عبد اللہ بن مسلم بن عقیل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبد اللہ بن مسلم بن عقیل
معلومات شخصیت
وفات 10 اکتوبر 680  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
کربلا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
والد مسلم بن عقیل  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں والد (P22) ویکی ڈیٹا پر
والدہ رقیہ بنت علی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں والدہ (P25) ویکی ڈیٹا پر
عسکری خدمات
لڑائیاں اور جنگیں سانحۂ کربلا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں لڑائی (P607) ویکی ڈیٹا پر

عبد اللہ بن مسلم بن عقیل کربلا میں شہید ہونے والوں میں سے ایک تھے۔ ان کے والد مسلم ابن عقیل علی بن ابی طالب کے بھائی عقیل ابن ابوطالب کے بیٹے تھے یعنی حسین ابن علی کے چچا زاد بھائی تھے۔

کربلا کی جنگ میں شہید ہونے والوں میں سے ایک عبد اللہ بن مسلم بن عقیل اے ، ایک تیر ان کے ماتھے پر لگا جس سے ان کا ہاتھ ماتھے سے پیوست ہو گیا۔ کہا جاتا ہے کہ جب انہیں شہید کیا گیا تو ان کی عمر چودہ سال تھی۔ کہا جاتا ہے کہ وہ عاشورہ کے دن نبی اکرم (ص) کے اہل خانہ سے شہید ہونے والے پہلے شخص تھے [1]

نسب[ترمیم]

ناں نسب: عبد الله بن مسلم بن عقيل بن أبو طالب بن عبد المطلب بن هاشم.

والدہ: رقية بنت علي بن أبي طالب، و

أمها الصهباء: أم حبيب بنت عباد بن ربيعة بن يحيى العبد بن علقمة التغلبية. جو کہا جاتا ہے: علي بن أبي طالب نے اليمامہ کی فتح یا عين التمر کی فتح کے وقت خریدی تھی.[2] کہا جاتا ہے کہ يوم عاشوراء سنة 61ھ وقت شہادت آپ کی عمر 26 سال تھی،[3]

ان کے والد مسلم بن عقیل کی عمر کی بنیاد پر ، جن کی عمر وقت شہادت 28 سال بتائی جاتی ہے ، یہ بیان درست نہیں لگتا .[4] اس مضمون کی نظرثانی میں ذکر کیا گیا تھا کہ عمر عبد اللہ بن مسلم 14 سال کی عمر میں شہید ہوئے اور اس کا امکان نہیں ہے۔

ایسے مورخین ہیں جنہوں نے مسلم بن عقیل کے بیٹوں اور بیٹیوں کے بارے میں بات کی ، تاہم ان کی زندگی اور اس کی عمر اور شہادت کے بارے میں بہت سارے اختلافات پائے جاتے ہیں[5]

كربلاء میں[ترمیم]

ابن أعثم الكوفي ،نیز الخوارزمی نے دیکھا کہ دشمنوں سے لڑنے کے لیے الطالبيين (آل ابو طالب) سے سب سے پہلے نکلنے والا عبداللّہ بن مسلم تھا۔[6]

ابن شهر آشوب نے لکھا ہے: «عبدللہ بن مسلم نے تین حملوں میں اٹھانوے دشمن کے سپاہیوں کو قتل کیا اور پھر عمرو بن صبیح الصيداوي اور اسد بن مالک نے آپکو شہید کیا۔»۔[6]

البلاذري کہتا ہے: «عمرو بن صبيح الصيداوي نے عبداللّہ بن مسلم بن عقیل تیر مار کر کو گھوڑے سے نیچے گرایا اور لوگوں کو آپ کے قتل کے لیے کہا اور کہا کہ میں نے آل الحسين کے ایک بچے کو تیر مار کر گرایا اور تیر ماتھے پر لگا اور اس تیر سے اس کا ہاتھ اس کے ماتھے کے ساتھ پیوت ہو گیا»۔[7]

السماوي کہتا ہے: آپ عليّ بن الحسين کے بعد شہید ہوئے، ایسا ہی أبو مخنف اور المدايني کہتا ہے اور أبوالفرج اس کے برعکس کہتا ہے»۔[7]

طبری اپنی تاریخ میں حميد بن مسلم الأزدي سے نقل کرتا ہے، ایسے ہی شیخ مفیدد الإرشاد میں لکھتے ہیں:

"رمى عمرو عبد اللہ بسهم وهو مقبل عليہ، فأراد جبهتہ فوضع عبد اللہ يدہ على جبهتہ يتقى بها السهم فسمر السهم يدہ على جبهتہ فأراد تحريكها فلم يستطع ثم انتحى لہ بسهم آخر ففلق قلبہ فوقع صريعاً"

عمرو نے عبد اللہ پر تیر چلایا جو اس کی پیشانی پر لگا تیر سے بچنے کے لیے اس نے ہاتھ پیشانی پر رکھا تو تیر کیل کی طرح ہاتھ سے ہوتا ہوا پیشانی میں پیوست ہو گیا اس کے دوسرا تیر آپ کو لگا اور آپ گر گئے ۔[8]

رجز[ترمیم]

شیخ صدوق, امام زین العابدین کے حوالے سے نقل کرتے ہیں کہ عبد اللہ بن مسلم هلال بن الحجاج کے بعد ميدان میں آئے اور یہ رجز پڑھا:

أقسمت لا أقتل الا حراً و قد وجدت الموت شيئاً مراً
أكرہ ىن ادعي جبانا فرا ان الجبان من عصي و فرا

[9]

کہا گیا کہ جب عبد اللہ بن مسلم میدان میں آئے تو یہ پڑھ رہے تھے:

الْيوم الْقي مُسْلِماً وَ هُوَ ابي وَ فِتْيةٌ بادوا عَلي دِينِ النَّبِي
لَيسَ كقَوْمٍ عُرِفُوا بالْكذِبِ لكنْ خِيارٌ وَ كرامُ النْسَبِ
من هاشم السادات أهل الحسبِ

[10]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. عبد اللہ بن مسلم بن عقيل موسوعة عاشوراء
  2. السماوي، إبصار العين في أنصار الحسين (ع)، ص...
  3. محمدي الري شهري، موسوعة الإمام الحسين (ع)، ص160 -161.
  4. شهيدي، بعد خمسين سنة دراسة حول قيام الإمام الحسين (ع)، ص122.
  5. أبو الفرج الأصفهاني، مقاتل الطالبيين، ص52.
  6. ^ ا ب مع الركب الحسيني، ج4، ص 367.
  7. ^ ا ب مع الركب الحسيني، ج4، ص 368.
  8. إبصار العين للسماوي نقلاً عن تاريخ الطبري، ج4، ص341؛ المفيد، الإرشاد، جلد2، ص107.
  9. محمدي الري شهري، موسوعة الإمام الحسين (ع) ص162 – 163، نقلاً عن الصدوق، الأمالي، ص225؛ روضة الواعظين، ص207.
  10. مع الركب الحسيني نقلاً عن الخوارزمي، ص367.