این ای ڈی یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
این ای ڈی یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی
این ای ڈی یونی ورسٹی برائے انجینئیرنگ اینڈ ٹیکنالوجی
 

معلومات
تاسیس 1921ء (1921ء)
الحاق ہائیر ایجوکیشن کمیشن آف پاکستان، پاکستان انجینئرنگ کونسل، واشنگٹن معاہدہ (اسناد)
نوع Public
محل وقوع
إحداثيات 24°55′54″N 67°06′46″E / 24.931792°N 67.112646°E / 24.931792; 67.112646  ویکی ڈیٹا پر (P625) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہر کراچی
ملک پاکستان
ناظم اعلی
ممتحن جناب سید غضنفر حسین (رجسٹرار)
صدر سروش حشمت لودھی (وائس چانسلر)
ریکٹر گورنر سندھ
نائب صدر پروفیسر ڈاکٹر محمد طفیل (پرو وائس چانسلر)
شماریات
اساتذہ 451
طلبہ و طالبات کل تعداد : 12271

انڈر گریجویٹ: 9496 پوسٹ گریجویٹ: 2643

ڈاکٹریٹ: 122 (سنة ؟؟)
رنگ    
ویب سائٹ www.neduet.edu.pk
Map

این ای ڈی یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی (انگریزی: NED University of Engineering and Technology) پاکستان کی ایک فنی علوم کی جامعہ ہے۔[1] این ای ڈی یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی ایک پبلک یونیورسٹی ہے جو کراچی، سندھ، پاکستان کے شہری علاقے میں واقع ہے۔ یہ پاکستان کی سب سے قدیم اور بہترین انجینئرنگ یونیورسٹیوں میں سے ایک ہے، جو اپنے بہترین تدریسی طریقوں اور گریجویٹس کے لیے دنیا بھر میں تسلیم کی جاتی ہے۔

پرنس آف ویلز انجینئرنگ کالج کے طور پر قائم کی گئی، اس کا نام پارسی سماجی رہنما اور اس کے محسن نادرشا ایڈولجی ڈنشا کے نام پر رکھا گیا۔ یہ پاکستان کی ایک تسلیم شدہ ڈگری دینے والی یونیورسٹی ہے جو حکومت کے مقرر کردہ ادارہ ہائر ایجوکیشن کمیشن آف پاکستان سے وابستہ ہے۔

تاریخ[ترمیم]

آزادی سے پہلے[ترمیم]

سکھر بیراج کی تعمیر میں کام کرنے والے سول انجینئرز کو تربیت فراہم کرنے کے لیے پرنس آف ویلز انجینئرنگ کالج کے طور پر سنہ 1921ء میں قائم کیا گیا۔ سنہ 1924ء میں، کالج کو نادرشاہ ایڈولجی ڈنشا کے ورثاء سے 150,000 روپے کا عطیہ ملا۔ نتیجتاً کالج کا نام بدل کر این ای ڈی گورنمنٹ انجینئرنگ کالج رکھ دیا گیا۔ این ای ڈی کالج سنہ 1947ء تک برطانوی سلطنت کے دوران کئی سالوں تک بمبئی یونیورسٹی (اب ممبئی یونیورسٹی کے نام سے جانا جاتا ہے) سے وابستہ رہا۔

آزادی کے بعد[ترمیم]

یہ یونیورسٹی برطانوی حکومت کے قائم ہونے کے بعد اپنی جدید شکل میں آئی اور سنہ 1947ء میں حکومت سندھ نے اسے اپنی تحویل میں لے لیا۔ سنہ 1947ء میں پاکستان کی آزادی کے بعد جیسے جیسے کراچی ترقی کرتا گیا اور پرانا 'سٹی کیمپس' بہت زیادہ پر ہجوم ہو گیا، سنہ 1975ء میں یونیورسٹی روڈ، کراچی پر اس کے موجودہ مقام پر ایک نیا 'مین کیمپس' تعمیر کیا گیا۔ آخر کار یکم مارچ 1977ء کو این ای ڈی گورنمنٹ انجینئرنگ کالج کو انجینئرنگ یونیورسٹی کا درجہ دیا گیا۔ اس یونیورسٹی کا نام اس کے محسن نادرشا ایڈولجی ڈنشا کے نام پر رکھا گیا ہے۔

کیمپسز[ترمیم]

یونیورسٹی چار کیمپس میں پھیلی ہوئی ہے۔

مین کیمپس (کراچی)،

سٹی کیمپس،

ایل ای جے کیمپس اور

تھر کیمپس۔

پیش کردہ ڈگری پروگرام[ترمیم]

این ای ڈی یونیورسٹی مختلف انڈرگریجویٹ، پوسٹ گریجویٹ اور پی ایچ ڈی پروگرام پیش کرتی ہے۔ یونیورسٹی انڈر گریجویٹ، پوسٹ گریجویٹ اور ڈاکٹریٹ کی تعلیم کے لیے انجینئرنگ، سائنس اور فن تعمیر میں پروگرام پیش کرتی ہے۔ ہر سال این ای ڈی یونیورسٹی انٹرمیڈیٹ سے لے کر آگے تک کے بیرونی طلبہ کے لیے کچھ خاص کورسز میں داخلہ لینے کے لیے بھی پیش کرتی ہے۔ مثال کے طور پر ڈپلوما، پروگرامنگ کا کورس یا مصنوعی ذہانت۔ یہ یونائیٹڈ کنگڈم کی ایسوسی ایشن آف کامن ویلتھ یونیورسٹیز کا رکن ہے۔

فیکلٹیز اور ڈیپارٹمنٹس[ترمیم]

اسے مندرجہ ذیل چھ فیکلٹیوں میں منظم کیا گیا ہے۔

فیکلٹی آف سول اینڈ پیٹرولیم انجینئرنگ (CPE)[ترمیم]

سول اور پیٹرولیم انجینئرنگ کی فیکلٹی مندرجہ ذیل ڈیپارٹمنٹ پر مشتمل ہے۔

سول انجینئرنگ

شہری اور انفراسٹرکچر انجینئرنگ 

پیٹرولیم انجینئرنگ

ارتھ کویک انجینئرنگ

مکینیکل اور مینوفیکچرنگ انجینئرنگ کی فیکلٹی (MME)[ترمیم]

مکینیکل اور مینوفیکچرنگ انجینئرنگ کی فیکلٹی مندرجہ ذیل شعبوں پر مشتمل ہے۔

مکینیکل انجینئرنگ

•  ٹیکسٹائل انجینئرنگ

صنعتی اور مینوفیکچرنگ انجینئرنگ

آٹوموٹیو اور میرین انجینئرنگ

فیکلٹی آف الیکٹریکل اینڈ کمپیوٹر انجینئرنگ (ای سی ای)[ترمیم]

الیکٹریکل اور کمپیوٹر انجینئرنگ کی فیکلٹی مندرجہ ذیل شعبوں پر مشتمل ہے۔

الیکٹریکل انجینئرنگ 

کمپیوٹر اور انفارمیشن سسٹم انجینئرنگ

الیکٹرانک انجینئرنگ

ٹیلی کمیونیکیشن انجینئرنگ

بائیو میڈیکل انجینئرنگ

فیکلٹی آف انفارمیشن سائنسز اینڈ ہیومینٹیز (ISH)[ترمیم]

فیکلٹی آف انفارمیشن سائنسز اینڈ ہیومینٹیز میں درج ذیل شعبہ جات شامل ہیں۔

سافٹ ویئر انجینئرنگ

کمپیوٹر سائنس اور انفارمیشن ٹیکنالوجی

شعبہ ریاضی

شعبہ طبیعیات

شعبہ کیمسٹری

شعبہ ہیومینٹیز

فیکلٹی آف کیمیکل اینڈ پروسیس انجینئرنگ (سی پی ای)[ترمیم]

کیمیکل اور پروسیس انجینئرنگ کی فیکلٹی مندرجہ ذیل شعبوں پر مشتمل ہے۔

کیمیکل انجینئرنگ

میٹریلز انجینئرنگ

میٹالرجیکل انجینئرنگ

پولیمر اور پیٹرو کیمیکل انجینئرنگ

•  فوڈ انجینئرنگ

ماحولیاتی انجینئرنگ

فیکلٹی آف آرکیٹیکچر اینڈ مینجمنٹ سائنسز (AMS)[ترمیم]

آرکیٹیکچر اور مینجمنٹ سائنسز کی فیکلٹی مندرجہ ذیل شعبوں پر مشتمل ہے۔

شعبہ تعمیرات اور منصوبہ بندی

شعبہ معاشیات اور مینجمنٹ سائنسز

الحاق شدہ کالجز[ترمیم]

• گورنمنٹ کالج آف ٹیکنالوجی

• انسٹی ٹیوٹ آف انڈسٹریل الیکٹرانکس انجینئر

• انسٹی ٹیوٹ آف ایوی ایشن ٹیکنالوجی، پی اے ایف

• پی سی ایس آئی آر: پاک سوئس ٹریننگ سینٹر

• کراچی ٹولز، ڈائز اینڈ مولڈ سینٹر

• پاکستان میرین اکیڈمی

• عثمان انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی

• کالج آف مینجمنٹ سائنسز

این ای ڈی اکیڈمی[ترمیم]

موجودہ پیشہ ور افراد کو کم لاگت تعلیمی اور پیشہ ورانہ تربیت فراہم کرنے کے لیے، این ای ڈی یونیورسٹی نے این ای ڈی اکیڈمی قائم کی۔ اکیڈمی کے دو حصے ہیں:

• سینٹر فار کنٹینیونگ انجینئرنگ ایجوکیشن (CCEE)،

• سینٹر فار ملٹی ڈسپلنری پوسٹ گریجویٹ پروگرام (CMPP)۔

سی سی ای ای (CCEE)[ترمیم]

انجینئرنگ، انفارمیشن ٹیکنالوجی، مینجمنٹ اور تبادلوں کے پروگرام کے لیے کورسز پیش کرتا ہے۔ ان مضامین میں مختصر اور طویل دورانیے کے کورسز پیش کیے جاتے ہیں۔ یہ اس لیے پیش کیا جاتا ہے تاکہ پیشہ ور افراد، اساتذہ اور طلبہ اعلیٰ سطح کی تحقیق، معلومات اور تجربہ حاصل کریں۔ یہ ان کی مہارتوں، علم اور تکنیک کو بڑھا کر انھیں بااختیار بناتا ہے۔ سی سی ای ای نئے پریکٹیشنرز کو اکٹھا کرنے اور انجینئرنگ ٹیلنٹ، ٹیکنالوجی اور کام کرنے والے انجینئرز کے معیار کے تجربے کو بہتر بنانے کے مواقع کو اپ ڈیٹ کرنے کے لیے مختصر کورسز پیش کرتا ہے۔

تحقیق[ترمیم]

اگرچہ یونیورسٹی کی بنیادی توجہ اس کے تدریسی پروگراموں پر مرکوز تھی، لیکن یونیورسٹی نے ریسرچ اور پی ایچ ڈی پروگراموں کے ذریعے ماسٹرز شروع کیے ہیں۔ یونیورسٹی میں مختلف ریسرچ گروپس اور سینٹرز بھی کام کر رہے ہیں۔ یونیورسٹی تین تحقیقی جریدے شائع کرتی ہے یعنی NED یونیورسٹی جرنل آف ریسرچ، جرنل آف سوشل سائنسز اینڈ انٹر ڈسپلنری ریسرچ، جرنل آف ریسرچ ان آرکیٹیکچر اینڈ پلاننگ۔

وائس چانسلرز[ترمیم]

• سروش حشمت لودھی (2017 – موجودہ)

• اے ایم اخوند

• پروفیسر ڈاکٹر عبد التواب خان (اے ٹی خان)

• پروفیسر ڈاکٹر جمیل احمد خان

• پروفیسر ڈاکٹر ایم منیر حسن

• پروفیسر ڈاکٹر اے کیو قاضی

• انجینئر ابوالکلام

• پروفیسر ڈاکٹر ایم افضل حق

ممبرشپ اور ایسوسی ایشنز[ترمیم]

این ای ڈی یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی درج ذیل کوالٹی نیٹ ورکس کا ادارہ جاتی رکن ہے۔

• ایشیا پیسیفک کوالٹی نیٹ ورک (APQN)

• ٹیلوئرز نیٹ ورک ,(نیا)

• بین الاقوامی نیٹ ورک برائے کوالٹی ایشورنس ایجنسیز ان ہائر ایجوکیشن (INQAAHE)

• پاکستان نیٹ ورک آف کوالٹی ایشورنس ان ہائر ایجوکیشن (PNQAHE)

قابل ذکر سابق طلبہ[ترمیم]

• محمد ظہور، یوکرین میں مقیم، برطانوی تاجر - ISTIL گروپ کے بانی اور مالک۔ (اسٹیل مین بھی کہا جاتا ہے)۔

• اشرف حبیب اللہ، پہلی کمپیوٹر پر مبنی سٹرکچرل-انجینئرنگ ایپلی کیشنز کے شریک تخلیق کار اور سٹرکچرل-انجینئرنگ سافٹ ویئر کمپنی Computers and Structures, Inc کے بانی، صدر اور سی ای او۔

• محمد حسین پنہور: زراعت کے شعبے میں پاکستانی سائنس دان

خرم مراد: پاکستانی اسلامی اسکالر

• رضوان احمد: پاکستان ایڈمنسٹریٹو سروس آفیسر، این ای ڈی یونیورسٹی کے سابق طالب علم

• معیز اللہ بیگ (بین الاقوامی سکریبل کھلاڑی - پاکستان سکریبل چیمپئن 2018 اور ورلڈ جونیئر اسکریبل چیمپئن 2018)

سید مراد علی شاہ: سندھ کے 29ویں اور موجودہ وزیر اعلیٰ اور سندھ اسمبلی کے رکن۔

الٰہی بخش سومرو: پاکستان کی قومی اسمبلی کے سابق سپیکر۔

• محمد اسلم عقیلی: وائس چانسلر مہران یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی۔

سعید انور: بین الاقوامی کرکٹ کھلاڑی، پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان۔

• علی حیدر: موسیقار، گلوکار اور اداکار۔

• حسن صہیب مراد: یونیورسٹی آف مینجمنٹ اینڈ ٹیکنالوجی اور ILM ٹرسٹ کے بانی۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. انگریزی ویکیپیڈیا کے مشارکین۔ "NED University of Engineering and Technology"