فارسیوان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مغربی افغانستان ، صوبہ ہرات میں 1880 میں فارسیوان کا گروپ

فارسیوان ( پشتو / فارسی: فارسیوان‎ ؛ یا اس کی علاقائی شکلیں: پارسیوان یا پارسیبان ؛ "فارسی اسپیکر") افغانستان میں فارسی بولنے والوں کے لیے ایک نامہے ، جن کا ایران اور بیرون ملک دیگر جگہوں پر ڈائیسپورا موجود ہے ۔ خاص طور پر ، اس کا استعمال افغانستان میں کسانوں کے ایک الگ گروہ [1] [2] [3] اور شہری باشندوں کی طرف اشارہ کرنے کے لیے کیا جاتا ہے جو افغانستان اور تاجکستان کے تاجک باشندے ہیں۔ [4] [5] اس اصطلاح میں ہزارہ اور ایماق قبیلے کو خارج کیا گیا ہے جو فارسی کی بولیاں بھی بولتے ہیں ، لیکن عام طور پر یہ خیال کیا جاتا ہے کہ وہ تاجک سے مختلف ہیں۔ افغانستان میں ، فارسیوان بنیادی طور پر ہرات اور فراه صوبوں میں پائے جاتے ہیں۔ یہ مشرقی ایران کے پارسیوں کی طرح ہیں ۔ [6] اصطلاح اصلا فارسی زبان کے ساتھ گڑھا گیا تھا اگرچہ لغوی جڑ (پارسی بان)، لاحقہ ایک میں تبدیل کر دیا گیا ہے پشتو فارم (-وان)، اور عام طور پر پشتونوں کی طرف سے فارسی بولنے وانوں کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

ایتھنوگرافر مائیکل آئزادی ایک تاجک کو کوئی خاص امتیاز نہیں دیتے ہیں اور انہوں نے پارسیوں کو "کسی بھی نسلی پس منظر کے شہری" کے طور پر بیان کیا ہے جو صرف فارسی بولتے ہیں اور اپنی تمام نسلی اور قبائلی وابستگی کھو چکے ہیں" [7] اپنے 2013 کے مطالعے میں انھوں نے پایا کہ افغانستان کی آبادی کا 4.2٪ پارسیوان تھے اور یہ گروپ تاریخی طور پر سب سے زیادہ ممکنہ نسلی گروہ ہے جو بیوروکریٹس کی حیثیت سے حکومت میں ملازمت کرتا تھا اور یہ کہ "مغرب کے لوگ جو افغانستان کے بارے میں جانتے ہیں ان میں سے بیشتر افراد ان کے پاس آئے ہیں۔ ان تین فارسی بولنے والے اقلیتوں [تاجک، قزلباش اور فارسیوان ] کے ذریعے ۔ "

دوسرے تاجکوں سے فرق[ترمیم]

ایران کے فارسیوں کی طرح ، فارسیوان بھی اکثر شیعہ اسلام کی پیروی کے ذریعہ دوسرے تاجک افراد سے ممتاز ہوتا ہے کیونکہ تاجک اکثریت سنی فرقے سے تعلق رکھتے ہیں۔ تاہم ، خاص طور پر دیہی فارسیوان میں معمولی لسانی اختلافات پائے جاتے ہیں۔ فارسیان بعض اوقات فارسی زبان کی دری بولی کے مترادف بولی بولتا ہے ، مثال کے طور پر کابل کی بولی ، [8] ایران کے معیاری تہران بولی کے برخلاف ۔ تاہم ، بیشتر فارسیوان خراسانی بولی بولتے ہیں ، جو افغانستان-ایران کے سرحدی علاقے ، یعنی ہرات اور فرہ اور ساتھ ہی ایرانی صوبوں خراسان کی ہے ۔ ہزارہ کے برخلاف جو فارسی بولنے والے اور شیعہ بھی ہیں ، فارسیوان پشتونوں کی طرح ترک اور منگول نسل کی کوئی محدود یا بہت کم نشانات نہیں دکھاتے ہیں۔ [9] اگرچہ ایران اور افغانستان کے قزلباش بھی فارسی بولنے والے شیعہ ہیں ، لیکن انہیں عام طور پر فارسیوان سے الگ گروہ سمجھا جاتا ہے۔ [10]

کچھ الجھن پیدا ہوتی ہے کیونکہ مقامی طور پر فارسیوان (عام طور پر تاجیکوں کے لیے) مقامی طور پر استعمال ہونے والا متبادل دیہگان ہے ، جس کا مطلب ہے "گاؤں کے آباد کار" ، "شہری" کے معنی میں۔ یہ اصطلاح "خانہ بدوش" کے برخلاف استعمال ہوتی ہے۔ [11]

جغرافیائی تقسیم[ترمیم]

افغانستان میں تقریبا 15 لاکھ فارسیوان ہیں ، بنیادی طور پر ہرات ، فرح [12] غور اور مزار شریف صوبوں میں ۔ وہ ہرات شہر کے اہم باشندے بھی ہیں۔ [13] چھوٹی آبادی کابل ، قندھار اور غزنی میں پائی جاسکتی ہے۔ [11] [14] افغانستان سے آنے والے مہاجرین کی ایک بڑی تعداد کی وجہ سے ، آج کل ایران میں (زیادہ تر مشہد اور تہران میں ) اہم پارسیوان کمیونٹیز بھی موجود ہیں۔

یہ بھی دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Maloney, Clarence (1978) Language and Civilization Change in South Asia E.J. Brill, Leiden, آئی ایس بی این 90-04-05741-2, on page 131
  2. Hanifi, Mohammed Jamil (1976) Historical and Cultural Dictionary of Afghanistan Scarecrow Press, Metuchen, N.J., آئی ایس بی این 0-8108-0892-7, on page 36
  3. ""Afghanistan: Historical political overview" FMO Research Guide". 24 جولا‎ئی 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 20 جنوری 2008. 
  4. The Encyc. Iranica makes clear in the article on Afghanistan — Ethnography that "The term Farsiwan also has the regional forms Parsiwan and Parsiban. In religion they are Imami Shia. In the literature they are often mistakenly referred to as Tajik." Dupree, Louis (1982) "Afghanistan: (iv.) Ethnography", in Encyclopædia Iranica Online Edition 2006.
  5. Emadi, Hafizullah (2005) Culture And Customs Of Afghanistan Greenwood Press, Westport, Conn., آئی ایس بی این 0-313-33089-1, on page 11 says: "Farsiwan are a small group of people who reside in southern and western towns and villages in Herat. They are sometimes erroneously referred to as Tajiks."
  6. H. F. Schurmann, The Mongols of Afghanistan: an Ethnography of the Moghols and Related Peoples of Afghanistan. The Hague: Mouton, 1962: ; p. 75: "... the Tajiks of Western Afghanistan [are] roughly the same as the Khûrâsânî Persians on the other side of the line ..."
  7. Ethnic map of Afghanistan, http://gulf2000.columbia.edu/images/maps/Afghanistan_Ethnic_lg.png
  8. E. H. Glassman, “Conversational Dari: An Introductory Course in Dari (= Farsi = Persian) as Spoken in Afghanistan” (revised edition of “Conversational Kabuli Dari,” with the assistance of M. Taher Porjosh), Kabul (The Language and Orientation Committee, International Afghan Mission, P.O. Box 625), 1970-72.
  9. Library of Congress Country Studies - Afghanistan - Farsiwan (LINK)
  10. Savory, Roger M. (1965) "The consolidation of Safawid power in Persia" In Savory, Roger M. (1987) Studies on the History of Ṣafawid Iran Variorum Reprints, London, آئی ایس بی این 0-86078-204-2, originally published in Der Islam no. 41 (October 1965) pp. 71-94
  11. ^ ا ب M. Longworth Dames, G. Morgenstierne, R. Ghirshman, "Afghānistān", in دائرۃ المعارف الاسلامیہ, Online Edition
  12. Adamec, Ludwig W. (1997) Historical Dictionary of Afghanistan Rowman & Littlefield Publishers, آئی ایس بی این 0-585-21026-8, on page 106
  13. P. English, "Cities In The Middle East", e.d. L. Brown, جامعہ پرنسٹن, USA 1973
  14. L. Dupree, "Afghanistan: (iv.) Ethnography", in Encyclopædia Iranica Online Edition 2006