غلام اللہ خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
غلام اللہ خان
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1905[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
چھچھ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 26 مئی 1980 (74–75 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دبئی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات دورۂ قلب  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی دار العلوم دیوبند
جامعہ اسلامیہ تعلیم الدین ڈابھیل  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استاذ انور شاہ کشمیری  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ عالم  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت جامعہ اسلامیہ تعلیم الدین ڈابھیل  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

شیخ القرآن مولانا غلام اللہ خان (پیدائش: 1905 - 26 مئی 1980) ایک پاکستانی اسلامی اسکالر تھے۔[2]


ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

خان 1904 میں اٹک کے ضلع چھچھ میں ملک فیروز خان کے ہاں پیدا ہوئے تھے۔ اس کے والد ایک متقی اور گاؤں کے نمبردار تھے خاندان کا تعلق اعوان سے ہے ۔ انہوں نے رشید احمد گنگوہیسے قرآن سیکھا۔ اس نے ہزرو ہائی اسکول سے مڈل کا امتحان پاس کیا اور پھر راولپنڈی چلا گیا اور مولانا سیف الرحمن پشاوری کے طالب علم مولانا احمد دین سے ابتدائی فارسی اور گرائمر کی کتابیں پڑھیں۔ پھر اس نے کوکال (ہزارہ) کے رہائشی مولانا سکندر علی اور اس کے بڑے بھائی مولانا محمد اسماعیل سے مختلف کتابیں سیکھیں۔ مولانا عبد اللہ پٹوار اور مولانا محمد دین سے فنون لطیفہ کا مطالعہ کیا۔ ضلع گجرات کے مولانا غلام رسول اور ان کے داماد مولانا ولی اللہ سے معقولات کی آخری کتابوں کا مطالعہ کیا۔ مشکوۃ المصابیح، تفسیر جلالین ، تفسیر بیضاوی اور قرآن کا ترجمہ بھی یہاں سے حاصل کیا . بعد میں واں بھچراں کے رہائشی ، مولانا حسین علی سے ، ان سے قرآن کی تفسیر سیکھی اور ان کی ہدایت پر دارالعلوم دیوبند کا سفر کیا اور وہاں بیشتر ادبیات کی کتابوں کا مطالعہ کیا۔ مولانا رسول خان ہزاروی نے انٹری امتحان لیا۔ 1933 میں انہوں نے جامعہ اسلامیہ تعلیم الدین ڈابھیل میں حدیث کی تعلیم حاصل کی۔[3][4]

ملازمت[ترمیم]

انور شاہ کشمیری کے کہنے پر جامعہ اسلامیہ تعلیم الدین ڈابھیل سے گریجویشن کے بعد ، وہاں ایک سال تک درس و تدریس کرتا رہا۔ وہاں انہوں نے تفسیر عثمانی کی تالیف میں شبیر احمد عثمانی کی مدد کی۔ اپنے شیخ مولانا حسین علی کی ہدایت پر انہیں وزیر آباد کے مدرسہ برکات الاسلام میں درس دینے کی ذمہ داری سونپی گئی۔ شیخ عبد الغنی انھیں 1939 میں وزیر آباد سے راولپنڈی لایا ، جہاں انہوں نے کچھ مہینوں تک ہائی اسکول میں ملازمت کی۔ اسکول چھوڑنے کے بعد ، اس نے پرانی قلعے والی مسجد میں درس دینا شروع کیا اور مختلف مقامات پر تقریر کرنے کے علاوہ قرآن مجید پر بھی لیکچر دینا شروع کیا۔ 1930 میں دار العلوم تعلیم القرآن کی بنیاد رکھی۔ انہوں نے "تفسیر جواہر القرآن" کے نام سے قرآن پر ایک تفسیر لکھی۔ وہ جماعتِ اشاعت توحیدوسنت پاکستان کے ممتاز اسکالرز میں سے تھے اور ناظم اعلیٰ کے منصب پر فائز تھے۔ 1980 میں ، وہ ظفر احمد عثمانی ، محمد شفیع اور احتشام الحق تھانوی کے خصوصی حامی تھے۔ اور مرکزی جمعیت علمائے اسلام پنجاب کے امیر کی حیثیت سے ، انہوں نے ان حضرات کے ساتھ مل کر سوشلزم اور اشتراکی تحریکوں کے خلاف کلمہ حق بلند کیا۔ [3][5]

وفات[ترمیم]

26 مئی 1980 کی رات دبئی میں دل کا دورہ پڑنے سے ان کا انتقال ہو گیا۔ سید عنایت اللہ شاہ بخاری نے لیاقت باغ میں نماز جنازہ پڑھائی اور اس وقت کے چیف آف آرمی اسٹاف اور صدر پاکستان جنرل محمد ضیاء الحق نے بھی جنازے کو کندھا دیا۔ جنازے میں تقریبا 200،000 افراد شریک ہوئے۔ انہیں جامعہ اشاعت الاسلام اٹک میں سپرد خاک کر دیا گیا۔[5]

حوالہ جات[ترمیم]

 

  1. ^ ا ب ایف اے ایس ٹی - آئی ڈی: http://id.worldcat.org/fast/324225 — اخذ شدہ بتاریخ: 7 مئی 2020
  2. زاہد الراشدی. "حضرت مولانا غلام اللہ خانؒ". zahidrashdi.org. اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2021. 
  3. ^ ا ب مفتی محمد حامد (17 January 2019). "شیخ القرآن مولانا غلام اللہ خانؒ". jang.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2021. 
  4. سمیع اللہ. "مولانا غلام اللہ خانؒ کی تفسىر جواہر القرآن: منہج اور خصوصیات" (PDF). Al-Idah. شیخ زایداسلامک سنٹر، جامعہ پشاور. 33 (December 2016). اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2021. 
  5. ^ ا ب عبدالرازق صافي (31 May 2016). "شیخ القرآن مولانا غلام الله خان –رحمه الله – وپیژنئ". nunn.asia. اخذ شدہ بتاریخ 22 مئی 2021. 

فہرِست نِگاری[ترمیم]

  • الیاس، میاں محمد. حیات شیخ القرآن مولانا غلام اللہ خانؒ. راولپنڈی. 
  • عبد المعبود، محمد. سوانح حیات حضرت مولانا غلام اللہ خان. راولپنڈی: کتب خانہ راشدیہ.