ولی حسن ٹونکی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ولی حسن ٹونکی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1924  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ضلع ٹونک  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 3 فروری 1995 (70–71 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
صدر (1 )   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
در اقرأ روضۃ الاطفال ٹرسٹ 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png  
محمد یوسف لدھیانوی  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ الٰہ آباد
پنجاب یونیورسٹی
مظاہر علوم سہارنپور
دار العلوم دیوبند
دار العلوم ندوۃ العلماء  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استاذ حسین احمد مدنی،  عبد الحق  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تلمیذ خاص مفتی ابولبابہ شاہ منصور،  محمد تقی عثمانی،  مفتی رفیع عثمانی،  مفتی زرولی خان،  مولانا حبیب اللہ مختار،  مفتی عبدالمجید دین پوری،  مفتی جمیل خان،  مزمل حسین کاپڑیا  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مفتی،  منصف،  معلم  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت دارالعلوم کراچی،  جامعہ العلوم الاسلامیہ بنوری ٹاؤن  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مفتی اعظم پاکستان ولی حسن ٹونکی رحمۃ اللہ (پیدائش: 1924 - وفات : 3 فروری 1995) ایک پاکستانی مفتی ، اسلامی اسکالر ، اور مصنف تھے۔[1]

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

  • ولادت

حضرت مفتی ولی حسن صاحب کی پیدائش ۱۹۲۴ء میں ہندوستان کی ریاست  ٹونک میں ہوئی.

  • نام و نسب

آپ کا نام نامی ولی حسن ، والد کا نام مفتی انوار الحسن خان ، دادا مفتی محمد حسن خان اور پردادا مفتی احمد حسن خان تھے..

آپ کی والدہ ماجدہ  سید خاندان سے تعلق رکھتی تھیں

علمی خاندان[ترمیم]

آپ کا خاندان ایک علمی خاندان تھا اور تقریباً سب ہی علمی ذوق کے حامل تھے، عرصہ دراز  سے ریاست ٹونک کے مفتی اور عدالتِ شرعیہ کا عہدۂ قضاء آپ ہی کے خاندان میں تھا۔

آپ کے خاندان کی دو شخصیات حلقۂ علماء میں نمایاں مقام کی حامل رہیں۔ یہ دونوں حضرات آپ کے والد کے چچا تھے

1) حضرت مولانا محمود حسن ٹونکی.. جو معجم المصنفین کے مصنف تھے..

2)  حضرت مولانا حیدر حسن خان ٹونکی رحمۃ اللہ علیہ

جو کہ۱۷؍سال تک دار العلوم ندوۃ العلماء کے مہتمم اور شیخ الحدیث رہے۔ مولانا ابو الحسن علی حسنی ندوی، مولانا عبدالرشید نعمانی، سید محمد عبد السمیع ندوی اور کئی نامور شخصیات نے ان سے شرف تلمذ حاصل کیا۔


علم کا حصول[ترمیم]

ابتدائی تعلیم و تربیت آپ نے اپنے والد ماجد مفتی انوار الحسن سے حاصل کی ۔ تقریباً بارہ سال کی عمر تھی کہ والد کا سایہ سر سے اُٹھ گیا

والد  کے انتقال کے بعد  آپ کے والد کے چچا اور دار العلوم ندوۃ العلماء کے مہتمم اور شیخ الحدیث مولانا حیدر حسن خان ٹونکی صاحبؒ نے ان کی تعلیم و تربیت کی ذمہ داری قبول کی اور آپ کی والدہ صاحبہ سے اجازت لے کر اُن کو اپنے ساتھ لکھنؤ لے گئے

تقریبا چار سے پانچ سال تک مولانا حیدر حسن خان ٹونکی کے زیرسایہ علوم حاصل کرتے رہے ان کے انتقال کے بعد درس نظامی کی تکمیل کے لیے آپ مظاہر علوم چلے گئے وہاں کچھ  عرصہ پڑھنے کے بعد دار العلوم دیوبندعلوم دیوبند تشریف لے گئے

اور درجہ سابعہ اور دورہ حدیث وہیں سے کیا.

صحیح بخاری اور جامع ترمذی حضرت مولانا حسین احمد مدنی قدس سرہ العزیز سے پڑھیں۔

دیوبند سے فراغت کے بعد ٹونک واپس آگئے  اور یہاں کی عدالت شرعیہ  میں مفتی وقاضی مقرر ہوئے




۔[2][3]

پاکستان آمد اور درس و تدریس[ترمیم]

*پاکستان کراچی آمد*

قیام پاکستان کے بعد 1948 میں آپ پاکستان آگئے

کراچی میں حضرت مفتی صاحب نے  ابتداء میں کراچی کے ایک ہائی اسکول میں  اسلامیات کے استاد کی حیثیت سے کام کرنا شروع کیا

اس کے بعد 1950 میں کراچی کےعلاقےآرام باغ  کی مسجد باب الاسلام میں واقع  مدرسہ امدادالعلوم میں خدمات انجام دیں..

یہ مدرسہ مفتی محمد شفیع صاحب نے قائم کیا تھا جہاں پر حفظ و ناظرہ کے علاوہ  ابتدائی فارسی اور عربی کی کتابیں پڑھائی جاتی تھیں اور یہاں پر  عوام کی سہولت کے  لیے ایک دارالافتاء بھی موجود تھا

جب ۱۹۵۱ء میں نانک واڑہ میں حضرت مفتی شفیع صاحب رحمۃ اللہ نے  دار العلوم کی بنیاد رکھی تو پھر مفتی صاحب وہاں مدرس مقرر  ہوئے ۔ دار العلوم کراچی نانک واڑہ میں آپ عربی ادب اور فقہ کے کئی اہم اسباق پڑھاتے تھے،جس میں’’عربی کامعلم‘‘ سے لے کر ’’ہدایہ‘‘ تک کی کتب شامل تھیں۔

جب 1959ء میں ’’دار العلوم‘‘ نانک واڑہ سے شرافی گوٹھ کورنگی منتقل ہوا تو مفتی صاحب وہاں سے حضرت مولانا یوسف بنوری  کے مدرسہ، ’’مدرسہ عربیہ اسلامیہ ‘‘(حال جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن) تشریف لے آئے۔ اور پھر اخیر تک آپ  اسی مدرسہ بنوری ٹاؤن میں  مستقل دین   کی خدمت کرتے رہے.. [1]

انہوں نے اپریل 1984میں اقرأ روضۃ الاطفال ٹرسٹ کی بنیاد رکھی اور اس کے پہلے صدر کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دیں۔[4]

علمی خدمات[ترمیم]

فقہی مقام*

حضرت مفتی صاحب کی اصل اور خاندانی خاصیت فقہ اور افتاء تھی۔ آپ فقیہ کامل اور اجتہادی شان کے حامل تھے، جس کا واضح رنگ آپ کے درسِ حدیث میں بھی نظر آتا تھا. .

جبکہ تفقہ کا یہ عالم تھا کہ . حضرت مفتی محمد شفیع (رح).حضرت مفتی محمود (رح).اور حضرت مفتی رشیداحمد (رح) کے ساتھ مجالس علمیہ میں بٹھائے جاتے تھے.

مفتی عبد السلام صاحب زید مجدہٗ فرماتے ہیں: ’’حضرت الاستاذ مولانا مفتی صاحب کی اصل چیز جو اُن کی خاندانی اور فطری ہے، وہ فقہ اور فتاویٰ کا کام ہے۔ آپ نے فرمایا: آپ کے آباء و اجداد کئی پشتوں سے مفتی اور قاضی گزرے ہیں۔‘  اسی طرح آپ کی پوری زندگی افتاء کی خدمت میں گزری، سب سے پہلے آپ ریاست ٹونک کے مفتی رہے، پھر مدرسہ امداد العلوم آرام باغ کراچی میں افتاء کی خدمت انجام دی، اس کے بعد دار العلوم نانک واڑہ میں اور پھر جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن میں عرصہ دراز تک اس شعبہ سے منسلک رہے، یہاں تک کہ آپ پورے پاکستان کے مفتی اعظم کہلائے جانے لگے۔ آپ کے فتاویٰ جامع، مدلل اور زمانہ کے تقاضوں سے ہم آہنگ ہوتے تھے، جزئیات کے استحضار میں آپ کا ثانی نہ تھا۔

مفتی صاحب کا  کا درس ہدایہ بے حد مشہور تھا..  کافی عرصہ تک ہدایہ اول ثانی اور ثالث کا درس دیتے رہے..اور ہدایہ ثالث کے تو گویا امام مشہور تھے..

تصنیفی خدمات

حضرت مفتی صاحب کے  علمی ورثہ کا اہم حصہ آپ کے قلم سے لکھے گئے جامعہ کے دارالافتاء سے جاری ہونے والے ہزاروں فتاویٰ ہیں ۔  اس کے علاوہ متعدد بیانات، مواعظ اور چھوٹی بڑی تحریرات موجود ہیں جن میں بے پناہ علمی خزینہ ہے، بعض ان میں سے طبع بھی ہوچکی ہیں۔

*تصانیف**

مفتی صاحب اپنی بے پناہ مصروفیات کے باعث زیادہ  تصنیفی کام نہ کرسکے

مفتی صاحب کی جو تصانیف یا مضامین موجود ہیں وہ یہ ہیں:

۱:…تذکرۃ الاولیاء ہند و پاکستان 

۲:…عائلی قوانین پر تحقیقی تبصرہ

۳:…بیمہ و انشورنس پر تحقیقی مقالہ

۴:…  حضرت مولانا یوسف ببنوری اور ان کی شہرہ آفاق تصنیف ’’معارف السنن‘‘ کی خصوصیات کے بارے میں فاضلانہ مضمون،

۵:… فتنہ انکارِ حدیث پر تفصیلی فتویٰ جو بعد میں کتابی صورت میں مرتب ہوکر شائع ہوا۔

٦… درس الہدایہ، حضرتؒ کے تدریسی افادات کو ان کے فرزند مولانا سجاد حسن مدظلہ نے مرتب کیا ہے۔ 

٧) آپ کے چند مضامین ’’انتخابِ مضامین‘‘ کے نام سے جمع کیے گئے ہیں، جن کی تعداد ’’۳۲‘‘ ہے

٨) فضائل سرمدی : درس شمائل ترمذی..(آپ کے فرزند مولانا سجاد حسن اسکو مرتب کیا ہے)

آپ کے فرزند حضرت مولانا سجاد حسن صاحب نے اس کو مرتب کیا ہے

  • 9) قربانی کے احکام مسائل
  • 10)رجم کی شرعی حیثیت

کتابیں لکھیں اور ان کے مضامین مختلف جرائد میں شائع ہوئے۔[5]

  • تزکرہ اولیا ہند و پاکستان
  • آئیلی قوانین شریعت کی روشنی میں
  • بیمہ کی حقیت

وفات[ترمیم]

علالت و انتقال*

1989 میں حضرت مفتی صاحب پر فالج کا شدید حملہ ہوا جسکی وجہ سےقوت گویائی  باقی نہ رہی... علاج مسلسل چلتا رہا جس کی وجہ سے طبیعت میں اتار چڑھاؤ آتا رہا لیکن معذوری کی سی جو کیفیت پیدا ہو گئی تھی اس میں ایسا کوئی نمایاں فرق نہ  آیا  جو مفتی صاحب کو عملی زندگی میں دوبارہ لا سکے

حضرت مفتی صاحب  چھ سال تک فالج کے عارضے میں مبتلا رہے.. اس پورے عرصہ میں تقریباً گھر ہی تک محدود رہے ..

یہاں تک کہ 3 فروری 1995  مطابق  2 رمضان المبارک بروز جمعہ آپ کا انتقال ہو گیا..

مولانا عبد الرشید نعمانی صاحب نے آپ کا جنازہ پڑھایا آپ کی وصیت کے مطابق آپ کو دار العلوم کراچی کے قبرستان میں سپرد خاک کیا گیا

حضرت مفتی صاحب کی قبر دارالعلوم کراچی  کے عمومی قبرستان میں واقع ہے.

۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ مولانا محمد عمر رفيق. "حضرت مولانا مفتی ولی حسن ٹونکی نور اللہ مرقدہٗ (تعارفی تذکرہ)". جامعہ العلوم الاسلامیہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2021. 
  2. Shaykh Muhammad Husain Siddiqi. "Sawaneh Hazrat Mufti Wali Hasan Tonki (r.a) By Shaykh Muhammad Husain Siddiqi". اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2021. 
  3. "Mufti Wali Hasan Tonki, Grand Mufti of Pakistan". 3 December 2018. اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2021. 
  4. "SCHOOL LEADERSHIP". iqratrust.edu.pk/en. اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2021. 
  5. "مفتی ولی حسن ٹونکی". جامعہ العلوم الاسلامیہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2021.