رحبہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

رحبہ کے دن علی ابن ابی طالب کے دوران خلافت انہوں نے کوفہ میں اصحاب رسول سے پوچھا اسلام کے پیغمبر نے جو غدیر خم میں فرمایا لوگوں کے لئے اور پورا واقعہ بیان کرتے ہوئئے اس کی گواہی دیں. اس وقت ان لوگوں میں سے 12 سے 30 نے درمیان میں کھڑے ہو کر گواہی دیتے ہیں کہ محمد نے کہا: من کنت مولاہ فعلی مولاہ» یا «الا من کنت مولاہ فعلی مولاہ، اللہم وال من والاہ و عاد من عاداہ و احب من احبه ہو ابغض من ابغضہ و اعن من اعانه یعنی جس کا میں سرپرست ہوں یا فرمایا آگاہ رہو جو بھی میں اس کا مالک ہوں ، پھر یہ علی اس کا آقا ہے ، بارالہا وہ جو اس سے محبت کرے اس سے محبت کر اور جو اس سے دشمنی اس سے دشمنی فرما جو اس کی مدد کرے اس مدد فرما۔ [1]

گواہی دینے والے صحابی[ترمیم]

اس دن کے مشہور گواہ ہیں: [2]

  1. ابو زینب بن عوف انصاری۔
  2. ابو عمرہ بن عمرو بن محسن انصاری۔
  3. ابو فضلیہ انصاری (شہید صفین)۔
  4. ابوقدامہ انصاری (شہیدصفین)
  5. ابو لیلی انصاری (شہید صفین)
  6. ابو ہریرہ۔
  7. ابو الہیثم بن تیہان (شہید صفین)
  8. سبط بن وادیہ انصاری خزرجی۔
  9. حبشی بن جناده سلولی۔
  10. ابوایوب انصاری۔
  11. خزیمہ بن ثابت کوذو الشہادتین کے نام سے جانا جاتا ہے (شہید صفین)
  12. ابو شریح خویلد بن عمرو خزاعی۔
  13. زید یا یزید بن شراحیل انصاری۔
  14. سہل بن حنیف۔
  15. ابو سعید سعد بن مالک خدری
  16. ابو العباس سہل بن سعد انصاری۔
  17. عامر بن لیلی غفاری۔
  18. عبد الرحمان بن عبد رب انصاری۔
  19. عبداللہ بن ثابت انصاری
  20. عبید بن عازب انصاری۔
  21. ابو طریف عدے بن حاتم۔
  22. عقبہ ابن عامر جہنی۔
  23. ناجیہ بن عمرو خزاعی۔
  24. نعمان بن عجلان انصاری (شہید کربلا)[3]

گواہی سے انکار کرنے والے[ترمیم]

خلیفہ علی نے ان لوگوں کی مذمت کی اور انہیں بیماری اور مشکلات کی بد دعا دی کہ جنہوں نے کسی نہ کسی بہانے سے گواہی دینے سے انکار کیا ، جنہیں کچھ روایتوں نے مندرجہ ذیل نام دیا ہے:

  1. ابو حمزہ انس بن مالک، خادم محمد۔ برص میں مبتلا ہو کر مرے۔
  2. براء بن عازب انصاری
  3. جریر بن عبداللہ بجلی۔
  4. زید بن ارقم خزرجی۔
  5. عبدالرحمن بن مدلج۔
  6. یزید بن ودیعہ۔

عبد الحسین امینی نے الغدیر میں دو واقعات کا ذکر کیا ہے جن کا ذکر رحبہ میں کیا گیا ہے ، پہلا واقعہ 35ھ میں پیش آیا۔ جب علی ابن ابی طالب نے رحبہ میں اور کوفہ میں علی کے قیام کا آغاز کیا تھا۔ جو کہ کوفہ کا وسیع چوک تھا ، اور اس نے چوک میں موجود ہجوم کے درمیان اپنا دفاع کیا۔ رحبہ میں دوسرا حوالہ سال 36 اور 37 ہجری میں راہبہ میں سواروں کی کہانی سے متعلق ہے ، جس میں رحبہ میں سواروں کا ایک گروہ علی کے پاس آیا اور اس کا استقبال ان الفاظ کے ساتھ کیا "سلام ہو یا مولای" یا " السلام علیک یا مولانا " اور علی نے ان سے اس سلام کی وجہ اور انداز کے بارے میں پوچھا اور انہوں نے جواب میں غدیر کا ذکر کیا۔ دونوں صورتوں میں کچھ لوگوں نے اس حدیث اور علی کی برتری کو تسلیم نہیں کیا جس پر علی نے ان پر لعنت اور بددعا دی۔ جو بعد میں پوری ہوئیں۔[4] دوسروں کے مطابق، اس کی طرف سے بیان کیا گیا تھا۔ ویلفرڈ میڈلنگ بعد صفین کی لڑائی کے درمیان تنازعہ کے دوران علی کے شیعوں اور خوارج . مدلنگ کے مطابق ، علی نے واضح طور پر ابوبکر اور عمر ، سابق خلیفہ سے آگے مذہبی اتھارٹی قائم کی۔ [5] [6]

سنی اسلام کی یہ روایت ، جیسے احمد بن حنبل کی مسند ، حمل سے متعلق خصوصیات ، جیسا کہ نہج البلاغہ کا شارح، ابن ابی الحدید معتزلی ، ابن الاثیر کے اسد الغابہ ، ابن حجر ، فرج ابن جوزی ، محمد بن طلحہ شافعی ، ابن کثیر ، ابن جوزی ، سیوطی ، ہیثمی ، طبرانی ، محمد بن جریر طبری وغیرہ میں ہے۔[7]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی ربط۔[ترمیم]