ربیعہ بن کعب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ربیعہ بن کعب
معلومات شخصیت

نام و نسب[ترمیم]

ربیعہ بن کعب اسلمی ربیعہ نام، والدکانام کعب، قبیلہ اسلم سے تعلق رکھتے ہیں امام المؤرخین محمدبن سعد، علامہ ابن عبدالبر، ربیعہ بن کعب کو اصحابِ صفہ میں شمار کرتے ہوئے کہا کہ مدینہ منورہ میں ان کا کوئی گھراور نہ کوئی مخصوص ٹھکانہ تھا، بلکہ یہ غریب ومسکین تھے۔ [1]

اسلام[ترمیم]

ربیعہ آنحضرتﷺ کے مدینہ تشریف لانے کے بعد مشرف باسلام ہوئے ،مفلس ونادار تھے، اس لیے اصحابِ صفہ کے مقدس زمرہ میں شامل ہو گئے گویہ مدینہ کے باشندہ نہ تھےلیکن یہاں مستقل گھر بنالیا تھا اور ان کا شمار اہل مدینہ میں ہونے لگا تھا۔ [2]

خدمت نبوی[ترمیم]

بیوی بچوں کی فکر سے بالکل آزاد تھے، ایک مرتبہ رسول اللہ ﷺ نے پوچھا شادی نہ کروگے، عرض کی شادی کا مطلق ارادہ نہیں [3] اس آزادی کی وجہ سے انہیں خدمت نبوی ﷺ کی سعادت کا بہت موقع ملتا تھا؛چنانچہ ہر وقت آستان نبوی پر پڑے رہتے تھے حضور کے لیے وضو کا پانی رکھنا مخصوص خدمت تھی ،غزوات میں بھی ہمرکاب رہتے تھے۔ [4]

عطیہ رسول[ترمیم]

ان کی تنگدستی کی وجہ سے رسول اللہ ﷺ نے وجہ معاش کے لیے تھوڑی سی زمین عطا فرمائی تھی ، اس کے پاس کچھ کھجور کے درخت تھے، ان کے بارہ میں ایک مرتبہ ان میں اورحضرت ابوبکر صدیق میں کچھ اختلاف ہو گیا، ربیعہ کے تمام اہل قبیلہ جمع ہو گئے، مگر انہوں نے ان کو روکا اورسمجھایا کہ کسی کی زبان سے کوئی ایسی بات نکلنے نہ پائے جس سے صدیقؓ کو صدمہ پہنچےاوران کی ناراضی خدا اوررسول کی نارضی کا موجب ہو،آخر میں رسول اللہ ﷺ نے ربیعہ کے موافق فیصلہ فرمایا۔ [5]

نقل مکان[ترمیم]

آقا کی زندگی بھر مدینہ میں رہے، آپ کی وفات کے بعد برداشتہ خاطر ہوکر اپنے قبیلہ میں چلے گئے۔ [6]

وفات[ترمیم]

ربیعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ تمام غزوات میں شریک رہے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے وصال تک آپ ہی کے ساتھ آپ کے خادم بن کر رہے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے وصال کے بعد مدینہ منورہ چھوڑ کر اپنے قبیلہ’’بنو اسلم‘‘ میں ’’یَیْسَن‘‘ نامی بستی میں چلے گئے، یہ مدینہ منورہ سے ایک بریدپ رہے۔ واقعہ حرّہ پیش آنے تک اسی جگہ سکونت اختیار کیے رہے اور واقعہ حرّہ کے سال ماہِ ذی الحجہ میں ان کا انتقال ہوا۔ [7]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. طبقات ابنِ سعد: 2/31، الإصابۃ : 1/498
  2. (اسد الغابہ:2/170)
  3. (مستدرک حاکم:3/521)
  4. (ابن سعد،4،ق2:44)
  5. (ایضاً)
  6. (مستدرک حاکم:3/521)
  7. الاصابۃ: 4/167۔