ابوسبرہ بن ابو رہم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ابوسبرہ بن ابو رہم غزوہ بدر میں شریک ہونے والے مہاجر صحابی تھے۔

نام ونسب[ترمیم]

ابوسبرہ کنیت ہے مگر اس کی شہرت نے اصل نام چھپادیا، نسب نامہ یہ ہے ابو سبرہ بن ابی رہم بن عبد العزیٰ بن ابی قیس بن عدوو بن نصربن مالک بن حسل بن عامر بن لوئی قرشی عامری،ان کی والدہ برہ عبد المطلب کی بیٹی تھیں اس رشتہ سے آنحضرتﷺ کے پھوپھی زاد بھائی ہوئے۔

اسلام وہجرت[ترمیم]

ابوسبرہ سابقین اسلام میں تھے اور حبشہ کی دونوں ہجرتوں کا شرف حاصل کیا، دوسری ہجرت میں ان کی بیوی کلثوم بھی ساتھ تھیں،ہجرت مدینہ کے بعد دوسرے مہاجرین کے ساتھ حبشہ سے مدینہ آئے اور منذربن محمد کے یہاں اترے،آنحضرت ﷺ نے ان میں اورسلمہ بن سلامہ میں مواخاۃ کرادی۔

غزوات[ترمیم]

مدینہ آنے کے بعد بدر، احد اورخندق وغیرہ جس قدر غزوات ہوئے سب میں شریک رہے،[1] تاحیات نبوی ﷺ مدینہ میں قیام رہا،آپ کی وفات کے بعد مکہ چلے آئے،بدری صحابیوں میں تنہا یہی ہیں،جنہوں نے مدینہ کا قیام ترک کرکے دوبارہ مکہ کی سکونت اختیار کی۔[2]

وفات[ترمیم]

مکہ مکرمہ میں عثمان غنی کے عہدِ خلافت میں وفات پائی۔[3][4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. استیعاب:2/706
  2. اصابہ:7/181
  3. ابن سعد،جزو3،ق1:293
  4. اصحاب بدر،صفحہ 128،قاضی محمد سلیمان منصور پوری، مکتبہ اسلامیہ اردو بازار لاہور