اسود بن سریع

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

اسود بن سریعصحابی رسول اور نعت گو شاعر ہیں۔

نام ونسب[ترمیم]

اسودنام، ابو عبد اللہ کنیت، نسب نامہ یہ ہے ،اسود بن سریع بن حمیر بن عبادہ بن نزال بن مرہ بن مقاطس بن عمرو بن کعب بن سعد بن زید مناۃ بن تمیم تمیمی۔

قبول اسلام[ترمیم]

فتح مکہ کے بعد اسلام لائے، قبول اسلام کے بعد متعدد غزوات میں آنحضرتﷺ کا مشرف ہمرکابی حاصل کیا؛چنانچہ حنین میں ساتھ تھے، ان کا بیان ہے کہ میں چار غزوات میں رسول اللہ ﷺ کے ساتھ تھا[1]

بصرہ کا قیام[ترمیم]

عثمان کی شہادت کے بعد بال بچوں کو لیکر بصرہ چلے گئے اور یہیں اقامت اختیار کرلی، جامع بصرہ کے قریب مکان تھا جہاں وہ فرائض قضاء انجام دیتے تھے،

وفات[ترمیم]

بصرہ میں 40ھ میں وفات پائی۔

فضل وکمال[ترمیم]

فضل وکمال کے لیے یہ سند کافی ہے کہ جامع بصرہ میں قاضی تھے، آٹھ حدیثیں بھی ان سے مروی ہیں،

شاعری میں مقام[ترمیم]

شاعری میں ممتاز شخصیت رکھتے تھے۔ کبھی کبھی دربارِ رسالت میں حمد ونعت کی نذر پیش کرتے تھے، ایک مرتبہ قبول ِ اسلام کے ابتدائی زمانہ میں حمد ونعت کہہ کر لائے اورعرض کیا،یا رسول اللہ! خدا کی حمد اورحضور کی مدح میں کچھ اشعار عرض کیے ہیں، فرمایا میری مدح سنانے کی ضرورت نہیں،البتہ خدا کی حمد سناؤ ؛چنانچہ انہوں نے حمد سنا نی شروع کی،اس درمیان میں ایک کشیدہ قامت آدمی آگیا، اسے دیکھ کر آنحضرتﷺ نے انہیں روک دیا، اس کے واپس جانے کے بعد پھر سننے لگے، دوبارہ پھر وہ شخص آیا پھر آپ نے اسود کو خاموش کر دیا، اس کے واپس جانے کے بعد اسود نے پوچھا یا رسول اللہ یہ کون شخص ہے، جس کے آنے پر آپ روک دیتے ہیں اور چلے جانے کے بعد پھر سنتے ہیں،فرمایا یہ عمر بن الخطاب ہیں، ان کو باطل اشیاء سے کسی قسم کا لگاؤ نہیں(اس سے مراد شاعری ہے ورنہ حمد اس سے مستثنی ہے)۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. تاریخ الکبیر امام بخاری
  2. مستدرک حاکم،3/615