ناظمہ سلطان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
ناظمہ سلطان
(عثمانی ترک میں: ناظمه سلطان‎ ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Nazime Sultan.png
 

معلومات شخصیت
پیدائش 14 فروری 1866  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 9 نومبر 1947 (81 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بیروت  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ (1866–1923)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد عبد العزیز اول  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ حیران دل قادین افندی  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
دیگر معلومات
پیشہ ارستقراطی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عثمانی ترکی،  عربی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ناظمہ سلطان ( عثمانی ترکی زبان: ناظمہ سلطان ; پیدائش: 14 فروری 1867 - ت 1947ء) ایک عثمانی شہزادی تھی، جو عثمانی سلطان عبدالعزیز اور حیران دل قادین افندی کی بیٹی تھی۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

ناظمہ سلطان 14 فروری 1867ء [1] کو دولماباغچہ محل میں پیدا ہوئیں۔ [2] اس کے والد سلطان عبدالعزیز تھے اور ان کی والدہ کا نام حیران دل قادین افندی تھا۔ وہ اپنے باپ کی تیسری بیٹی اور ماں کی پہلی اولاد تھی۔ وہ مستقبل کے خلیفہ عبدالمجید دوم کی بڑی بہن تھیں۔ [3] [4] وہ محمود دوم اور پرتیونیال سلطان کی پوتی تھیں۔ [5] اس کے والد عبدالعزیز کو اس کے وزراء نے 30 مئی 1876ء کو معزول کر دیا اور اس کا بھتیجا مراد پنجم سلطان بن گیا۔ [6] اگلے دن اسے فریئے پیلس منتقل کر دیا گیا۔ [7] اس کی والدہ، اور عبدالعزیز کے وفد کی دیگر خواتین ڈولماباہی محل چھوڑنا نہیں چاہتی تھیں۔ چنانچہ انہیں ہاتھ سے پکڑ کر فریئے محل میں بھیج دیا گیا۔ اس عمل میں سر سے پاؤں تک ان کی تلاشی لی گئی اور ان سے قیمتی ہر چیز چھین لی گئی۔ [2] 4 جون 1876ء کو، [8] عبدالعزیز پراسرار حالات میں انتقال کر گئے۔ [2]

دس سالہ لڑکی ناظمہ سلطان اپنی ماں اور آٹھ سالہ بھائی کے ساتھ فریئے محل میں رہتی تھی۔ [9] برسوں بعد عادل سلح بے کو انٹرویو دیتے ہوئے ناظم نے کہا:

شادی[ترمیم]

1889ء میں سلطان عبدالحمید دوم نے اپنی دو بہنوں شہزادیوں صالحہ سلطان اور اسماء سلطان کے ساتھ ساتھ اس کی اپنی بیٹی ذکیئے سلطان کے ساتھ مل کر اس کی پتلون اور شادی کا اہتمام کیا۔ [2] اس نے 20 اپریل 1889ء کو یلدز محل میں ابراہیم درویش پاشا کے بیٹے علی حلد پاشا سے شادی کی۔ [4] [3] [5] جوڑے کو ان کی رہائش گاہ کے طور پرایک محل دیا گیا، جسے ناظمہ سلطان محل کہا جاتا ہے۔ [10] یہاں اس کے پاس مذہبی موسیقی کے فنکار تھے۔ [11] اس کی کوئی اولاد نہیں تھی۔

جلاوطنی[ترمیم]

1924ءمیں شاہی خاندان کو جلاوطنی پر بھیجے جانے کے بعد، ناظمہ اور اس کے شوہر جونیہ، لبنان میں آباد ہو گئے۔ [5] یہاں دونوں ایک بڑی حویلی میں رہتے تھے جس کے چاروں طرف باغ تھا۔ [12]

موت[ترمیم]

ناظمہ سلطان کا مقبرہ

ناظم کا انتقال 1947ء میں لبنان کے شہر جونیہ میں ہوا۔ وہ عبدالعزیز کی آخری زندہ بچ جانے والی اولاد تھی۔ انہیں تکیہ سلیمانیہ قبرستان، دمشق، شام میں دفن کیا گیا۔ اس کے شوہر ایک سال زندہ رہے اور 1948ء میں مکہ، سعودی عرب میں انتقال کر گئے۔ [5]

اعزازات[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Uçan، Lâle (2019). Dolmabahçe Sarayı'nda Çocuk Olmak: Sultan Abdülaziz'in Şehzâdelerinin ve Sultanefendilerinin Çocukluk Yaşantılarından Kesitler. FSM İlmî Araştırmalar İnsan ve Toplum Bilimleri Dergisi. صفحہ 232. 
  2. ^ ا ب پ ت Brookes 2010.
  3. ^ ا ب Uluçay 2011.
  4. ^ ا ب Sakaoğlu 2008.
  5. ^ ا ب پ ت Adra، Jamil (2005). Genealogy of the Imperial Ottoman Family 2005. صفحات 16. 
  6. Zürcher، Erik J. (اکتوبر 15, 2004). Turkey: A Modern History, Revised Edition. I.B.Tauris. صفحہ 73. ISBN 978-1-85043-399-6. 
  7. Shaw، Stanford J.؛ Shaw، Ezel Kural (1976). History of the Ottoman Empire and Modern Turkey: Volume 2, Reform, Revolution, and Republic: The Rise of Modern Turkey 1808–1975, Volume 11. Cambridge University Press. صفحہ 164. ISBN 978-0-521-29166-8. 
  8. Davison، Roderic H. (دسمبر 8, 2015). Reform in the Ottoman Empire, 1856–1876. Princeton University Press. صفحہ 341. ISBN 978-1-4008-7876-5. 
  9. Şerofoğlu، Ömer Faruk (2004). Abdülmecid Efendi, Ottoman prince and painter. YKY. صفحہ 24. ISBN 978-9-750-80883-8. 
  10. Barillari، Diana (1 جنوری 1996). Istanbul 1900: Art-nouveau Architecture and Interiors. Random House Incorporated. صفحہ 88. ISBN 978-0-8478-1989-8. 
  11. Fanny Davis (1986). The Ottoman Lady: A Social History from 1718 to 1918. Greenwood Publishing Group. صفحات 158. ISBN 978-0-313-24811-5. 
  12. Bardakçı، Murat (2017). Neslishah: The Last Ottoman Princess. Oxford University Press. صفحہ 176. ISBN 978-9-774-16837-6. 
  13. ^ ا ب Yılmaz Öztuna (1978). Başlangıcından zamanımıza kadar büyük Türkiye tarihi: Türkiye'nin siyasî، medenî، kültür, teşkilât ve san'at tarihi. Ötüken Yayınevi. صفحہ 165. 

ذرائع[ترمیم]

  • Brookes، Douglas Scott (2010). The Concubine, the Princess, and the Teacher: Voices from the Ottoman Harem. University of Texas Press. ISBN 978-0-292-78335-5. 
  • Sakaoğlu، Necdet (2008). Bu mülkün kadın sultanları: Vâlide sultanlar, hâtunlar, hasekiler, kadınefendiler, sultanefendiler. Oğlak Yayıncılık. ISBN 978-9-753-29623-6. 
  • Uluçay، Mustafa Çağatay (2011). Padişahların kadınları ve kızları. Ankara: Ötüken. ISBN 978-9-754-37840-5.