سہل بن حنیف

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

سہل بن حنیف بڑے شجاع اور صاحب حکمت صحابی تھے۔

نام ونسب[ترمیم]

سہل نام، ابو سعد کنیت، سلسلۂ نسب یہ ہے،سہل بن حنیف بن واہب بن حکیم بن ثعلبہ بن حارث بن مجدعہ بن عمرو بن جشم بن عوف بن عمرو بن عوف بن مالک بن اوس ۔

اسلام[ترمیم]

ہجرت سے قبل مشرف باسلام ہوئے۔

غزوات میں شرکت[ترمیم]

ابن سعد کی روایت کے مطابق علی سے مواخاۃ ہوئی تمام غزوات میں شریک تھے،غزوۂ احد میں جب آنحضرتﷺ چند صحابہ کے ساتھ میدان میں رہ گئے تھے یہ بھی ثابت قدم رہے اسی دن موت پر بیعت بھی کی، رسول اللہ ﷺ کی طرف جو تیر آتے یہ ان کا جواب دیتے تھے،آنحضرتﷺ لوگوں سے فرماتے کہ ان کو تیر دو، یہ سہل ہیں۔ خلافتِ راشدہ میں سے علی کے عہد مبارک میں مدینہ کے امیر تھے کوفہ سے امیر المومنین کا فرمان پہنچا کہ یہاں آجاؤ،چنانچہ مدینہ سے کوفہ چلے گئے۔ جنگ جمل کے بعد بصرہ کے والی بنائے گئے،جنگ صفین میں علی کی طرف سے شرکت کی، اورلڑائی کے بعد کوفہ واپس چلے آئے۔ اسی زمانہ میں فارس کے امیر بنائے گئے ،اہل فارس نے سرتابی کرکے خارج البلد کردیا، علی نے ان کی بجائے زیاد بن ابیہ کو وہاں کا حاکم مقرر فرمایا۔

وفات[ترمیم]

38ھ میں بمقام کوفہ انتقال فرمایا،علی نے نماز جنازہ پڑھائی،چھ تکبیریں کہیں اور فرمایا کہ یہ اصحاب بدر میں تھے۔

اولاد[ترمیم]

دو بیٹے یادگار چھوڑے،ابو امامہ اسعد اور عبداللہ ،اول الذکر آنحضرتﷺ کے عہد مقدس میں پیدا ہوئے۔

حلیہ[ترمیم]

نہایت خوبصورت اورپاکیزہ منظر تھے،بدن نہایت سڈول تھا، ایک غزوہ میں آنحضرتﷺ کے ہمرکاب تھے،وہاں نہر جاری تھی،نہانے کے لیے گئے،کسی انصاری نے جسم دیکھ کر کہا،کیسا بدن پایا ہے؟ میں نے تو ایسا بدن کبھی نہیں دیکھا تھا، سہل کو غش آگیا ،اٹھا کر لائے گئے بخار چڑھا تھا، آنحضرت ﷺ نے پوچھا کیا معاملہ ہے،لوگوں نے قصہ بیان کیا، فرمایا تعجب ہے لوگ اپنے بھائی کا جسم یا مال دیکھتے ہیں اور برکت کی دعا نہیں کرتے اس لیے نظر لگتی ہے۔[1] [2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. اصابہ:3139
  2. تہذیب التہذیب:1/25