ہرقل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ہرقل
قیصر بازنطینی روم
معیاد عہدہ5 اکتوبر 610ء –11 فروری641ء
پیشروفوکاس
جانشینقسطنطین تریہم
ھرکالوناس
نسلقسطنطین تریہم
ھرکالوناس
مکمل نام
فلاوی یس ہرقل اگستس
شاہی خاندانآل ہرقل
والدہرقل کبیر
والدہایپیفانیا
پیدائش575ء
کیپادوکیا، موجودہ ترکی
وفات11 فروری 641ء ( 65 یا 66 سال)

"ہرقل" یا "ہرقل صغیر"610ء سے 641ء تک قیصر بازنطینی روم تھا- انگریزی میں اس کا نام ہیراکلیوس (Heraclius) ہے (Greek: Ἡράκλειος, Iraklios; c. 575 – February 11, 641)۔

ہرقل نے مشرقی رومی داوری میں پہلی بار سرکاری زبان کے طور پر یونانی زبان متعارف کروایا- اس کی طاقت میں اضافہ 608ء میں شروع ہوا، جب وہ اور اس کے والد، افریقا کے صوبہ دار ہرقل کبیر نے کامیابی سے غیر مقبول غاصب قیصر فوکاس کے خلاف ایک بغاوت کی قیادت کی-

ہرقل کا دور حکومت، کئی فوجی مہمات کا شکار رہی- جس سال ہرقل اقتدار میں آیا، بازنطینی سلطنت کی بیشتر و اکثر سرحدوں کو اندرونی و بیرونی خطروں کا سامنا تھا، جن میں ابتدائی طور پر فوکاس اور ساسانی سلطنت تھے اور بعد ازاں مسلمانوں کی خلافت راشدہ میں بر سر اقتدار خلیفہ حضرت عمر ابن الخطاب، الفاروق (رضی اللہ عنہ) تھے - مذہبی معاملات میں، ہرقل کو اس وجہ سے یاد کیا جاتا ہے کہ اس نے بلقان جزیرہ نما سے منتقل عوام کو مسیحیت کی طرف لانے میں سب سے اہم کردار ادا کیا- پاپاۓ روم جان چہارم کی مدد سے اس نے مسیحی اساتذہ اور مبلغوں کو دور دراز علاقوں میں بھی بھیجا- اس نے مسیحی کلیسا میں مونوفیزیہ نظریہ کی وجہ سے ڈلے ہوئے پھوٹ کو ختم کرنے کی غرض سے مونوثیلیہ کو فروغ دینے کی ناکام کوشش کی-

مشرقی دنیا میں ہرقل کی وجہ شہرت، ساسانی سلطنت کے خلاف ایک تقریباً ہاری ہوئی جنگ کو جیت میں بدلنا اور اسلامی نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے رابطہ ہیں-

ابتدائی زندگی[ترمیم]

Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

فوکاس کے خلاف بغاوت[ترمیم]

قیصر ہرقل 629-632ء میں (عمر 54-57 سال) اور اس کا فرزند ایک زرین رومی سکے پر نمایاں ہیں۔
Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

ساسانی سلطنت کے خلاف جنگیں[ترمیم]

معرکۂ نینوا[ترمیم]

ارمینیا، اناطولیہ، اور بین النہرین میں ہرقل کے 624ء، 625ء، اور 627–628ء کے عسکری مہمات کا نقشہ۔ گلابی رنگ میں رومی قلمرو اور زرد رنگ میں ساسانی قلمرو نمایاں ہیں۔

جب رومی قیصر موریس غاصب فوکاس نے قتل کیا تو ، خسرو دوم نے اپنے ہم منصب کی موت کا بدلہ لینے کے بہانے جنگ کا اعلان کیا۔ اس جنگ کے ابتدائی مراحل کے دوران ساسانیوں زبردست طفریاب رہے ، شام ، فلسطین، یروشلم، مصر اور یہاں تک کہ کچھ اناطولیہ کو بھی تسخیر کر لی۔ ایسا لگ رہا تھا کے ہزار سال سے لڑے جانے والے فارس ۔ یونانی جنگیں اور سکندر مقدونی کی جنگیں کے بعد آخرکار رومیوں شکست کھا کہ یونانیوں ہمیشہ کے لیے مغلوب ہونے والے تھے۔

اس شدید ہزیمت کے بعد، اور کوئی جوابی جنگ ہونے ہی سے پہلے، قبل از وقت قرآن مجید کا مکی سورۃ روم نازل ہوا جس میں بیان کیا گیا تھا کہ شکست خوردہ رومیوں دوبارہ غلبہ حاصل کرلیں گے۔

ساسانیوں نے قسطنطنیہ پر قبضہ کرنے کی کوشش کی اور انہوں نے 626ء میں رومی پائے تخت کا محاصرہ کرنا شروع کیا۔

بالآخر ہرقل کی مہمات رومیوں کے توازن کو مائل کرتے ہوئے ساسانیوں کو دفاعی جنگ لڑنے پر مجبور کیا۔ جب قسطنطنیہ کا محاصرہ ہورہا تھا ، ہرقل نے رومی مؤرخین کے مطابق خذر قوم کے ساتھ ناتا جوڑ دیا۔ ہرقل نے ان کو حیرت انگیز تحائف دیا اور وعدہ کیا تھا کے خذر کا سردار کوایک رومی شہزادی سے شادی کرنے دے گا ۔ اس کے جواب میں قفقاز میں مقیم خذر قوم نے 626ء میں اپنے 40،000 سپاہی کو فارس کا قلمرو کو تباہ کرنے کے لئے بھیج دیا۔

قیصرہرقل ساسانیوں کے خلاف جنگ جیتنے کے بعد یروشلم میں دوبارہ مسیحی صلیب نصب کیا۔ اس خاکے میں ہرقل اپنے سر پر تاج پہن کر گھوڑے پر سوار ہے۔ اس واقعہ کے چند سال بعد خالد بن ولید اور ابو عبیدہ بن جراح نے بیت المقدس کو سن 637ء/16 ہجری میں مسلمانوں کے لیے فتح کر لی۔

ہرقل نے 627ء کے موسم گرما میں نئے رضاکاروں کو رومی سپاہ میں شامل ہونے کے بعد انہیں تربیت دی ، اور اسی سال کے موسم خزاں میں، جب قسطنطنیہ ابھی تک ساسانی عساکر کے محاصرے میں تھا ، وہ شہر چھوڑ کر شمال مغربی اناطولیہ کا علاقہ اور شمالی کیپڈوشیا پر قبضہ کیا۔

627ء تک، ہرقل جوابی حملہ کرنے کو تیار تھا۔ انہوں نے اتوار، 4 اپریل 627ء کو ایسٹر منانے کے ایک دن بعد ہی قسطنطنیہ سے روانہ ہوا۔ اس نے اپنا کوچک فرزند ، ہیراکلیوس قسطنطین، شہر کا صدر اسقف سرجیوس کے نگرانی اور سرپرستی کے تحت قسطنطنیہ میں چھوڑا۔

ہرقل نے 627ء کی گرمیوں کی تربیت اپنے مردوں کی مہارت اور اپنی عمومی صلاحیت کو بہتر بنانے میں مشغول رہنے کے بعد موسم خزاں میں، ہرقل نے کیپڈوشیا تک کوچ کرکے وادیٔ فرات سے اناطولیہ تک ساسانی مواصلات کو خطرے میں ڈالا۔

اس سے ساسانی جنرل شہربراز کے زیرِقیادت مغربی اناطولیہ میں تمام ساسانی سپاہیوں کو قسطنطنیہ سے وآپس ہٹنے پر مجبور کیا تاکہ وہ ایران وآپس جانے کے راستے کی رسائی بچا سکے۔ اس کے بعد جو واقعہ ہوا اس پر مکمل طور پر مؤرخین کے اتفاقِ رائے نہیں ہے ، لیکن ہرقل نے یقینی طور پر 627ء کے موسم خزاں میں نینوا کے خطے میں ساسانی جنرل شہرربراز کے خلاف ایک زبردست فتح حاصل کی۔ اس کی اہم وجہ ہرقل کی طرف سے گھات میں چھپی ہوئی ساسانی سپاہ کی دریافت کرنے اور جنگ کے دوران جعلی پسپائی کا مظاہرہ کرنے کے عمل اسے بہت فائدہ مند رہی تھی۔ رومیوں کے پیچھے کرنے کے لئے ساسانیوں نے اپنے مورچے چھوڑ دیے۔ اس کے بعد ہرقل کا ’اوپٹیماٹوئی‘ کا نام سے سب سے اعلیٰ رومی دستہ نے وآپس پلٹ کر تعاقب کرنے والے ساسانیوں پرجوابی حملہ کیا ، جس سے پوری ساسانی سپاہ پسپا ہوگئی۔ اس طرح اناطولیہ اور قسطنطنیہ ایران کے قبضے سے بچایا گیا۔

تاہم ، ہرقل کو بلقان کے اپنے اراضی کو شمال سے چڑھائی کرنے والے قوموں کے خطرے سے بچانے کے لئے قسطنطنیہ وآپس جانا پڑا ، لہذا موسم سرما میں آرام کرنے کے لئے اس نے اپنی رومی سپاہ کو بحیرہ اسود کا جنوبی ساحل کے علاقے میں چھوڑ دیا۔

رومی جیت کا نتیجہ بعد میں فارس میں خانہ جنگی کا باعث بنا ، اور کچھ مدت کے لئے مشرقی رومی داوری کو مشرق وسطیٰ میں اپنی قدیم حدود میں بحال کردیا گیا۔ ساسانیائی خانہ جنگی نے ساسانی داوری کو نمایاں طور پر کمزور کردیا، جس سے نومسلم عربوں کو فارس کو فتح کرنے میں میں مدد ملی۔

Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے رابطے کا واقعہ[ترمیم]

حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم حال ہی میں جزیرہ نما عرب کے تمام خانہ بدوش قبائل کو متحد کرنے میں کامیاب ہو ئے تھے- عرب قبائل ماضی میں یا تو رومیوں یا ایرانیوں کے ماتحت تھے اور کبھی بھی ان عظیم قوموں کے لیے سنگین فوجی خطرہ نہ بن سکے- مگر اب ایک ہو کر اسلام کے زیر اثر اور رسول آخر کی سرپرستی میں، عرب مسلمان جزیرہ نما عرب کے خطے میں سب سے زیادہ طاقتور ریاستوں میں سے ایک بن کر منظر عام میں داخل ہوئے-

فائل:Muhammad-Letter-To-Heraclius-of-the-Roman-Empire.jpg
قیصر ہرقل کو محمد ﷺ کا بھیجا ہوا مکتوبِ پاک۔
Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

مسلمان عربوں کے خلاف ابتدائی جھڑپیں[ترمیم]

Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

خلافت راشدہ کے خلاف جنگیں[ترمیم]

Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

میراث[ترمیم]

Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

مزید متعلقہ مضامین دیکھے[ترمیم]