طبرانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
سلیمان بن احمد الطبرانی
{{#if:
حدیث
سلیمان بن احمد الطبرانی
معروفیت الطبرانی
پیدائش سلیمان بن احمد
ماہِ صفر 260ھ/ دسمبر 873ء
عکہ، طبریہ، موجودہ شمالی اسرائیل
وفات

ہفتہ 28 ذوالقعدہ 360ھ/ 23 ستمبر 971ء

(عمر: 100 سال 9 ماہ قمری، 97 سال 9 ماہ شمسی)
اصفہان، دولت سامانیہ، موجودہ صوبہ اصفہان، ایران
نسل شامی
دور اسلامی عہدِ زریں
مذہب اسلام
شعبۂ عمل حدیث
کارہائے نماياں معجم الکبیر طبرانی, معجم الاوسط طبرانی, معجم الصغير طبرانی

امام طبرانی (عربی زبان: ابوالقاسم سلیمان ابن احمد ابن الطبرانی المعروف طبرانی ) (پیدائش: دسمبر 873ء– وفات: 23 ستمبر 971ء) محدث، فقیہ اور عالم تھے۔ امام طبرانی کو تیسری/ چوتھی صدی ہجری میں سرفہرست علمائے اسلام میں شمار کیے جاتے تھے۔ امام طبرانی کی وجہ شہرت معجم الکبیر طبرانی، معجم الاوسط طبرانی اور معجم الصغير طبرانی ہیں۔

تلامذہ[ترمیم]

آپ امام طحاوی کے نامور شاگرد تھے۔ آپ نے طلبِ علم میں حجاز، عراق (کوفہ، بصرہ، بغداد) یمن، شام، مصر اور اصفہان کے سفر کئے۔

کتب[ترمیم]

کتب حدیث میں ان کی تین کتابیں المعجم الکبیر، معجم الاوسط اور المعجم الصغیر مشہور ہیں۔ المعجم الکبیر احادیث کا مجموعہ ہے۔ یہ کتاب 25 جلدوں میں 7800 صفحات پر مشتمل ہے۔ یہ طبرانی کے نام سے مشہور ہیں۔ ابوالعباس احمد بن منصور کہتے ہیں میں نے طبرانی سے تین لاکھ حدیثیں سنی ہیں۔

وفات[ترمیم]

امام طبرانی کی وفات بروز ہفتہ 28 ذوالقعدہ 360ھ/ 23 ستمبر 971ء کو اصفہان میں ہوئی۔[1] اُس وقت عمر 100 سال 9 ماہ قمری اور بلحاظِ شمسی 97 سال 9 ماہ تھی۔ حافظ ابونعیم اصفہانینے نمازِ جنازہ پڑھائی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ابن کثیر الدمشقی: البدایہ والنہایہ،  جلد 11، صفحہ 478، تحت واقعات 478ھ۔ مطبوعہ لاہور۔