سنان بن سلمہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سنان بن سلمہ بن محبق
Sinan Bin Salamah bin Mohbik.jpg
سنان بن سلمہ بن محبک کی قبر کا دروازہ
پیدائش628
مکہ، جزیرہ نما عرب
وفاتچغر مٹی، پشاور، پاکستان
وفاداریگورنر امویہ خلیفہ معاویہ اول
درجہگورنر
مقابلے/جنگیںفتح سندھ، قلات، کوہاٹ اور بنوں امویوں کے لیے
تعلقاتسلمہ بن محبک (والد)

سنان بن سلمہ بن محبق ( (عربی: سنان بن سلمة بن المحبق)‏ (8/628-53AH/673AD) فتح مکہ کے دن پیدا ہوئے۔

سیرت[ترمیم]

سلامہ، ان کے والد نے جنگ حنین کے لیے روانہ ہونے کی تیاری کی اور ان کی ولادت کی خبر سن کر مجبوراً اپنی مہم کو روک دیا لیکن بعد میں ان الفاظ کا اظہار کیا:

سنان (جنگ کا ایک آلہ) جسے میں اللہ کی راہ میں استعمال کروں گا، مجھے اپنے بیٹے سے زیادہ عزیز ہے۔[1]

محمد نے سنان کے لیے دعا کی جب اسے اس کے پاس لے جایا گیا۔ اس نے ہمیشہ کی طرح اپنا لغواب منہ میں ڈالا۔ اس کے چہرے کو بھی مبارک ہاتھوں سے چھوا۔ اس نے اس کا نام سنان رکھا اپنے باپ کی باتوں کے تابع۔ [2]

سنان ایک بچہ تھا جسے وہ باغ میں بکھری کھجوریں جمع کرنے کا عادی تھا۔ جس دن وہ دوسرے بچوں کے ساتھ کھجوریں جمع کرنے میں مصروف تھے، خلیفہ عمر رضی اللہ عنہ وہاں پہنچ گئے۔ بچے کچھ ہی دیر میں چلے گئے لیکن سنان اسی جگہ پر جما رہا اور جانے کے لیے منتقل نہیں ہوا۔ خلیفہ قریب آیا اور اس سے دریافت کیا لیکن اس نے اس انداز میں جواب دیا جس سے خلیفہ کی محبت اور مدد کی کہ وہ صحیح سلامت گھر پہنچ سکیں۔ [3]

جنگ[ترمیم]

سنان بن سلامہ بن محبق نے امیر معاویہ اول (41-60ھ/663-81AD) کے زمانے میں 42 اور 48 ہجری (664,670 عیسوی) کے دوران دو مرتبہ سندھ (جدید پاکستان) کے گورنر کے طور پر بھیجا تھا۔ [4]

  • قلات : سنہ 42 ہجری (664 عیسوی) میں عبداللہ بن سوار عبدی دیگر جنگجوؤں کے ساتھ قلات کی جنگ میں شہید ہوئے، زیاد بن ابیح کو خراسان کا گورنر مقرر کیا گیا۔ اس نے عبداللہ بن سوار عبدی کے شروع کردہ مشن کو مکمل کرنے کے لیے سنان کو تعینات کیا، سنان قلات کے علاقے کو اپنے کنٹرول میں لانے میں کامیاب ہوگیا۔
  • سندھ : سن 44 ہجری (668 عیسوی) میں وہ سندھ کی وادی میں داخل ہوا جہاں سے اس نے مکران کی طرف اپنی پیش قدمی جاری رکھی۔ مکران کے علاقے کو فتح کرنے کے بعد اس نے اصلاحات کیں۔
  • کوہاٹ : 53 (673 عیسوی) میں، کوہاٹ اور بنوں کو فتح کر کے وہ پشاور کی وادی میں داخل ہوا۔ وہ بدھ مت کی طاقت کے خلاف لڑا۔ اس جنگ میں سنان کئی ساتھیوں کے ساتھ شہید ہوا۔

بھی دیکھو[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Abdul Bar، Ibne. Al-Isteeab, fi Maghrifatel Ashab. Bairut: Darul Fikr. 
  2. Abi Shaiba، Ibne. Musannaf, vol:7. Bairut. صفحہ 124. 
  3. Ibne Saad، Muhammad. Al-Tabaqaat, vol:7. Bairut. صفحہ 12. 
  4. Ishaq، Dr. Muhammed (1976). Indian’s Contributionto the Study of Hadith Literature. Bangladesh: Dacca University. صفحات 17–18.