آیوڈین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
53 زینونآیوڈ زمینصر
Br

I

At
I-TableImage.svg
عمومی خواص
نام، عدد، علامت I ،53 ،آیوڈ
کیمیائی سلسلے ہیلوجنs
گروہ، دور، خانہ 17، 5، p
اظہار violet-dark gray, lustrous
Iod kristall.jpg
جوہری کمیت 126.90447 (3)گ / مول
برقیہ ترتیب [Kr] 4d10 5s2 5p5
برقیے فی غلاف 2, 8, 18, 18, 7
طبیعیاتی خواص
حالت ٹھوس
کثافت (نزدیک د۔ ک۔) 4.933 گ / مک سم
نقطۂ پگھلاؤ 386.85 ک
(113.7 س، 236.66 ف)
نقطۂ ابال 457.4 ک
(184.3 س، 363.7 ف)
مقام انتہاء 819 ک, 11.7 میگاپاسکل
حرارت ائتلاف (I2) 15.52 کلوجول/مول
حرارت تبخیر (I2) 41.57 کلوجول/مول
حرارت گنجائش (25 س) (I2) 54.44 جول/مول/کیلون
بخاری دباؤ (rhombic)
P / Pa 1 10 100 1 k 10 k 100 k
T / K پر 260 282 309 342 381 457
جوہری خواص
قلمی ساخت orthorhombic
تکسیدی حالتیں ±1, 5, 7
(strongly acidic oxide)
برقی منفیت 2.66 (پالنگ پیمانہ)
آئنسازی توانائیاں اول: 1008.4 کلوجول/مول
دوئم: 1845.9 کلوجول/مول
سوئم: 3180 کلوجول/مول
نصف قطر 140 پیکومیٹر
نصف قطر (پیمائش) 115 پیکومیٹر
ہمظرفی 133 پیکومیٹر
وانڈروال نصف قطر 198 پیکومیٹر
متفرقات
مقناطیسی ترتیب غیر مقناطیسی
برقی مزاحمیت (0 س) 1.3×107Ω·m
حر ایصالیت (300 ک) 0.449 و / م / ک
معامل حجم 7.7 گیگاپاسکل
سی اے ایس عدد 7553-56-2
منتخب ہم جاء
مقالۂ رئیسہ: آیوڈین کے ہم جاء
ہم جاء کثرت نصف حیات تنزل ا تنزل ت (ب ولٹ) تنزل پ
127I 100% 74 تعدیلوں کیساتھ I مستحکم ہے
129I syn 15.7×106y β- 0.194 129Xe
131I syn 8.02070 d β- 0.971 131Xe
حوالہ جات


آیوڈین یا آیوڈ (Iodine) ایک کیمیائی عنصر ہے جو دوری جدول (Periodic table) میں ہیلوجن گروہ سے تعلق رکھتا ہے۔ اس کا جوہری عدد 53 ہے یعنی اس کے ہر جوہر میں 53 اولیے (protons) ہوتے ہیں۔ آیوڈ کا صرف ایک ہی ہمجاء (isotope) پائیدار ہوتا ہے اور وہ 74 تعدیلہ کے ساتھ آیوڈ127 ہے۔

Round bottom flask filled with violet iodine vapor
فارغہ کی حالت میں آیوڈ کا رنگ جامنی ہوتا ہے۔.
آیوڈ کی کمی سے گلہڑ (goitre) کی بیماری ہو جاتی ہے۔

آیوڈ ایک ٹھوس عنصر ہے۔ فارغہ (gas) کی حالت میں آیوڈ کا رنگ جامنی ہوتا ہے۔ گندھک کی طرح آیوڈ بھی غیر دھاتی عنصر ہے۔

حیاتیاتی استعمال[ترمیم]

  • آیوڈ انسان اور اکثر جانوروں کے لیے خوراک کا لازمی جز ہے کیونکہ یہ thyroid کے ہارمون thyroxine کا مرکزی حصہ ہے۔ اس کی کمی سے گلہڑ (goitre) کی بیماری ہو جاتی ہے جس میں دماغ اور جسم سست ہو جاتا ہے۔ روزانہ چند چمچ سمندر کا پانی پینے سے جسم میں آیوڈ کی کمی ختم ہو جاتی ہے کیونکہ سمندری پانی میں آیوڈ کی اچھی خاصی مقدار موجود ہوتی ہے۔ آیوڈ ملا نمک اسی بیماری کو روکنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ ایسے ایک چائے کے چمچ بھر نمک میں 0.4 ملی گرام آیوڈ ہوتی ہے۔
  • انسانی جسم میں پایا جانے والا یہ بھاری ترین عنصر ہے۔ انسانی جسم میں 20 سے 30 ملی گرام آیوڈ ہوتی ہے۔ انسان کو ایک سال میں صرف 50 ملی گرام آیوڈ کی ضرورت ہوتی ہے۔ آیوڈ کی زیادتی بھی نقصان دہ ہوتی ہے۔
  • سارے بھاری عنصر ایکس رے جذب کرتے ہیں۔ آیوڈ بھی ان میں سے ایک ہے۔ اگر ایکسرے کرنے سے پہلے آیوڈ کا کوئی نامیاتی مرکب حقنے کے ذریعہ جسم میں داخل کر دیا جائے تو گردوں کی بڑی واضح تصاویر حاصل ہوتی ہیں اور یہ بھی پتہ چل جاتا ہے کہ کونسا گردہ کام نہیں کر رہا ہے۔
  • آیوڈ کے مرکبات طاقتور تکسیدی عامل ہوتے ہیں اور جراثیموں کی تکسید کر کے انہیں مار ڈالتے ہیں۔ اس وجہ سے ہسپتالوں اور کلنک میں اس کے مرکبات (مثلاً پائیوڈین) بطور جراثیم کش اور ضد عفونت کثرت سے استعمال ہوتے ہیں۔ محلول کی حالت میں آیوڈ کا رنگ بھورا ہوتا ہے۔
  • اگر کسی کو thyroid کا سرطان (کینسر) ہو جائے تو علاج کے لیے اسے آیوڈین131 ملا پانی پلاتے ہیں۔ یہ آیوڈ قدرتی طور پر نہیں پائی جاتی اور نویاتی معمل میں قدرتی آیوڈ پر تعدیلے (neutron) کی بمباری کر کے حاصل کی جاتی ہے۔ اس کی نصف حیات صرف آٹھ دن ہوتی ہے۔ انسانی جسم میں داخل ہونے والی ہر آیوڈ thyroid غدود میں مرتکز ہوتی ہے۔ یہ چونکہ تابکار ہوتی ہے اس لیے thyroid کے سرطان کو جلا دیتی ہے۔

حوالے[ترمیم]