عیاش بن ابی ربیعہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

عیاش بن ابی ربیعہ یہ ابو جہل کے بھائی تھے۔

نام ونسب[ترمیم]

عیاش نام، ابوعبدالرحمن کنیت، نسب نامہ یہ ہے، عیاش بن ابی ربیعہ بن عبد اللہ،بن عمروبن مخزوم مخزومی ،عیاش مشہور دشمن اسلام ابو جہل کے ماں جائے بھائی تھے۔[1]

اسلام وہجرت[ترمیم]

عیاش ابوجہل جیسے کینہ پرور کے بھائی ہونے کے باوجود طبیعت حق قبول کرنے کے لیے آمادہ تھی ؛چنانچہ دعوت اسلام کے ابتدائی ہی ایام میں یعنی آنحضرتﷺ کے ارقم کے گھر میں تشریف لانے کے قبل دولت اسلام سے بہرور ہوئے اورہجرت ثانیہ میں مع اپنی بیوی اسماء کے ہجرت کرکے حبشہ چلے گئے،یہاں ایک صاحبزادہ عبد اللہ پیدا ہوئے،پھر حبشہ سے مکہ آئے اور مکہ سے عمرفاروق کے ساتھ ہجرت مدینہ کا شرف حاصل کیا۔[2]

آزمائش[ترمیم]

ابوجہل جو دوسروں کو اسلام اور مسلمانوں کے خلاف برانگیختہ کرتا تھا، اوراس جرم میں اپنے زیردستوں کو سخت سے سخت سزائیں دیتا تھا، اپنے بھائی کا اسلام کس طرح ٹھنڈے دل سے گوارا کرلیتا؛چنانچہ ان کی تلاش میں مکہ سے مدینہ آ گیا اور عیاش سے کہا کہ والدہ تمہاری جدائی سے سخت بے قرار ہیں اورانہوں نے قسم کھا لی ہے کہ جب تک وہ تم کو دوبارہ نہ دیکھ لیں گی اس وقت تک نہ سر میں تیل ڈالیں گی، اورنہ سایہ میں بیٹھیں گی،عیاش ماں کی یہ حالت سن کر ان کی محبت میں ابو جہل کے ساتھ مکہ واپس آ گئے،یہاں پہنچ کر ابوجہل نے ان کو قید کر دیا اور وہ عرصہ تک اس قید میں گرفتار رہے،آنحضرتﷺ دوسرے مسلمان قیدیوں کے ساتھ ان کے لیے بھی دعا فرماتے تھے؛کہ خدایا ان کو مشرکین کے ظلم سے نجات دلا۔[3] عیاش کے ساتھ ایک اوربزرگ ولید بھی اسی جرم میں قید تھے،وہ کسی طرح چھوٹ کر نکل گئے اورآنحضرت ﷺ سے ان کی مصیبت بیان کی آنحضرت ﷺ نے انہیں دوبارہ عیاش اورسلمہ کو چھڑانے کے لیے واپس کیا؛ چنانچہ یہ مکہ گئے اوران دونوں بزرگوں کو قید سے نکال لائے۔

وفات[ترمیم]

خلافت ابوبکر میں فتوحات شام میں مجاہدانہ شریک ہوئے اورایک روایت کی رو سے اسی سلسلہ میں یرموک یا یمامہ کے معرکہ میں شہید ہوئے اور دوسری روایت کی رو سے شام میں وفات پائی؛لیکن طبری کے بیان کے مطابق شام سے واپس ہو کر مکہ میں وفات پائی۔[4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. اسدالغابہ:4/161
  2. ابن سعد ،جزو4،ق1:95
  3. استیعاب:2/509
  4. اصابہ:5/47

سانچہ:مہاجرین حبشہ