بریر بن خضیر ہمدانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
بریر بن خضیر ہمدانی
 

معلومات شخصیت
تاریخ وفات 10 اکتوبر 680ء  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
لڑائیاں اور جنگیں سانحۂ کربلا  ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

بریر بن خضیر ہمدانی شہدائے کربلا میں سے تھے۔ جنھوں نے واقعہ کربلا میں امام حسین علیہ السلام کی فوج میں شمولیت اختیار کی۔ بریر ابن خضیر الحمدانی (عربی: بُرَيْر بن خُضَيْر ٱلْهَمْدَانِيّ) بنو ہمدان کی شاخ بنی مشرق سے تعلق رکھتے تھے جو اصل میں یمن سے تھے۔ [1][2]وہ قاری تھے اور مسجد کوفہ میں قرآن پڑھاتے تھے۔ وہ تابعین میں سے بھی تھے اور علی علیہ السلام کے ساتھی بھی۔ جب بریر نے حسین بن علی کی مدینہ سے کربلا کی طرف ہجرت کی خبر سنی تو وہ حسین علیہ السلام کی فوج میں شامل ہونے کے لیے کوفہ سے چلا گیا۔[3][4]

عمر بن سعد پر اعتراض[ترمیم]

امام حسین علیہ السلام کے بعض ساتھیوں نے کربلا کی جنگ میں حسین ابن علی کو پانی کی رسائی سے انکار کرنے پر عمر بن سعد کی مذمت کی جن میں بریر بن خدیر بھی تھے۔ جو ابن سعد کے پاس گئے اور پکارا کہ کیا وہ "خاندان نبوت کو "پیاسہ" مرنے کے لیے چھوڑ دیں گے۔ جبکہ اس نے دعویٰ کیا ہے کہ وہ خدا اور اس کے رسول کو جانتا ہے۔[5][6]

شہادت[ترمیم]

بریر نے ابن سعد کے کیمپ پر حملہ کرنا شروع کر دیا اور انھیں "رسول اللہ کی بیٹی کے بیٹے کا قاتل" کہا۔رازی بن منقد آبادی نے اس پر حملہ کیا اور وہ کچھ دیر تک لڑتے رہے۔ تاہم بریر نے اسے زیر کیا اور اس کے سینے پر بیٹھ گیا۔ جب وہ اس میں مصروف تھے تو کعب بن جبیر ازدی نے بریر کی پشت پر نیزے سے وار کر کے اسے شہید کر دیا۔ یہ روایت ہے کہ اس کے قاتل کی مذمت اس کی بیوی اور اس کے کزن عبید اللہ ابن جبیر سمیت لوگوں نے کی تھی۔ قاتل خود بھی شرمندہ ہوا اور اس نے کچھ اشعار لکھے جن میں اس کے غم اور ندامت کو بیان کیا گیا تھا۔[7] ,[8][9] [9] .[9]


مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Janabe Burair Ibne Khuzair Hamadani – The Reciter of Quran"۔ www.almuntazar.com/۔ 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 اکتوبر 2015 
  2. Ibn al-Athir al-Jazari۔ Usd al-ghābah fi ma'rifat al-ṣaḥābah: "The Lions of the Forest and the knowledge about the Companions" 
  3. Ahlul Bayt Digital Islamic Library Project Team۔ A Shi'ite Encyclopedia 
  4. al-Qarashi 2007, pp. 720–721
  5. Al-Baladhuri, Futuh al-Buldan, Vo. 5. pp.171-172
  6. al-Qarashi 2007, pp. 681–682
  7. Al-Baladhuri, Ansaab al-Ashraaf, 3/399
  8. Ibne Athir, Tarikh, 4/66-67
  9. ^ ا ب پ al-Qarashi 2007, p. 722