ابو ثعلبہ الخشنی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ابو ثعلبہ الخشنی
معلومات شخصیت
تاریخ وفات سنہ 694  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ محدث  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
لڑائیاں اور جنگیں بیعت الرضوان،  غزوہ حنین  ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

نام و نسب[ترمیم]

ابوثعلبہ خُشنی اصحابِ صفہ میں ان کا شمار ہوتاہے ۔ [1]۔ ابوثعلبہ کے نام اور ان کے والد کے نام کے سلسلے میں بہت اختلاف ہے ۔ امام احمدبن حنبل، یحیٰ بن معین، ابن سعداور ابن حبان کاکہنا ہے کہ ان کا نام ’’جُرہُم بن ناشم‘‘ ہے ۔[2]

قبول اسلام[ترمیم]

ابن سعد کی روایت ہے جس وقت رسول کریم غزوۂ خیبر کی تیاری فرما رہے تھے ، یہ خدمتِ نبوی میں حاضر ہوکر مشرف بہ اسلام ہوئے اور رسول اللہ کے ساتھ غزوۂ خیبر میں شریک رہے۔پھرسات افرادپرمشتملوفدخُشین رسول اللہ کی خدمت میں حاضر ہوا اوریہ سارے لوگ ابوثعلبۃ ہی کے پاس قیام کیے ۔[3] ابنِ کلبی کی روایت ہے کہ ابو ثعلبہ بیعتِ رضوان میں شریک رہے اورپیغمبراسلام نے غزوۂ خیبرکے موقع سے انہیں مالِ غنیمت میں شریک فرمایا اور ابوثعلبہ کوان ہی کی قوم’’خشین‘‘ کے پاس داعئ اسلام اور مبلغِ اسلام بناکربھیجا، جس کے نتیجہ میں پوری قوم شرفِ اسلام سے بہرہ ورہوگئی۔ ابوثعلبہ بہت زیادہ عبادت گذارتھے ، ان کا معمول تھاکہ روز انہ رات میں گھر سے باہر نکلتے اور کافی دیر تک اللہ تعالیٰ کی خلقت: آسمان، تارے وغیرہ میں غور و فکر کرتے ، پھر واپس لوٹ کر اللہ تعالیٰ کے حضور سجدہ میں گرجاتے ۔ ان کا انتقال بھی سجدہ ہی کی حالت میں ہوا۔[4]۔

غزوات[ترمیم]

غزوات کی شرکت کے متعلق کوئی تصریح نہیں ملتی، خیبر کے مالِ غنیمت میں سے آنحضرتﷺ نے ایک حصہ مرحمت فرمایا تھا ، اس سے قیاس ہوتا ہے کہ شاید اس غزوہ میں شریک ہوئے ہوں گے۔

اشاعت اسلام[ترمیم]

البتہ دوسری خدماتِ جلیلہ پر مامور ہوتے رہتے تھے؛چنانچہ آنحضرتﷺ نے انہیں ان کے قبیلہ میں مبلغ بناکر بھیجا تھا اوران کی کوششوں سے ان کا قبیلہ آنحضرتﷺ کی حیات ہی میں مشرف باسلام ہو گیا۔ [5]

نبی اکرم سے ملکِ شام میں زمین کا مطالبہ[ترمیم]

ابوثعلبہ کا بیان ہے کہ میں نبی اکرم کی خدمتِ اقدس میں حاضر ہوا اور عرض کیا: اے اللہ کے رسول : آپ ملکِ شام میں میرے نام اتنی زمین الاٹ کردیجیے ۔ رسول اللہ نے اس وقت الاٹ نہیں کیا اور صحابۂ کرام کی جانب متوجہ ہوکر فرمایا: کیاتم لوگ اس کی بات نہیں سن رہے ہو؟ میں نے عرض کیا: اس ذات پاک کی قسم جس کے قبضۂ قدرت میں میری جان ہے میں ضرور اس زمین کو حاصل کرکے رہوں گا۔ تونبی اقدس نے اس مطلوبہ زمین کو میرے نام الاٹ کر دیا۔[6]انہوں نے شام میں سکونت اختیار کرلی اور وہیں ان کی ذریت نے نشو و نما پائی ۔

وفات[ترمیم]

ابوثعلبہ اپنی وفات سے پہلے اپنے شاگرد وں اور متوسلین سے کہا کرتے تھے کہ مجھے اللہ تعالیٰ کی ذات سے یہ امید ہے کہ میری موت تم لوگوں کی طرح نہیں ہوگی بلکہ عام لوگوں کی موت سے الگ تھلگ میری موت ہوگی اور ایسا ہی ہوا۔تہجدکی نماز پڑھ رہے تھے ، سجدہ کی حالت میں روح قبض ہو گئی ۔امیر معاویہ کے دور میں وفات پائی۔ لیکن کہا گیا ہے کہ 75ھ شام میں وفات پائی[7]

فضل وکمال[ترمیم]

فضل وکمال کے اعتبار سے کوئی امتیازی پایہ نہ تھا،تاہم ان سے چالیس حدیثیں مروی ہیں، انمیں سے تین متفق علیہ ہیں اورایک میں امام مسلم منفرد ہیں،جبیر بن نفیر، ابن مسیب اورمکحول نے ان سے روایتیں کی ہیں۔ [8]

فضائل اخلاق[ترمیم]

یوں تو ابو ثعلبہ کی ذات تمام فضائل صحابیت کی جامع تھی،لیکن حق گوئی اور راست گفتاری ان کا خاص وصف تھا، سچ بات کے علاوہ کبھی جھوٹ سے زبان آلودہ نہ ہوئی،ان کے معاصرین کہتے ہیں کہ ہم نے ابی ثعلبہ سے زیادہ سچی بات کہنے والا نہیں دیکھا،کائنات عالم پر نظر ڈال کر قدرتِ خداوندی پر غور و فکر کیا کرتے تھے،رات کے سناٹے اورتاریکی میں باہر نکل کے آسمان پر نظر ڈالتے ،اور قدرتِ خدا وندی پر غور کرتے کرتے سجدہ میں گرجاتے۔ [9]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. حلیۃ الأولیاء: 2/29۔ امام ابو نعیم اصبہانی
  2. طبقات ابنِ سعد : 7/416،الإ صابۃ : 4/30۔
  3. طبقات ابنِ سعد : 7/416،الإ صابۃ : 4/30۔
  4. الإصابۃ : 4/30
  5. (استیعاب:2/669،واسد الغابہ:5/55)
  6. مسند أحمد: 4/193-
  7. طبقات ابن سعد : 7/416۔
  8. (تہذیب الکمال:446)
  9. (اصابہ:7/29)