ثابت بن ضحاک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ثابت بن ضحاک
معلومات شخصیت

ثابت بن ضحاک ایک صحابی تھے۔ آپ کی کنیت ابو زید تھی۔

نام ونسب[ترمیم]

ثابت نام، ابوزید کنیت،قبیلہ اشہل سے ہیں، سلسلۂ نسب یہ ہے ثابت بن ضحاک بن خلیفہ بن ثعلبہ بن عدی بن کعب بن عبد الاشہل بعثت نبوی کے تیسرے سال تولد ہوئے، بعض لوگ نے 3ھ سال ولادت قرار دیا ہے،لیکن یہ قطعا غلط ہے۔

غزوات[ترمیم]

غزوہ حمراءالاسد میں شریک تھے، خندق میں آنحضرتﷺ کے ساتھ سوار تھے اورصحیح مسلم کی روایت کے بموجب بیعت رضوان میں شرکت کی تھی ،ابن مندہ نے لکھا ہے کہ امام بخاری نے ان کی شرکت بدر تسلیم کی ہے عجب نہیں کہ یہ خیال صحیح ہو، ترمذی نے بھی بدر میں شریک ہونے کا تذکرہ کیا ہے۔

ابن سعد کی روایت کے بموجب غزوۂ احد کی شرکت بھی ثابت ہوتی ہے ؛کیوں کہ انہوں نے حمراء الاسد کے ذکر میں ضمناً یہ بھی بیان کیا ہے کہ اس غزوہ میں صرف وہی لوگ شریک تھے جنھوں نے غزوہ احد میں شرکت کی تھی۔[1]

وفات[ترمیم]

عہد نبوی ﷺ کے بعد شام کی سکونت اختیار کی پھر شام سے بصرہ منتقل ہو گئے اور وہیں پر مستقل سکونت پزیر ہو گئے۔ عبد اللہ بن زبیرکے عہد خلافت میں انتقال فرمایا، بعضوں نے 46ھ کی تصریح کی ہے۔

آپ سے چودہ احادیث کی روایت ہے۔[2]

اولاد[ترمیم]

ایک بیٹا چھوڑا، زید نام تھا، اسی بنا پر بعض نے ان کو حضرت زید بن ثابت صحابی مشہور کا والد سمجھا ہے،لیکن یہ غلطی ہے،زید بن ثابتؓ کے والد جاہلیت میں فوت ہوئے اورکفر کی حالت میں مارے گئے ،اس کے ماسواء زید خود ان کے ہمسن تھے اوراس بنا پر یہ ان کے باپ کیونکر ہوسکتے ہیں۔ یہ خیال اس لحاظ سے بھی ناقابل التفات ہے کہ ابو قلابہ نے ان سے یہ روایتیں کی ہیں اور ابو قلابہؓ 64ھ سے پیشتر کسی طرح روایت کے قابل نہیں ہوسکتے تھے، کیونکہ انہوں نے 69 ھ کے بعد تحصیل میں قدم رکھا تھا اورحضرت زید بن ثابتؓ کے متعلق عام خیال یہ ہے کہ 48ھ میں فوت ہوچکے تھے۔

فضل وکمال[ترمیم]

حضرت ثابتؓ کے سلسلۂ سے جو روایتیں مروی ہیں ان کی تعداد 14 ہے، راویوں کے زمرہ میں ابو قلابہ اورعبدالرحمن بن معقل داخل ہیں۔

حوالہ جاات[ترمیم]

  1. طبقات ابن سعد :43
  2. کتاب:مکمل اسلامی انسائیکلوپیڈیا،مصنف:مرحوم سید قاسم محمود،ص-568