گنبد سے بڑا گنبد تیار نہیں کر سکتا۔ سنان پاشا نے اس دعوے کو غلط کر دکھایا اور جامع سلیمیہ کا گنبد ایاصوفیہ سے بڑا بنایا۔ جب جامع سلیمیہ مکمل ہوئی تو سنان کی عمر 80 سال تھی۔

کارنامے[ترمیم]

انہوں سے زندگی میں مندرجہ ذیل عمارات تعمیر کیں:

  • 94 جامع مساجد
  • 57 جامعات
  • 52 مساجد
  • 41 حمام
  • 35 محلات
  • 22 مزارات
  • 20 کاروان سرائے
  • 17 عوامی باورچی خانے
  • 8 پل
  • 8 گودام
  • 7 مدراس
  • 6 نہریں
  • 3 دارالشفاء

انتقال[ترمیم]

ترکی کے ایک نوٹ پر معمار سنان کی تصویر

معمار سنان پاشا نے اتوار 23 شعبان 996ھ بمطابق 17 جولائی 1588ء کو 99 سال کی عمر میں قسطنطنیہ میں وفات پائی۔ انہیں جامع سلیمیہ کی دیواروں کے ساتھ دفن کیا گیا اور متصل شاہراہ کو ان کے نام سے موسوم کیا گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Encyclopædia Britannica — اخذ شدہ بتاریخ: 19 جنوری 2017 — جلد: 22 — ناشر: Encyclopædia Britannica Inc. — ISBN 978-1-59339-292-5
  2. ایس این اے سی آرک آئی ڈی: http://snaccooperative.org/ark:/99166/w6cr7nnv — بنام: Mimar Sinan — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  3. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb121305238 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ

بیرونی روابط[ترمیم]