سلیط بن عمرو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

سلیط بن عمرو العامریغزوہ بدر اور تمام غزوات میں شریک ہونے والے مہاجر صحابی ہیں۔

نام ونسب[ترمیم]

سلیط نام،والد کا نام عمروتھا، نسب نامہ یہ ہے، سلیط بن عمروبن عبد شمس بن عبد ودبن نضر بن مالک بن حسل بن عامر بن لوی قرشی،ماں کا نام خولہ تھا، نانہالی شجرہ نسب یہ ہے،خولہ بنت عمروبن حارث بن عمروبن عبس۔

اسلام[ترمیم]

دعوت اسلام کے آغاز میں مکہ میں مشرف باسلام ہوئے، اورحبشہ کی ہجرت کا شرف حاصل کیا، پھر مدینہ آئے۔

غزوات[ترمیم]

مدینہ آنے کے بعد بدر،احد، خندق وغیرہ تمام معرکوں میں آنحضرتﷺ کے ساتھ شریک رہے۔[1]

سفارت[ترمیم]

میں جب نے آس پاس کے امرا اورسلاطین کے نام دعوتِ اسلام کے خطوط بھیجے تو ہوزہ بن علی حنفی کے پاس خط لے جانے کی خدمت سلیط کے سپرد ہوئی،ہوزہ نے بڑی خاطر ومدارت کی اورانعام واکرام اورخلعت سے نوازا اورجواب میں لکھا کہ تم جس چیز کی دعوت دیتے ہو وہ بہت بہتر ہے، لیکن میں بھی عرب کا ایک معزز ومقتدر شخص ہوں، اس لیے اگر بعض امور میں مجھے بھی شریک کرلو تو میں تمہاری پیروی کے لیے تیار ہوں، آنحضرتﷺ نے یہ جواب سنا تو فرمایا کہ اگر وہ زمین کا ایک چھوٹا سا ٹکڑا بھی مانگے تو میں نہیں دے سکتا۔[2]

وفات[ترمیم]

ابوبکرصدیق کے عہدِ خلافت میں فتنہ ارتداد کی مشہور جنگ یمامہ میں شہید ہوئے،اولاد میں تنہا ایک لڑکے سلیط بن سلیط تھے۔[3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ابن سعد،جزو4،ق1:149
  2. زرقانی :3/470
  3. اصحاب بدر،صفحہ 93،قاضی محمد سلیمان منصور پوری، مکتبہ اسلامیہ اردو بازار لاہور