ترکی میں اردو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پاکستان پوسٹ کا ترکی میں اردو تعلیم کے سو سال پورے ہونے پر، جاری کردہ 10 روپے مالیت کا یادگاری ڈاک ٹکٹ

ترکی میں تقریبًا 25 سال کے لیے اردو کی تعلیم پر پابندی لگادی گئی تھی۔ یہ عرصہ اس نوخیز جمہوریہ کے وجود میں آنے کا زمانہ تھا۔ تاہم بعد میں یہ پابندی ہٹادی گئی۔

جامعاتی سطح پر اردو تعلیم[ترمیم]

موجودہ دور میں استنبول اور کئی بڑے شہروں کی یونیورسٹیوں میں اردو کی تعلیم کی سہولت موجود ہے۔

مذہبی حلقوں میں اردو کی مقبولیت[ترمیم]

اردو میں مذہبی ادب کے عظیم ذخیرے کی دستیابی کی وجہ سے اردو کو عزت کی نگاہوں سے دیکھا جاتا ہے۔ کچھ ترک علما نے برصغیر میں اپنی تعلیم پوری کی اور اردو تصانیف کے ترک تراجم کیے۔ ان ہی میں سے ایک یوسف کراجا (Yusuf Karaca) ہیں۔ انہوں نے دار العلوم ندوۃ العلماء سے زانوئے تلمذ طے کیا تھا۔ وہ تفہیم القرآن کے ترکی میں ترجمہ کرنے والے بورڈ کے رکن تھے۔ انہوں نے بال جبریل، علامہ شبلی نعمانی اور مولانا ابو الحسن علی حسنی ندوی کی تصانیف کا ترکی ترجمہ بھی کیا۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]