عبد اللہ بن عفیف

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبد اللہ بن عفیف
معلومات شخصیت
وجہ وفات قتل
مدفن كوفہ
مؤثر علی بن ابو طالب
عسکری خدمات
وفاداری خلافت راشدہ

عبداللہ بن عفیف الازدی، اور وہ عبداللہ بن عفیف الغامدی الازدی ہیں، غامد سے، جو علی بن ابی طالب کے اصحاب میں سے تھے، اور ان کی بائیں آنکھ جنگ جمل میں اور دائیں آنکھ صفین میں شہید ہوئی۔جب وہ علی بن ابی طالب کی صفوں میں لڑ رہے تھے۔[1][2] یہ روایات اہل سنت والجماعت کے نزدیک معتبر نہیں ہیں کیونکہ یہ ہشام کلبی اور المہلوف سے منقول ہیں۔کلبی تو علما جرح و تعدیل کے نزدیک کذاب اور روایتیں گھڑنے والا شخص تھا جبکہ المہلوف کے مصنف ایک شیعہ ہیں۔

شہادت[ترمیم]

شیعوں کے پہلے امام
حضرت علی علیہ السلام

فائل:حرم امام علی1.jpg


حیات
واقعۂ غدیرلیلۃ المبیتیوم الدارمختصر زندگی نامہ


علمی ورثہ
نہج البلاغہغرر الحکم و درر الکلمخطبۂ شقشقیہبے الف خطبہبے نقط خطبہحرم


فضائل
فضائل اہل‌بیت، آیت ولایت • آیت اہل‌الذکر • آیت شراء • آیت اولی‌الامر • آیت تطہیر • آیت مباہلہ • آیت مودت • آیت صادقین-حدیث مدینۃالعلم • حدیث رایت • حدیث سفینہ • حدیث کساء • خطبہ غدیر • حدیث منزلت • حدیث یوم‌الدار • حدیث ولایتسدالابوابحدیث وصایتبت شکنی


اصحاب
عمار بن یاسرمالک اشترابوذر غفاریعبیداللہ بن ابی رافعحجر بن عدیدیگر افراد

واقعہ کربلا میں امام حسین کے قتل کے بعد امیر کوفہ عبید اللہ بن زیاد نےمسجد کوفہ میں لوگوں کو جمع کیا اور منبر پر چڑھ کر کہا: "الحمد للہ! اس خدا کا شکر ہے جس نے حق اور اس کے اہل لوگوں کو ظاہر کیا، امیر المومنین (یزید) اور اس کی جماعت کی مدد کی، اور جھوٹے باپ کے جھوٹے بیٹےحسین بن علی اور اس کے پیروکاروں کو قتل کر دیا۔

عبداللہ بن عفیف جو نابینا تھے لوگوں میں سے اٹھے اور چلا کر کہا: اے ابن زیاد، تو اور تیرا باپ اور تیرا ولی اور اس کا باپ، جھوٹا اور جھوٹے کا بیٹا ہے، اے دشمن خدا، کیا تو انبیاء کے بیٹوں کو قتل کرتا ہے اور پھر مومنین کے منبروں پر ایسی باتیں کرتا ہے؟

ابن زیاد کو غصہ آیا یہاں تک کہ اس کی گردن کی رگیں پھول گئیں اور جو لوگ مسجد میں تھے وہ سپاہیوں سے لڑنے اور عبداللہ بن عفیف کی گرفتاری کو روکنے کے لیے اٹھ کھڑے ہوئے، چنانچہ عبداللہ بن عفیف اپنے گھر کی طرف بھاگا، لیکن وہ مزید بچ نہ سکا، چنانچہ ابن زیاد کے سپاہیوں نے پیچھا کر کے اس کے گھر سے اسے گرفتار کر لیا اور اس کی بیٹی اور اس کے شوہر کو شہید کر دیا۔ اور عبد اللہ کو ابن زیاد کے پاس لے آئے جس کے حکم سے ان کا سر قلم کر کے مصلوب کر دیا گیا۔[3][4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. هشام بن الكلبي. نسب معد واليمن الكبير. https://archive.org/details/1_20200220_20200220_1833/%D9%86%D8%B3%D8%A8%20%D9%85%D8%B9%D8%AF%20%D9%88%D8%A7%D9%84%D9%8A%D9%85%D9%86%20%D8%A7%D9%84%D9%83%D8%A8%D9%8A%D8%B1%202/page/n50/mode/1up.  روابط خارجية في |عمل= (معاونت)
  2. خالد بن علي المرضي. قبيلة غامد انسابها و تاريخها. 
  3. اللہوف علی قتلی الطفوف/ابن طاووس/71-73
  4. الارشاد/شیخ مفید/جزء دوم/116-117