امینہ سلطان (دختر عبد العزیز اول )

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
امینہ سلطان (دختر عبد العزیز اول )
(عثمانی ترک میں: امینه سلطان‎ ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش 24 اگست 1874  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 30 جنوری 1920 (46 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن مقبرہ محمود ثانی  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شریک حیات محمد شریف پاشا  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعداد اولاد
والد عبد العزیز اول  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ نسرین قادین افندی  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
اسما سلطان،  ناظمہ سلطان،  محمد شوکت افندی،  محمد سیف الدین افندی  ویکی ڈیٹا پر (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر معلومات
پیشہ ارستقراطی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عثمانی ترکی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

امینہ سلطان (عثمانی ترکی زبان: امینہ سلطان ; 24 اگست 1874ء - 30 جنوری 1920ء) ایک عثمانی شہزادی تھی، جو عثمانی سلطان عبدالعزیز اور نسرین قادن کی بیٹی تھی۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

ایمن سلطان 24 اگست 1874ء کو دولمابہچے محل میں پیدا ہوئیں۔ [1] [2] ان کے والد سلطان عبدالعزیز تھے، جو سلطان محمود دوم اور پرتیونیال سلطان کے بیٹے تھے اور ان کی والدہ نسرین قادین تھیں، جو شہزادہ اسماعیل زیو بارکے کی بیٹی تھیں۔ [1] [2] وہ اپنے والد کی سب سے چھوٹی بیٹی اور ماں کی دوسری اولاد تھیں۔ ان کا نام ان کے والد کی پچھلی شادی سے ان کی سوتیلی بہن کے نام پر رکھا گیا تھا، جو بچپن میں ہی مر گئی تھی۔ وہ شہزادے محمد شوکت کی چھوٹی بہن تھی۔ [2] [1]

ان کے والد عبدالعزیز کو اس کے وزرا نے 30 مئی 1876ء کو معزول کر دیا، ان کا بھتیجا مراد پنجم سلطان بن گیا۔ [3] اگلے دن انہیں فریئے پیلس منتقل کر دیا گیا۔ [4] عبدالعزیز کے وفد کی خواتین ڈولماباہی محل چھوڑنا نہیں چاہتی تھیں۔ چنانچہ انہیں ہاتھ سے پکڑ کر فریئے محل میں بھیج دیا گیا۔ اس عمل میں سر سے پاؤں تک ان کی تلاشی لی گئی اور ان سے قیمتی ہر چیز چھین لی گئی۔ [5] 4 جون 1876ء کو، [6] عبدالعزیز پراسرار حالات میں انتقال کر گئے۔ [5]

ان کی والدہ کا انتقال کچھ دنوں بعد، 11 جون 1876ن کو ہوا، [1] جب امینہ سلطان ابھی دو سال کی نہیں ہوئی تھی، ان کے بڑے بھائی ولی عہد شہزادہ یوسف عزالدین نے انہیں اپنے گھر میں پالا تھا۔ [1] [2] [5]

شادی[ترمیم]

سلطان عبدالحمید دوم نے فیصلہ کیا کہ ان کا بیٹا شہزادہ محمد عبدالقادر امینہ سلطان سے شادی کرے گا، تاہم امینہ نے اس فیصلے کو ناپسند کیا اور اسے مسترد کر دیا کیوں کہ وہ اپنے سے چھوٹے کے ساتھ شادی نہیں کرنا چاہتی تھیں، حالاں کہ سلطان نے اسے مناسب سمجھا۔ [7]

1901ء میں، عبدالحمید نے سلطان مراد پنجم کی دو بیٹیوں، شہزادی خدیجہ سلطان اور فہیمہ سلطان کے ساتھ مل کر جہیزاور شادی کا اہتمام کیا۔ [5] ستائیس سال کی عمر میں، ان کی شادی محمد شریف پاشا سے 3 ستمبر 1901ء کو یلدز محل میں ہوئی۔ [1] [2] محمد شریف پاشا ایک عالم تھے جو مشرقی تاریخ اور ادب سے واقف تھے، وہ اپنے تراجم کے لیے مشہور تھے۔ [8] جوڑے کو کارسیکاپی میں واقع محمد صادق پاشا کا محل دیا گیا۔ [1]

موت[ترمیم]

ایمن سلطان کا انتقال 30 جنوری 1920 [5] کو پینتالیس سال کی عمر میں استنبول میں ہوا، اور انہیں سلطان محمود دوم، دیوانولو، استنبول کے مقبرے میں دفن کیا گیا۔ [2] [1]

اعزازات[ترمیم]

شجرہ نسب[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ Uluçay 2011.
  2. ^ ا ب پ ت ٹ ث Sakaoğlu 2008.
  3. Zürcher، Erik J. (اکتوبر 15, 2004). Turkey: A Modern History, Revised Edition. I.B.Tauris. صفحات 73. ISBN 978-1-85043-399-6. 
  4. Shaw، Stanford J.؛ Shaw، Ezel Kural (1976). History of the Ottoman Empire and Modern Turkey: Volume 2, Reform, Revolution, and Republic: The Rise of Modern Turkey 1808–1975, Volume 11. Cambridge University Press. صفحہ 164. ISBN 978-0-521-29166-8. 
  5. ^ ا ب پ ت ٹ Brookes 2010.
  6. Davison، Roderic H. (دسمبر 8, 2015). Reform in the Ottoman Empire, 1856–1876. Princeton University Press. صفحہ 341. ISBN 978-1-4008-7876-5. 
  7. "Sultan Abdülhamid'in Haşari Şehzadesi Abdülkâdir Efendi". www.erkembugraekinci.com. 15 اپریل 2019. اخذ شدہ بتاریخ 27 اکتوبر 2020. 
  8. "Saray'a Damat Olmak.۔۔". www.erkembugraekinci.com. 1 جولائی 2019. اخذ شدہ بتاریخ 27 اکتوبر 2020. 
  9. ^ ا ب پ Yılmaz Öztuna (1978). Başlangıcından zamanımıza kadar büyük Türkiye tarihi: Türkiye'nin siyasî، medenî، kültür, teşkilât ve san'at tarihi. Ötüken Yayınevi. صفحہ 165. 

ماخذ[ترمیم]

  • Brookes، Douglas Scott (2010). The Concubine, the Princess, and the Teacher: Voices from the Ottoman Harem. University of Texas Press. ISBN 978-0-292-78335-5. 
  • Mustafa Çağatay Uluçay (2011). Padişahların kadınları ve kızları. Ankara, Ötüken. 
  • Sakaoğlu، Necdet (2008). Bu mülkün kadın sultanları: Vâlide sultanlar, hâtunlar, hasekiler, kadınefendiler, sultanefendiler. Oğlak Yayıncılık. ISBN 978-9-753-29623-6. 
  • Uluçay، Mustafa Çağatay (2011). Padişahların kadınları ve kızları. Ankara, Ötüken.