نسائیت پسند نثر نگاروں کی فہرست

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

یہ نسائیت کے ان بڑے نثرنگاروں کی فہرست ہے جنہوں نے خواتین کے بارے میں بیان بازی کے مباحثے میں نمایاں شراکت کی ہے اور ان کی تشکیل کی ہے۔

الزبیتھ سٹینٹن[ترمیم]

الزبیتھ سٹینسن (E) انیسویں صدی کے وسط سے آخیر تک کی معروف امریکی حقوق نسواں تحریک کی رہنما تھیں۔ جنھوں نے جذبوں کا اعلامیہ (Declaration of Sentiments) لکھی۔[1] 1848ء میں لکریشیاموٹ اور بہت سے دوسری عورتوں میں کے ساتھ کر سنیکا فالز اجتماع منعقد کیا۔

ورجینیا وولف[ترمیم]

ورجینیا وولف لندن میں پیدا ہوئیں۔ وہ 13 برس کی تھیں کہ اُن کی والدہ کا انتقال ہو گیا اور وہ پہلی مرتبہ ایک بڑے نفسیاتی بحران سے دوچار ہوئیں۔ اُس کے کچھ ہی عرصے بعد وہ جنسی زیادتی کا نشانہ بنیں اور یہ واقعہ عمر بھر کے ایک روگ کی شکل اختیار کر گیا۔ ان کا لیکچروں کا مجموعہ خود کا ایک کمرہ نسائیتی ادب میں ایک اہم حیثیت رکھتا ہے۔[2]

سیمون دی بووار[ترمیم]

سيمون دی بووار (فرانسیسی: Simone de Beauvoir) ایک فرانسیسی خاتون تھیں جنہوں نے کئی کتابیں تصنیف کیں۔سیکنڈ سیکس ان کی معروف کتاب ہے، جو دو جلدوں میں 1949ء میں شائع ہوئی اور نسائیت کی دوسری لہر کا پیش خیمہ ثابت ہوئی۔[3]

ایلس واکر[ترمیم]

یلس واکر امریکا کی ناول نگار، افسانہ نگار، شاعرہ اور سماجی کارکن ہیں۔۔ 1982ء میں انہوں نے اپنا ناول دی کلر پرپل لکھا جس کے لئے انہیں نیbنل بک اوارڈ سے نوازا گیا۔ انہیں پولٹزر پرائز فار فکشن بھی ملا۔[4][5] اس کے علاوہ انہوں نے 1976ء میں میریڈین اور 1970ء میں دی تھرڈ لائف آف گرانج کوپ لینڈ جیسے ناول لکھے۔ واکر نسوانیت پسند لکھاری ہیں مگر انہوں نے اپنے لئے انگریزی لفظ (feminist) کی جگہ (womanist) منتخب کیا۔ انہوں نے اس کا مطلب “ایک سیاہ فام نسوانیت پسند یا رنگ کی نسوانیت پسند‘‘ ہے۔[6]

حوالہ جات[ترمیم]

Please note: All information referenced regarding the above female rhetoricians comes from established Wikipedia articles/pages unless otherwise stated.

  1. Quoted in McMillen, p. 239
  2. "FAQ: A Room of One's Own Publication History". Virginia Woolf Seminar. University of Alabama in Huntsville. 20 جنوری 1998ء. صفحہ 1. 24 دسمبر 2012ء میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 دسمبر 2012. 
  3. du Plessix Gray, Francine (27 مئی، 2010)، "Dispatches From the Other"، The New York Times، اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 24, 2011  Check date values in: |access-date=, |date= (معاونت)
  4. "National Book Awards – 1983"۔ National Book Foundation. Retrieved مارچ 15, 2012. (With essays by Anna Clark and Tarayi Jones from the Awards 60-year anniversary blog.)
  5. "The 1983 Pulitzer Prize Winner in Fiction". The Pulitzer Prizes. اخذ شدہ بتاریخ 25 مارچ 2019. 
  6. "Document". gseweb.gse.buffalo.edu. اخذ شدہ بتاریخ 26 مارچ 2018.