وحشی بن حرب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
وحشی بن حرب
معلومات شخصیت
پیدائش 7ویں صدی  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جزیرہ نما عرب  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 660ء کی دہائی  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جزیرہ نما عرب  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Black flag.svg خلافت راشدہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ جنگجو  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل نیزہ بازی  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
لڑائیاں اور جنگیں غزوہ احد،  فتنۂ ارتداد کی جنگیں  ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

وحشی بن حرب صحابی غزوہ احد میں رسول اللہ کے چچا حمزہ بن عبد المطلب کو شہید کیا۔

نام ونسب[ترمیم]

وحشی نام ،ابو وہمہ کنیت، نسلاً حبشی اور جبیر بن مطعم کے غلام تھے۔

حمزہ کا قتل[ترمیم]

جنگِ بدر میں حمزہ نے جبیر بن مطعم کے چچا طعیمہ بن عدی کو قتل کیا تھا، اس لیے جبیر کو اس کے انتقام کی بڑی فکر تھی،جب احد کی تیاریاں شروع ہوئیں تو جبیر نے وحشی سے کہا کہ اگر تم چچا کے انتقام میں حمزہ کو قتل کردو تو تم آزاد ہو،آزادی کا نام سنکر وحشی فوراً تیار ہو گیا، میدان جنگ میں جب صف آرائی ہوئی اور مشرکین کی طرف سے "سباع" نے مبارز طلبی کی تو حمزہ اس کے مقابلہ کو نکلے اورایک ہی وار میں اس کا کام تمام کر دیا،وحشی ایک چٹان کی آڑ میں گھات میں بیٹھا ہوا تھا، جیسے ہی حمزہ"سباع" کو قتل کرکے ادھر سے گزرے اس نے نیزہ سے ایسا وار کیا کہ نیزہ ناف کے پار اتر گیا اور حمزہ اسی جگہ شہید ہو گئے۔[1]

اسلام[ترمیم]

آنحضرتﷺ کو چچا کی شہادت کا بڑا قلق تھا، اس لیے وحشی اشتہاری مجرم ہو گیا اورجب مکہ فتح ہو گیا تو اس نے طائف میں پناہ لی،جب طائف کا وفد آنحضرتﷺ کی خدمت میں جانے لگا تو لوگوں نے وحشی سے کہا تم بھی وفد کے ساتھ چلے جاؤ،کیوں کہ رسول اللہ ﷺ سفراء کے ساتھ بُرا برتاؤ نہیں کرتے، لوگوں کے کہنے سے وحشی ساتھ ہو گیااور مدینہ پہنچ کر دفعۃً کلمہ پڑھتے ہوئے رسول اللہ ﷺ کے سامنے آگیا۔[2] حمزہ رسول اللہ ﷺ کے بڑے محبوب چچا تھے، آپ پر ان کی شہادت کا نہایت شدید اثر تھا،لیکن وحشی اولاً سفیر کی حیثیت سے اورپھر مسلمان ہوکر آئے تھے، اس لیے ان کے ساتھ کوئی بُرا سلوک نہیں ہو سکتا تھا، تاہم آپ نے ان کے چہرہ پر نظر ڈالنا گوارا نہ کیا وحشی سے پوچھا تم ہی نے حمزہ کو شہید کیا تھا، انہو ں نے محجوب ہو کر عرض کیا آپ نے جو سنا ہے صحیح ہے، آپ نے فرمایا اگر ہو سکے تو تم اپنا چہرہ مجھے نہ دکھلاؤ وحشی تعمیل ارشاد میں فوراً ہٹ گئے۔[1]

حسن تلافی[ترمیم]

حمزہ کی شہادت کا جرم وحشی کے دل پر ایسا زخم تھا جو انہیں چین لینے نہیں دیتا تھا اور وہ قبولِ اسلام کے بعد سے برابر اس کی تلافی کی کوشش میں لگے ہوئے تھے،خوش قسمتی سے بہت جلد ان کو اس کا موقع مل گیا،آنحضرتﷺکی وفات کے بعد جب مشہور مدعیِ نبوت مسیلمہ کذاب کا فتنہ اٹھا تو وحشی نے کہا اب وقت ہے کہ میں مسیلمہ کو قتل کرکے حمزہ کے خون کا کفارہ ادا کردوں؛چنانچہ وہی نیزہ جس سے حمزہ کو شہید کیا تھا،لیکر مسیلمہ کے مقابلہ میں جانے والی مہم کے ساتھ ہو گئے [2] اور میدان جنگ میں پہنچ کر مسیلمہ کی تاک میں لگے رہے،وہ ایک دیوار کے سوراخ کے پار نظر آیا ،انہوں نے نیزہ تان کر اس کے سینہ پر ایسا وار کیا کہ نیزہ سینہ کے پار ہو گیا ،جو کچھ کمی رہ گئی اس کو ایک انصاری نے بڑھ کر پورا کر دیا [1] اس طرح وحشی نے اسلام کے بہت بڑے دشمن کا خاتمہ کرکے حمزہ کا خون بہا ادا کر دیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ بخاری کتاب المغازی باب قتل حمزہ
  2. ^ ا ب سیرت ابن ہشام>سیرت ابن ہشام:1/454