مینا شوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Meena Shorey
معلومات شخصیت
پیدائش 15 ستمبر 1921[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رائے ونڈ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 1989 (67–68 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ ادکارہ،  فلم اداکارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مینا شورے (پیدائش:13 ستمبر 1926ء |وفات:3 ستمبر 1989ء) ایک پاکستانی فلمی اداکارہ تھیں جنہوں نے اپنے کیرئیر کا آغاز ہندوستانی سنیما سے کیا اور بعد میں پاکستانی سنیما میں بھی کام کیا۔ وہ ہندی / اردو اور پنجابی فلموں میں نظر آئیں۔ فلموں میں اس نے اپنے فلمی نام "مینا" استعمال کیا جبکہ اس کا اصل نام خورشید جہاں تھا۔ انہوں نے اپنے اداکاری کے کیریئر کا آغاز سہراب مودی کی فلم سکندر (1941ء) میں ٹیکسلا کی بہن امبھی کی حیثیت سے، ایک کردار ادا کرتے ہوئے کیا تھا۔ سن 1940ء کی دہائی کے وسط تک اپنے تیسرے شوہر روپ کے شورے سے شادی کی۔ انہوں نے اپنے شوہر کی فلم ایک تھی لڑکی (1949ء) میں اداکاری کی۔ اس فلم میں ان کے مدمقابل اداکارموتی لال تھے۔ اس فلم سے انہوں نے بہت شہرت پائی۔ اس کہانی کو آئی ایس جوہر نے لکھا تھا، جس نے اس فلم میں اداکاری بھی کی تھی۔ ونود نے اس فلم کی موسیقی ترتیب دی۔ یہ موسیقی ایک "زبردست ہٹ" بن گئی، مینا "نئی آزاد" نوجوان خواتین کے لئے "آئیکون" بن گئیں۔ فلم میں اسی عنوان کے گانے سے، مینا کو "لارا لپا گرل" کی حیثیت سے سراہا گیا تھا۔ [2] وہ ہندوستان کی سنیما میں پہچاننے والی پہلی خواتین میں سے ایک تھیں جنہیں ایک "کامیڈیئن کیلیبر" کے طور پر پہچانا جاتا تھا۔ [3]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

مینا کا اصل نام خورشید جہاں تھا اور ان کی پیدائش 17 نومبر 1921ء کو پنجاب کے شہر رائیونڈ، برطانوی ہندوستانمیں ہوئی۔ وہ چار بچوں میں سے دوسرے نمبر پر تھیں۔ اس کا کنبہ غریب تھا اور اس کے والد کے پاس چھوٹی چھوٹی جائیدادیں تھی۔اس کے بعد اس نے لاہور میں رنگسازی کے کاروبار میں کام کیا، جو ناکام رہا۔ مینا کی بڑی بہن وزیر بیگم، جو شادی شدہ تھیں اور بمبئی میں رہتی تھیں، ان کی والدہ اور بہن بھائی وہاں آئے تھے۔ سہراب مودی نے اپنی فلم سکندر (1941ء) کی رونمائی کے موقع پر خورشید جہاں کو دیکھا، جس میں انہوں نے اپنی بھابھی کے ساتھ شرکت کی تھی، اور انہیں اس کا نیا فلمی نام "مینا" دیتے ہوئے فلم میں معاون کردار کی پیش کش کی تھی۔ [4]

کیریئر[ترمیم]

ہندوستان میں[ترمیم]

فلم انڈیا میں اگست 1949 میں ایک تھی لڑکی کا اشتہار

1941ء میں سکندر نام کی پہلی فلم میں مینا نے اداکاری کی تھی، جس میں انھوں نے ٹیکسلا کے بادشاہ کی چھوٹی بہن کا کردار ادا کیا تھا۔۔ [3] یہ ایک تاریخی فلم تھی جس میں سکندر کے ذریعہ جہلم کے خطے میں ہندوستان پر حملہ ہوا تھا۔ اس کی ہدایتکاری سہراب مودی نے کی تھی اور اس نے سکندر کا کردار پرتھوی راج کپور کو دیا تھا۔ فلم "آل انڈیا ہٹ" بن گئی اور اس کے لئے فوری لانچنگ پیڈ فراہم کیا۔ اس فلم کے بعد اس کو یکے بعد دیگرے فلموں کی آفر آتی رہیں۔ اس فلم کے فورا بعد اس نے تین فلموں "پھر ملینگے (1942ء)، "پرتھوی بھلا" (1943ء) اور "پتھروں کا سوداگر" میں کام کیا۔ [5]

پاکستان میں[ترمیم]

روپ کے شورے اور مینا کو پاکستانی فلم پروڈیوسر جے سی آنند نے فلم بنانے کے لئے مدعو کیا تھا۔ مس 1956ء (1956ء) گرو دت کے مسٹر اینڈ مسز '55 (1955ء) کا سرقہ کا ورژن تھا اور اس میں مینا شورے، سنتوش کمار، شمیم آرا، اور نور محمد چارلی نے اداکاری کی تھی۔ [6] اس فلم کی موسیقی جی اے چشتی نے ترتیب دی تھی۔ مینا کا لاہور میں خیرمقدم کیا گیا تھا اور اس نے اپنے شوہر کے ہندوستان واپس چلے جانے کے باوجود پاکستان میں ہی رہنے کا فیصلہ کیا تھا۔ وہ لکس صابن کے لئے ماڈلنگ کرنے والی پہلی پاکستانی اداکارہ بن گئیں اور "پاکستان کی لکس لیڈی" کے نام سے مشہور ہوگئیں۔ [4]

ذاتی زندگی[ترمیم]

مینا کے بارے میں پانچ بار شادی کرنے کی اطلاعات ہیں۔ [7]

  1. ان کی پہلی شادی اداکار پروڈیوسر-ہدایتکار ظہور راجہ سے ہوئی۔ فلم انڈیا میں اپریل 1942ء میں، ظہور راجہ کے ساتھ ایک انٹرویو میں ذکر کیا گیا تھا کہ ظہور اور مینا کی شادی "چھ ماہ" پہلے ہی ہو چکی تھی۔ فلم سکندر کی شوٹنگ کے دوران میں دونوں کی ملاقات ہوئی اور محبت ہو گئی۔ "ظہور نے 6 ماہ پہلے ہی مینا سے شادی کر لی تھی، مینا جو ایک خوبصورت اداکارہ ہیں جو شاید اپنی آخری فلم "پھر ملیں گے" میں ادکاری کر رہی ہیں۔
  2. اس کی دوسری شادی ساتھی اداکار، الناصر سے ہوئی تھی۔ وہ 40ء کی دہائی کے وسط تک اس سے الگ ہوگئیں، اور الناصر نے اداکارہ وینا سے شادی کی۔ بابوراؤ پٹیل نے فلم انڈیا کے اگست 1946ء میں ایک کالم میں مینا کے سابقہ شوہروں میں سے ایک کے طور پر ان کا تذکرہ کیا، "فلم اداکارہ مینا کے سابقہ شوہر، الناصر اب پنجاب کی فلمی اداکارہ منورما سے شادی شدہ ہیں"۔
  3. اس کی تیسری شادی روپ کے شورے سے ہوئی تھی جو 1956ء تک قاءم رہی۔ ان کی شادی لگ بھگ 7–8 سال قائم رہی اور اس حقیقت کی وجہ سے کہ انہوں نے صرف اس عرصے میں وہ اس کی بیوی ہونے کی وجہ سے کامیابی حاصل کرتی رہیں۔ وہ اپنے تیسرے شوہر کے نام سے ہی جانی جانے لگیں۔ وہ پاکستان کے کامیاب سفر کے بعد الگ ہوگئے، جب مینا نے پاکستان میں ہی رہنے کا فیصلہ کیا، جب کہ اس کا ہندو شوہر روپ شوری ہندوستان واپس چلا گیا۔
  4. اس کی چوتھی شادی پاکستانی رہائشی رضا میر سے ہوئی
  5. اس کی پانچویں شادی فلم جمالو (1962) میں اس کے شریک اداکار اسد بخاری سے ہوئی۔ [4]

وفات[ترمیم]

پاکستان میں، مینا نے اپنی زندگی کے آخری دن غربت میں بسر کئے۔ اور انہیں 1974–75ء کے بعد زندہ رہنے کے لئے بہت تگ و دو کرنا پڑی۔ [8] اس کی موت کے بعد، اس کی تدفین کا انتظام خیراتی رقم سے کیا گیا تھا۔ وہ 3 ستمبر 1989ء کو لاہور، پنجاب، پاکستان میں انتقال کر گئیں۔ [9]<ref name="Bali">Bali، Karan. "Profile: Meena Shorey". upperstall.com. Upperstall. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2019.  Bali, Karan. "Profile: Meena Shorey"۔ upperstall.com۔ Upperstall۔ Retrieved 25 ستمبر 2019۔</ref

وفات[ترمیم]

3 ستمبر 1989ء کو لاہور میں وفات پائی، وہیں تدفین ہوئی،

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ربط : آئی ایم ڈی بی - آئی ڈی  — اخذ شدہ بتاریخ: 20 جون 2019
  2. Sanjit Narwekar (12 دسمبر 2012). "13-The Image Manipulators". Eena Meena Deeka: The Story of Hindi Film Comedy. Rupa Publications. صفحات 182–. ISBN 978-81-291-2625-2. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2019. 
  3. ^ ا ب Sanjit Narwekar (12 دسمبر 2012). "14-The Female Of The Species". Eena Meena Deeka: The Story of Hindi Film Comedy. Rupa Publications. صفحات 182–. ISBN 978-81-291-2625-2. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2019. 
  4. ^ ا ب پ Bali، Karan. "Profile: Meena Shorey". upperstall.com. Upperstall. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2019. 
  5. Patel، Sushila Rani (1952). Stars Of The Indian Screen. Bombay, India: Parker & Sons Ltd. صفحہ 33. 
  6. Mushtāq Gazdar (1997). Pakistan Cinema, 1947–1997. Oxford University Press. ISBN 978-0-19-577817-5. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2019. 
  7. Illustrated Weekly of Pakistan. 51-52. 21. Pakistan Herald Publications. 1969. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2019. 
  8. From circa late-1970s till 1987, late Pakistani film director/producer انور کمال پاشا was a loyal friend and often helped her out financially as much as he could, but after his death she was left utterly destitute.
  9. "Meena Shorey". Muvyz.com website. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2019. 

بیرونی روابط[ترمیم]