سفیان بن عبداللہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سفیان بن عبداللہ
معلومات شخصیت
مقام پیدائش طائف  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مقام وفات طائف  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ والی،  محدث  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سفیان بن عبد ﷲ ثقفی آپ کا نام سفیان ابن عبد اﷲ ابن ربیعہ ہے، کنیت ابو عمرو قبیلہ بنی ثقیف سے ہیں، اہل طائف میں سے ہیں، زمانۂ فاروقی میں طائف کے حاکم رہے، کل پانچ حدیثیں آپ سے مروی ہیں، بڑے متقی عابد تھے۔[1] عمر فاروقِ اعظم نے عثمان بن ابو العاص کو طائف سےمعزول کرکےبحرین کاگورنر بنایا اور پھر ان کی جگہ سفیان بن عبد اللہ ثقفی کو طائف کا گورنر مقرر فرمادیا۔ [2] واضح رہے کہ حضرت سیِّدُنا سفیان بن عبد اللہ ثقفی رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ وہی صحابی ہیں کہ جنہوں رسولِ اَکرم، شاہ ِبنی آدم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے یہ سوال کیاتھا کہ’’آ پ اسلام کے بارے میںمجھے ایسی بات بتائیں جس کے متعلق میں آپ کے علاو ہ کسی اور سے نہ پوچھوں؟‘‘اللہ عَزَّ وَجَلَّ کے پیارے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے ارشاد فرمایا: ’’قُلْ آمَنْتُ بِاللّٰہِ فَاسْتَقِمْ یعنی یہ کہوکہ میں اللہ عَزَّ وَجَلَّ پر ایمان لایا پھر اس پر ثابت قدم رہو۔‘‘[3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مرآۃ المناجیح شرح مشکوۃ المصابیح مفتی احمد یار خان نعیمی جلد اول صفحہ32نعیمی کتب خانہ گجرات
  2. …الاستیعاب، سفیان بن عبد اللہ، ج2،۔
  3. مسلم، کتاب الایمان، جامع اوصاف الاسلام،