پاکستان میں نسائیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

پاکستان میں نسائیت سے مراد وہ تحریکیں ہیں جن کا مقصد پاکستان میں خواتین کے حقوق کی تعریف، شعور و آگاہی اور دفاع کرنا ہے۔ ان میں مساوی مواقع کے ساتھ مساوی سیاسی، معاشی اور معاشرتی حقوق کا حصول بھی شامل ہوسکتا ہے۔ [1][2][3] یہ تحریکیں تاریخی طور پر قومی اور عالمی سطح کی سماجی و شعوری تبدیلیوں جن میں نوآبادیاتی دور، قوم پرستی، آمریت، جمہوریت اور دہشت گردی کے خلاف جنگ شامل ہیں سے وجود میں آئیں۔ خواتین کی تحاریک اور پاکستانی ریاست کے مابین تعلقات مفاہمت سے محاذ آرائی اور تنازعات تک پھیلی ہوئی ہیں۔

پس منظر[ترمیم]

زویا رحمان کے مطابق، پاکستانی خواتین کی تصویر کی شروعات ہی سے ہی پاکستانی ریاست کی تعمیر کردہ ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ، پاکستانی عورت سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ اپنی جنس کی حفاظت کریں گے، انھیں کنٹرول کیا جاتا ہے اور جب وہ ثقافتی توقعات پر پورا نہیں اترتی ہیں تو غیرت کے نام پر قتل بھی کیا جاسکتا ہے۔ [4] عافیہ ایس ضیاء کے مطابق، یہ ثقافتی روایت پسندی ریاست، حکومت اور اس کی آئی ایس پی آر جیسے ادارے اپنے ذریعہ سے تیار اور ان چیزوں پر خرچ کی جاتی ہے، اس طرح یہ ادارے عوام پر مخصوص انداز میں اثرانداز ہوتے ہیں، یہ ان چیزوں کو سنسر کرتے ہیں جسے وہ نامناسب سمجھتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ریاست قومی بیانیہ پر قابو پانے سے باز نہیں آتی ہے اور عوامی اور نجی زندگی میں یہ فیصلہ کرنے میں دخل اندازی کرتی ہے کہ 'پاکستانی ثقافت' کے طور پر کیا جائز ہے اور کیا نہیں۔ [5]

آزادی کے بعد، پاکستان میں ایلیٹ مسلم خواتین نے قانونی اصلاحات کے ذریعے خواتین کو سیاسی طور پر بااختیار بنانے کی وکالت جاری رکھی۔ انہوں نے عوامی حمایت کو متحرک کیا، جس کے نتیجے میں 1948 میں مسلم پرسنل لا شریعت کی منظوری دی گئی، جس میں عورت کو ہر طرح کی جائداد کے وارث ہونے کے حق کو تسلیم کیا گیا۔ حکومت کی طرف سے 1956 کے آئین میں خواتین کے حقوق کا ایک میثاق شامل کرنے کی کوشش کی گئی تھی، لیکن یہ ناکام رہی۔ شادی اور طلاق کے بارے میں 1961 ء کے مسلم خاندانی قوانین کے آرڈیننس، جو پاکستان میں حقوق نسواں کی مہم چلانے کے لیے سب سے اہم معاشرتی اصلاحات ہیں، اب بھی وسیع پیمانے پر خواتین کو بااختیار بنانے کے طور پر اہم سمجھا جاتا ہے۔ [6]

پاکستانی حقوق نسواں کارکنان[ترمیم]

  • اتیا فزی رحیمین آرٹ، موسیقی، تحریری اور تعلیم اور سفر کے شوق کے لیے جانی جاتی ہیں۔ 1926 میں ایک کانفرس میں انھوں نے خواتین کو تنہائی اور پردے میں رکھنے کیخلاف آواز اٹھائی اور کہا کہ عورتوں کو بھی خدا کی زمین پر گھومنے کی مکمل آذادی ہونی چاہیے۔[7]
  • فاطمہ جناح - پاکستان کی مشہور خواتین شخصیات میں سے ایک ہیں۔ وہ پاکستان میں خواتین کے حقوق بیدار کرنے کا ایک ذریعہ تھیں۔
  • بیگم راعنا لیاقت علی خان - بانی پاکستان ویمن نیشنل گارڈز (پی ڈبلیو این جی) اور پاکستان ویمن نیول ریزرو کے قیام میں انھوں نے مدد کی۔
  • عاصمہ بارلاس۔ اتھاکا کالج میں پاکستانی نژاد امریکی پروفیسر اور اسلام میں "خواتین پر یقین رکھنے والی " کے مصنف : قرآن کی غیر پڑھنے والی پیٹری آرچل ترجمانی
  • مختاران بی بی - عصمت دری کی روک تھام اور خواتین کے حقوق کے لیے پاکستانی کارکن۔
  • زیب النساء حملہ اللہ - پاکستان کی پہلی خاتون کالم نگار اور ایڈیٹر، الازہر یونیورسٹی میں تقریر کرنے والی پہلی خاتون اور دی بیل اینڈ دی شیطان کی مصنفہ۔
  • رفعت حسن۔ پاکستانی نژاد امریکی مذہبی ماہر اور قرآن کی عالمہ۔
  • زیلا ہما عثمان - پاکستانی سیاست دان اور کارکن، فروری 2007 کو قتل کیا گیا
  • بینظیر بھٹو۔ وزیر اعظم پاکستان، 27 دسمبر 2007 کو قتل ہوئی۔
  • ندا مہمید۔پاکستان میں مقیم پہلا نسوانی انگریزی شاعر
  • ملالہ یوسف زئیخواتین تعلیم کے لیے پاکستانی کارکن اور نوبل انعام یافتہ اب تک کی سب سے کم عمر شخصیت۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "The Aurat مارچ challenges misogyny in our homes, workplaces and society, say organisers ahead of Women's Day". Images. 2019-03-07. اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2019. 
  2. "Feminism and the Women Movement in Pakistan". www.fes-asia.org. اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2019. 
  3. "Pakistani women hold 'aurat مارچ' for equality, gender justice". www.aljazeera.com. اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2019. 
  4. Rehman، Zoya (2019-07-26). "Aurat مارچ and Undisciplined Bodies". Medium (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 04 مارچ 2020. 
  5. Zia، Afiya S. (2020-02-03). "The contrite gender formula of Meray Paas Tum Ho and the portrayal of women in cultural scripts". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 04 مارچ 2020. 
  6. Zia، Afiya S. (30 نومبر 2017). Faith and Feminism in Pakistan: Religious Agency or Secular Autonomy?. Sussex Academic Press. ISBN 978-1-84519-916-6. 
  7. A letter received by Sayyid Husain Bilgrami in Coming out: decisions to leave Purdah, jstor.org (Early 1926)

بیرونی روابط[ترمیم]

  • ڈاکٹر سلیمہ پاکستان فیڈریشن آف بزنس اینڈ پروفیشنل ویمن آرگنائزیشن کی بانی۔