امیر عبد اللہ خان نیازی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
امیر عبد اللہ خان نیازی
1971 Instrument of Surrender.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1915  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 1 فروری 2004 (88–89 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ فوجی افسر، گورنر مشرقی پاکستان  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
شاخ پاک فوج  ویکی ڈیٹا پر عسکری شاخ (P241) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عہدہ لیفٹیننٹ جنرل  ویکی ڈیٹا پر عسکری رتبہ (P410) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لڑائیاں اور جنگیں دوسری جنگ عظیم  ویکی ڈیٹا پر لڑائی (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
Military cross BAR.svg ملٹری کراس  ویکی ڈیٹا پر وصول کردہ اعزازات (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دستخط
A. A. K. Niazi signature.svg 

امیر عبد اللہ خان نیازی مغربی پاکستان کی علیحدگی اور آزاد بنگلہ دیش کے قیام کے موقع پر بھارتی جنرل کے سامنے ہتھیار ڈالنے والے پاکستانی لیفٹیننٹ جنرل ہیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

موجودہ بھارتی پنجاب کے پٹھان گھرانے میں پیدا ہوئے۔ 1932ء میں برٹش آرمی میں بطور سپاہی بھرتی ہوئے اور 1942ء میں انہیں کنگز کمیشن دیدیا گیا۔ قیام پاکستان سے قبل انہوں نے برٹش آرمی کے لیے متعدد ایسے کارنامے انجام دیے جس میں انہیں بہادری کے ایوارڈ دیے گئے۔ ان ایوارڈ میں ملٹری کراس کا ایوارڈ بھی شامل ہے۔ جاپان میں برٹش آرمی کی جانب سے بہادری دکھانے پر انہیں ٹائیگر نیازی کا خطاب دیا گیا۔

شکست[ترمیم]

مبصرین کا کہنا ہے کہ بھارتی فوج اور بنگالی عوام کے ہاتھوں پاکستانی فوج کی شکست اور جنرل نیازی کا بھارتی جنرل ارروڑہ کے سامنے ہتھیار ڈالنے کا واقہ ایک ایسا عمل تھا جو ہر اس محب وطن پاکستانی کے دل پر زخم کی طرح نقش ہو گیا جس نے یہ واقعہ دیکھا۔ پاکستانیوں کا ایک حلقہ اسے پاکستان کی تاریخ کا سیاہ ترین دن قرار دیتا ہے۔ اس کے بعد وہ پاکستان کے دیگر نوے ہزار فوجیوں کی طرح جنگی قیدی بن کر بھارت کی حراست میں چلے گئے۔

شکست کا ذمہ دار کون[ترمیم]

حمود الرحمن کمیشن کی جوغیر حتمی رپورٹ منطر عا م پر آئی ہے اس میں بھی انہیں اس شکست کے اسباب میں انہیں کافی بڑا ذمہ دار قرار دیا گیا۔ جنرل نیازی آخر وقت تک اپنی پوزیشن کا دفاع کرتے رہے اور موت کے سامنے ہتھیار ڈالنے سے محض چند ہفتہ قبل انہوں نے ایک ٹی وی پروگرام میں کہا تھا کہ ’وہ فوج کے سسٹم کا ایک چھوٹا سا حصہ تھے اس لیے انہوں نے ہتھیار ڈالنے کے احکامات پر عملدرآمد کیا حالانکہ ان کا ذاتی خیال یہ تھا کہ وہ مزید لڑ سکتے تھے اور بھارتی فوج کو ایک لمبے عرصے تک الجھائے رکھ سکتے تھے۔

جنسی بدنامی[ترمیم]

حمود الرحمن کمیشن کی رپورٹ کے مطابق یہ اپنے جنسی اسیکنڈلز کے لیے ایک نام رکھتے تھے۔ اس کے علاوہ کمیشن نے اس بات کی طرف اشارہ کیا کہ وہ مشرقی پاکستان میں اپنی حیثیت کو اسمگلنگ کے لیے بھی استعمال کرتے رہے۔[حوالہ درکار]

سیاست[ترمیم]

بطور جنگی قیدی بھارت سے واپس آکر سیاسی سرگرمیوں میں فعال حصہ لیا اور “جماعتِ عالیہ مجاہدین” کے نام سے اپنی جماعت بنائی۔ ان کی جماعت نے مارچ 1977 کے قومی اتخابات میں انتخابی نشان پگڑی کے ساتھ حصہ لیا۔ انھیں جمعیت علمائے پاکستان کے کوٹے سے قومی اسمبلی کے الیکشن کا ٹکٹ ملا جس کے وہ نائب صدر رہے۔ جب قومی اتحاد نے بھٹوحکومت کےخلاف تحریک شروع کی توجنرل نیازی سر پر میانوالی سٹائل پگڑی باندھے سٹیج پر موجود ہوتے تھے۔ وہ بار بار اپنے کورٹ مارشل کا مطالبہ کیا کرتے تھے۔ قومی اتحاد کے کسی لیڈر نے کبھی یہ نہیں کہا کہ مشرقی پاکستان میں شکست کے ذمہ دار جنرل موصوف ہیں بلکہ وہ سبھی ان کی بہادری کے گن گایا کرتے تھے۔

بیرونی روابط[ترمیم]

سیاسی عہدے
ماقبل 
ٹکہ خان
زون بی کے مارشل لا ایڈمنسٹریٹر, (مشرقی پاکستان)
1971
مابعد 
عہدہ ختم کر دیا گیا
ماقبل 
عبدالمطلب ملک
گورنر مشرقی پاکستان
1971
مابعد 
عہدہ ختم کر دیا گیا